خانه / تآلیفات / کتاب / اخلاق / گوشۂ معرفت

گوشۂ معرفت

گوشۂ معرفت

 

 

وہی ہے صاحب  امروز جس نے اپنی ہمّت سے

زمانے کے سمندر سے نکالا گوہر فردا

(اقبال)

 

مؤلف

حجه الاسلام آقای سید ناصرحسین میبدی

مترجم

شیخ محمد حسین بہشتی

 

 

 

مشخصات کتاب

نام کتاب…………………………………  گوشۂ معرفت

مؤلف………………………… حجه الاسلام سید ناصرحسین میبدی

مترجم……………………………………….شیخ محمد حسین بہشتی

کمپوزینگ………………………………….سید سجاد اطہرکاظمی

ناشر……………………………………………………….

طبع ……………………………………………………..اوّل

تعداد……………………………………………………….

جملہ حقوق بحق ناشر محفوظ ہیں

 

فہرست مضامین

 

 

گفتار مترجم………………………………………………………………………………………٧

مقدمہ…………………………………………………………………………………………….١٠

پہلی فصل

١-١:تذکرہ نویسی کی اہمیت اور عظیم شخصیات کاذکر……………………………………………………١٢

٢ -١:تذکرہ وتذکر کے معنیٰ…………………………………………………………………………١۴

٣-١:علم کی فضیلت اور عالم باعمل کا مقام ومرتبہ……………………………………………………١۶

١-٣-١:علم اور عالم کے لغوی اور اصطلاحی معانی ……………………………………………….١۶

٢-٣-١:علم اور عالم کا مقام قرآن کی نظر میں………………………………………………….١٨

٣-٣-١:معصومین علیہم السلام کے بیان میں علم

اور عالم کا مقام………………………………………………………………..٢٠

دوسری فصل

١-٢:غیبت کبریٰ کے آغاز سے لیکر حیات سید ابوالحسن اصفہانی  تک کے

بزرگ شیعہ فقہائ……………………………………………………………….٢۴

تیسری فصل

١-٣:حیات مقدس حضرت آیه اللہ العظمیٰ سیّد ابوالحسن اصفہانی رحمه اللہ علیہ………………………………………………………….۴۴

١-١-٣:سید قدس سرہ کے نام اور لقب………………………………………………………۴۴

٢-١-٣:معظم لہ کی تاریخ ولادت………………………………………………………….۴۶

٣-١-٣:سید موصوف کے والد گرامی اور جدّاعلی کاتذکرہ……………………………………..۴۶

۴-١-٣:علم ومعرفت کی طرف پہلا قدم……………………………………………………۴۶

۵-١-٣:حوزۂ علمیہ اصفہان میں داخلہ……………………………………………………..۴٧

۶-١-٣:حوزہ علمیہ میں آپ کے اساتید……………………………………………………۴٧

٢-٣:آپ کی حکایت، ہجرت،مقام وریاست کے بارے میں

١-٢-٣:سید قدس سرہ کو امام عصر ارواحنافداہ کی پہلی عنایت………………………………………۵٠

٢-٢-٣:سید قدس سرہ کی حوزۂ علمیہ نجف اشرف کی طرف ہجرت …………………………………۵١

٣-٢-٣:مقامات مقدسہ میں آپ  کے اساتید………………………………………………۵١

۴-٢-٣:سید قدس سرہ کا علمی مقام و مرتبہ…………………………………………………….۵٣

۵-٢-٣:سید قدس سرہ کی تکمیل مرجعیت اور حوزۂ علمیہ نجف اشرف

کی ریاست…………………………………………………………………۵٣

۶-٢-٣:نجف اشرف میں آپ کا درسی سلسلہ……………………………………………….۵۴

٣-٣:آپ کے شاگردوں اور آثار کے بارے میں

١-٣-٣:آپ کے شاگردوں کا ذکر………………………………………………………..۵۶

٢-٣-٣:آپ کے چند برجستہ شاگردوں کا تذکرہ…………………………………………..۶۶

٣-٣-٣:سید قدس سرہ کی تصانیف اور آثار……………………………………………….۶٧

۴-٣-٣:آپ کی کتاب ” وسیله النجاه” پر شرح لکھنے والوں کی فہرست…………………………۶٨

۴-٣:  سید قدس سرہ  پرائمہ ھدیٰ صلواه اللہ علیہم اجمعین کی عنایات   ………………………٧۴

١-۴-٣:معظم لہ پر امیر المؤمنین علیہ السلام کا لطف وکرم………………………………………٧۴

٢-۴-٣:سید قدس سرہ کا امام زمان علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہونا………………………..٧۶

٣-۴-٣:ذمہ داری اور توفیق دیدار………………………………………………………٧٨

۴-۴-٣:امام زمانہ علیہ السلام سے سیّد کا قریبی تعلق…………………………………………٧٩

۵-۴-٣:افسر بلشویکی اور آیه اللہ اصفہانی کی حکایت…………………………………………٨١

۶-۴-٣:سید قدس سرہ کا بلا واسطہ ائمہ طاہرین علیہم السلام سے رابطہ……………………………٨۴

٧-۴-٣:حضرت امام زمان ارواحنافداہ کی سفارش…………………………………………٨۴

٨-۴-٣:سچّے خواب……………………………………………………………………٨۵

٩-۴-٣:سیّد قدس سرہ کی طرف حوالہ کرنا………………………………………………….٨٧

١٠-۴-٣:نجف کے دروازے کی چابی……………………………………………………٨٧

۵-٣:  سید قدس سرہ کی سیاست سے دوری………………………………………………………….٨٩

١-۵-٣:حکومتی اقدامات…………………………………………………………………٨٩

٢-۵-٣:شاہ کے حضور میں………………………………………………………………٨٩

٣-۵-٣:دربار میں ملاقات……………………………………………………………..٨٩

۴-۵-٣:حکومتی اقدامات………………………………………………………………..٩٠

۵-۵-٣:تاجروں کے اقدامات…………………………………………………………..٩٠

۶-۵-٣:شہری انتظامات سے متعلق احکامات………………………………………………..٩٠

٧-۵-٣:علماء کرام کا کرمانشاہان میں داخل ہونا……………………………………………..٩٠

٨-۵-٣:مرحوم خالصی کی جلاوطنی پر ایران سے توفقنامہ……………………………………….٩١

٩-۵-٣:علماء کرام کی حمایت میں عمومی مظاہرے……………………………………………..٩١

١٠-۵-٣:سیّد قدس سرہ کی آیه اللہ کاشانی کی حمایت…………………………………………..٩٢

١١-۵-٣:اصفہان کے علماء کی ہجرت اور سیّد قدس سرہ کا اقدام………………………………….٩۴

١٢-۵-٣:پہلوی ظلم واستبداد……………………………………………………………..٩۵

١٣-۵-٣:مسئلہ کشف حجاب ، آیه اللہ العظمیٰ قمی کاقیام

اور سید ابوالحسن کی حمایت……………………………………………………….٩۵

چوتھی فصل

١-۴:غروب آفتاب فقاہت……………………………………………………………………..٩٨

٢-۴:سید قدس سرہ کے باقیات و صالحات……………………………………………………..١٠١

پانچویں فصل

شیعوں کی رہبریت اور مرجعیت، سید کی وفات کے بعد سے

مؤلف کے زمانہ تک……………………………………………………………………………١٠٣

 

 

 

 

 

گفتار مترجم

 

 

یہ خوش قسمتی کی بات ہے جسمیں خداکے لطف وکرم کی بیّن دلیل موجود ہے کہ انسان کسی بھی نیک کام کی انجام دہی کے لئے کسی بھی طریقے سے منتخب ہوجائے اس میں یقیناً قدرت کااشارہ ہوتا ہے ۔ اگرہر مسلمان اور مؤمن قدرت کے ایسے اشاروں پر یقین رکھتا ہو تو یہ عقیدہ کہلاتا ہے ، جب کوئی مسلمان کسی بھی کار خیر کی توفیق میں خداوند منّان کاشکر ادا کرے اور اس عنایت اور لطف کو اسی کا مرہون منّت قراردے تو یہ بعید نہیں کہ انسان کے اندر تغیّر وتبدّل واقع ہو اور وہ اپنے کام میں مزید بلندی کی طرف رواں دواں ہوجائے اس طرح وہ مسلمان اور مؤمن ایک راسخ العقیدہ انسان کہلانے کامستحق ہوجاتاہے اوریہی ہرمسلمان کی آرزو اور تمنّا ہوتی ہے۔ یہ بات کبھی فراموش نہیں کرنا چاہئے کہ ہر  بشر کی مادی اور معنوی ترقی کا انحصار اسکے عقیدہ اور فکروہمّت پر ہوتا ہے جب ہم تاریخ بشریت میں ایسی شخصیات کی زندگی کامطالعہ کرتے ہیں جو اپنے زمانے میں ترقی کے عروج پر فائز تھے خواہ  وہ مادی لحاظ سے ہو یا معنوی اعتبار سے ، انہیں یہ ترقی اس وجہ سے حاصل ہوئی کیونکہ انہیں اپنی عقل اور فکر کو صحیح استعمال کرنے کا موقعہ نصیب ہوا ہے۔ہر انسان اپنی فکری رشداور طاقت وتوانائی یا بہ الفاظ دیگروہ اپنی قابلیت اور صلاحیت کے مطابق ترقی کرتاہے جس کو جتنی طاقت اور صلاحیت ہو ، اسی اندازے کے مطابق خداوند کریم اسے بلندی عنایت کرتا ہے جب انسان اپنی طاقت اور توانائی کو سامنے رکھتے ہوئے خداوند ربّ العزّت کی قضاء وقدر پر راضی رہے تو

اسی کانام عین عبادت ہے چاہے وہ جس شکل وصورت میں بھی ہو ، ایسے میں میں خداوند ِ زمین وآسمان کا لاکھ لاکھ شکر گزار ہوں کہ جس نے مجھے اس کارخیر کی انجام دہی کے لئے منتخب کیا۔

میں جناب حجه الاسلام آقای سید ناصر حسین میبدی صاحب کا نہایت شکرگزار ہوں کہ جنہوں نے مجھے اپنی کتاب (سراج المعانی )کاخلاصہ اردوزبان میں ترجمہ کرنے کے لئے امر فرمایا تومیں نے ان کی آواز پر لبیک کہتے ہوئے اس کتابچہ کو مختصر وقت میں اردو زبان کاروپ دیا ہے۔

در واقع یہ کتاب مرحوم آیه اللہ عظمیٰ سید ابوالحسن اصفہانی  کی نورانی زندگی پر مختصر سی روداد ہے جسمیں مصنّف نے ابتدائے زندگی سے انتہائے زندگی تک پیش آنے والے اہم واقعات کو قلم بند کیا ہے یہ کتاب بہت نفیس ہے کیونکہ اس کے اندر مختلف واقعات کے ساتھ ساتھ تصویری جھلکیاں بھی موجود ہیں لہٰذا اس وجہ سے اس کتاب کو چار چاند لگ جاتا ہے ۔ خوش قسمتی سے ٨٧ سال شمسی کے آخر میں شہر اصفہان میں حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید ابوالحسن اصفہانی  کی شخصیت کے متعلق ایک بین الاقوامی سیمینار منعقد کیا جارہا ہے جسمیں مرحوم سید کے بارے میں دنیا کے مختلف ممالک سے آئے ہوئے علماء ، دانشور، محققین اور سکالر خطاب کریں گے اس ضمن میں بندہ ناچیز کو بھی دعوت دی گئی ہے اور اس مذکورہ کتاب کا اردو میں ترجمہ کرنے کے لئے امر فرمایا گیاہے ۔

میں نے اس فرصت کو غنیمت اور توفیق خداوندی سمجھتے ہوئے اس کتاب کاخلاصہ سیمینار کے لئے تیار کیا۔ اس حوالے سے میں ان تمام دوست احباب کاشکریہ اداکرتا ہوں جنہوں نے اس کارخیر میں میری  دامے، درمے ،سخنے مدد فرمائی خاص طور پر حجه الاسلام آقای سید ناصرحسین میبدی صاحب اور سیمینار کے مسئولین کاجنہوں نے مجھے اپنی محبتوں میں شامل فرمایا۔

” گر قبول افتد  زہے عزّ وشرف”

لطف عالی متعالی

محمد حسین بہشتی

١٨ ذی الحجہ  ١۴٢٩ ہجری قمری

(روز عید سعید غدیر)

حوزۂ علمیہ مشہد مقدس

 

 

 

 

 

 

 

مقدمہ

 

 

یہ بات اہل بصیرت پر پوشیدہ نہیں ہے کہ آفتاب مرجعیت اور تہذیب وشریعت کے محافظ و پاسبان حضرت آیه اللہ العظمیٰ حاج سید ابوالحسن اصفہانی ” رضوان اللہ علیہ وحشرہ اللہ مع النبیین والصالحین ”اپنے زمانے کی بے مثل ویکتا شخصیت تھی اور سیرت محمدی ۖوعلوی   کے باب میں اُس قبلۂ طلّاب اقالیم اہل بیت عصمت وطہارت صلوات اللہ علیہم اجمعین کی بے نظیر خدمات، راہیان راہ معرفت پر پوشیدہ نہیں ہیں۔حوزۂ مرتضوی کے بزرگان کی درخواست پر اپنی شمع وجود سے تقریباً پچاس (۵٠) سال تک طالب علموں کو روشنی بخشتے رہے ۔ ایسی شخصیت کے بارے میں ان مطالب کو جمع کیا گیا ہے اور اپنے پرور دگار سے لطف وکرم کی درخواست ہے کہ ہماری مدد کرے کہ یہ کتابچہ بارگاہ ملکوتی حضرت علی ابن موسیٰ الرضا علیہ آلاف التحیه والسلام میں شرف قبولیت سے مشرف ہو۔ یہ سب کچھ مولائے انس وجان اباصالح المہدی عجل اللہ فرجہ الشریف کی مدد سے ہوا ہے۔ اس قلیل سعی کو معظم لہ کی سیرۂ علمی و عملی کے حوالے سے اس حکم کی بناء پر کہ من ورخ مؤمناً فکانما احیاہ(سفینه البحار ج٢،ص۶۴١) ….و …ومن احیاھا فکأنما احیاا لناس جمیعاً( مائدہ آیه ٣۵) انجام پائی ہے۔پس یہ کتابچہ ان تمام طالبان علم وعمل اور سیرت طیبہ سے لو لگانے والے حضرات کیلئے لقد کان فی قصصہم عبره لاولی الالباب کے فرمان کے مطابق مشعل راہ اور محققین کے لئے رہنمائے ھدایت ثابت ہو ۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

تذکرہ نویسی کی اہمیت اور عظیم شخصیات کاذکر

 

علمی اور ادبی آثار میں جو چیز مسلسل ہر زمانے میں خاص وعام کی توجہ کا محور ومرکز رہی ہے وہ تذکرہ نویسی اور وقایع نگاری ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ علم رجال وتذکرہ نویسی علمی مدارس میں طلّاب علوم دینی کی توجہ کا مرکز رہی ہے اور حوزۂ علمیہ میں اس کا ایک خاص مقام رہا ہے۔  اس کی اہمیت سلسلۂ رُوات وسیرہ عملی اخلاق میں دوسرے علوم سے کم نہیں ہے کیونکہ فقیہ، مفسراور مدرّس حکمت واخلاق وغیرہ  صحیح حکم کے بیان کرنے ، احکام کے نقل کرنے اورمستندات کو مرسلات سے تمیز دینے کے لئے تذکرہ نویسی اور وقائع نگاری کی بہت ضرورت محسوس کرتے ہیں۔ مثال کے طور پر ایک مفتی کو فتویٰ دینے کے لئے ضروری ہے کہ رُوات احادیث واحکام کو اچھی طرح سے پہچان لیں اور یہی وجہ ہے کہ شیعوں کے بزرگ فقہاء اور دوسرے اسلامی فرقوں  کے علماء نے اپنی تالیفات اور تصانیف کو درایت حدیث کی کسوٹی پر پرکھاہے اور اسی اہمیت کی وجہ سے شیعہ اس کام میں دوسرے فرقوں سے تذکرہ نویسی وسیرت نگاری، جنگوں کے احوال اور غزوات کے مقامات وغیرہ نقل کرنے میں آگے ہیں ۔

علامہ سید حسن صدر قدّس سرّہ  نے اپنی کتاب مستطاب ”تاسیس الشیعہ لعلوم الاسلام” میں اس ضمن میں بیان فرمایا ہے کہ: سب سے پہلی شخصیت جس نے علم رجال کی بنیاد رکھی اور اس میں کتاب تصنیف فرمائی وہ ”ابو محمد عبداللہ بن جبلہ بن حیان بن الحر الکنانی”ہیں ۔ ان سے قبل اس علم میں میں نے کسی مصنّف کو نہیں پایا۔

سیرت اور آثار اسلامی کی بنیاد رکھنے والا عبیداللہ بن ابی رافع ہیں آپ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے خادم تھے ۔ اور آپ کی گران بہا کتاب کانام”تسمیه من شھر من الصحابه مع امیر المؤمنین علیہ السلام” ہے۔اس کے علاوہ آپ نے ایک اور کتاب لکھی جو خود مولا امیر المؤمنین  کے فیصلوں پر مشتمل تھی اور یہ کتاب  امیر المؤمنین کے دوران حیات میں لکھی گئی ۔

شیخ ابو جعفر طوسی اپنی کتاب  ” فہرست کتب شیعہ  ” میںلکھتے ہیں  ” عبیداللہ ابن ابی رافع امیرالمؤمنین علیہ السلام کا کاتب تھا ” ۔

علامہ صدر نے ”علم مغازی بنی ۖ” کی بحث میں ذکر کیا ہے کہ پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے غزوات اور آپکی سیرت کو جس نے ایک علم وضع کیا ہے وہ محمد بن اسحاق مطلبی تھے۔ کتاب   ”کشف الظنون” میں لکھاہے علم سیرت میں سب سے پہلامصنف، معروف شخصیت محمد بن اسحاق ہیں جنہوں نے  ۵١ ھجری میں وفات پائی ۔انہوں نے علم سیرت اور علم مغازی (غزوات حضورۖ) کو سب سے پہلے جمع کیا ہے۔

پس اسی وجہ سے علامہ سید حسن الصدر نے بجا فرمایا ہے :۔سیوطی نے” کتاب اوائل” میں جو علم رجال کے ضمن میں سیرہ اور مغازی کو عروہ بن زبیر کا نام لیا ہے غلط ہے کیونکہ شعبہ کی وفات  ٢۶٠  ھجری میں ہوئی ہے۔ جبکہ عبداللہ بن جبلہ   ٢١٩  ھجری میں وفات پائی ہے۔

اس طرح عروہ بن زبیر کی وفات ١٩۴ ھجری میں ہوئی ہے اور اسحاق کی وفات  ١۵١ ھجری میں ہوئی ہے علاوہ براین اسحاق کا اہل تشیع ہونا کوئی مشکوک امر نہیں ہے اور اس کا تذکرہ ابن حجرنے تقریب میں اور شہید اور علامہ نے بعض دوسری تالیفات میں کی ہیں۔  پس  یہ مختصر سی بات تھی جو    تذکرہ نویسی میں شیعوں کے مقدم ہونے کے حوالے سے قابل ذکر ہے۔

 

 

 

تذکرہ وتذکر کے معنیٰ

 

 

 

اہل درایت اور برجستہ افراد کی سیرت عملی کو اصولی طور پر طالبان علم ومعرفت کے لئے قلم بند کیا جاتاہے پس اصل مطلب کو بیان کرنے سے پہلے چند نکات تذکر اور تذکرہ کے بارے میں موردبحث وگفتگو قرار پاتے ہیں۔

لغت میں ” یاد دہانی کرنے یا یاد کرنے ” کا نام” تذکر” ہے یا بہ الفاظ دیگراس چیز کے بارے میں یاد آوری کرنا جو فراموش ہونے والی ہو یا فراموشی کے قریب ہو” تذکر” یا” تذکرہ” کہلاتے ہیں۔ اس بات پر سب تمام اہل لغت اتفاق نظر رکھتے ہیں۔ علّامہ دہخدا نے علّامہ خواجہ نصیر الدین طوسی کے قول کو نقل کیا ہے۔لیکن مترجمین کی اصطلاح میں تذکرہ وتذکر سے مراد،بزرگوں کی سیرت کو بیان کرنا اور گذشتہ علماء کے اخلاقیات کے مورد میں وعظ ونصیحت کو بیان کرنے کے ساتھ ساتھ بادشاہوں اور اہل سیرو سلوک کے آداب کو راہ حق کے طالب علموں پر واضح کرنا ہے ۔

خود شیخ اجل کے قول کے مطابق اچھے کام کرنے والے لوگ یا نیک سیرت آدمی ہمیشہ زندہ و جاوید ہیں انہیں کبھی بھلایا نہیں جا سکتا۔

فرانس کے مشہور و معروف ادیب کے بقول ملک ان کے ناموں کو زندہ رکھتا ہے اور تاریخ کے چند لوگوں کی تجلیل وتکریم کرتا ہے۔

لیکن پہلے بزرگان کی زندگی میں بہت باریکی اور لطافت پائی جاتی ہے۔ شیخ اشراق کے بقول:۔ جب انسان کسی چیز کو بھول جاتا ہے تو کبھی کبھی اس چیز کو یاد کرنا اس کے لئے مشکل ہوجاتا ہے اور   بہت زیادہ کوشش کرنے کے باوجود بھی یادنہیں کرپاتا ۔ واقعاً و حقیقتاً بزرگوں کی سیرت درس عبرت ہے۔       اس قول کے مطابق انیسویںصدی میں فرانس کے میشلت کہتے ہیں کہ: ” تذکرہ احیاء گذشتہ کانام ہے نہ کہ کسی اچھے اور برے کی بات ”  پس ہمیں کوشش کرنی چاہئے کہ ایک لحظہ کے لئے بھی بزرگوں کے اعمال و افعال اور نیک سیرت سے غافل نہ رہیں۔ تاریخ کے اچھے اچھے واقعات کو حفظ و ثبت کرنا چاہئے تاکہ آئندہ کے طالبان علوم کے لئے فائدہ مند ہوں۔

 

 

 

 

 

علم کی فضیلت اور عالم باعمل کامقام ومرتبہ

یہ مطلب تین مراحل میں بیان ہوگا۔

١: علم اور عالم کے لغوی اور اصطلاحی معانی

پس معلوم ہونا چاہئے کہ لغت میں علم جاننے کو کہتے ہیں اور یہ جاننااگر حالات وواقعات کے بارے میں ہو تو اسے معرفت کہتے ہیں ۔

اہل ادب کی اصطلاح میں ایسے مطالب کے حصول کو علم کہتے ہیں جو بشر کی فکری تربیّت کاسبب بنے ۔ ان مطالب کو اہل فن نے مرتّب اور منظّم طور پر اس طرح تقسیم کیا ہے:

١:بعض علماء نے علم کو علم توحید ، ایجاد واعدام ،قربت و دُوری اور امرونہی کے بارے میں احکام شریعت (سیروسلوک کے تین مسالک عوالم ربّانی،اُخروی اور دنیوی) میں تقسیم کیا ہے۔

٢: بعض نے علم کو علم طبیعی  ،  علم ریاضی  اور علم الٰہی پر تقسیم کیا ہے۔

٣: بعض نے علم کو  علم من اللہ  ،  علم مع اللہ  اور علم باللہ  میں تقسیم کیا ہے۔

۴: بعض نے علم کو  دنیوی اور اخروی  اغراض و مقاصد کے حوالے سے تقسیم کیا ہے۔

۵: بعض نے علم کو چوتھے قول کے تکمیل کے طور پردنیوی لحاظ سے اقوال ، افعال اور احوال میں تقسیم کیا ہے ۔علم دنیوی اقوال کے لحاظ سے پھر عام اور خاص میں تقسیم ہوتا ہے۔پھر عام نیز اصوات ، الفاظ مفردہ اور الفاظ مرکبہ میں تقسیم ہوتا ہے۔

۶: بعض نے پانچویں قول کی تکمیل کے طور پر علم کو افعال کی حیثیت سے ابدان کی صحت وسقم اور ملکات فاضلہ کے حصول سے متعلق امور میں تقسیم کیا ہے۔

٧: بعض نے پانچویں قول کی تکمیل کے طور پر احوال کے حوالے سے منطق ، ریاضیات، طبیعیات اور طبّی میں تقسیم کیا ہے۔

٨: بعض نے علم کو پہلی دوصورتوں سے جدا گانہ طور پر فعلی اور انفعالی دو قسموں میں تقسیم کیا ہے۔

٩: خواجہ ابوالقاسم  عبدالکریم نے بھی علم کی تعریف  کچھ اس طرح سے کی ہے  ” علم اسے کہتے ہیں جو تعلیم کے ذریعہ سے حاصل ہو۔یہ علم تعلیمی اور تحصیلی ہے اور دوسرا وہ علم ہے جو ذوقی ہے یعنی عمل کانتیجہ ہے یہ تقسیم اشراق انوار الٰہیہ کے مطابق ہے۔

علم کی اور بھی بہت سی قسمیں موجود ہیں ہم یہاں بحث کے طولانی ہونے کے خوف سے چھوڑ رہے ہیں۔

عالم کا لغوی معنیٰ

تمام اہل لغت کا اس بات پراتفاق ہے کہ لام پر کسرہ پڑھنے کی صورت میںعالم عقلمند یا دانشمند کو کہتے ہیں ۔ اور اصطلاح میںعالم سے مراد یہ ہے کہ مخصوص علم جو کسی نے حاصل کیا ہو اوراس علم پر مکمل کنٹرول اور  دسترس رکھتا ہواور اس سے فائدہ  بھی اٹھا یا جاسکے۔

پس ہم یہاںاس عالم کے حوالے سے بحث کر رہے ہیں جو اصول ، اعتقاد اور شریعت کے عملی اور نظری حوالے سے تین حصوں عبادات، معاملات ، اخلاقیات پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے بارے میں اپنی فکری کاوش کے نتائج کو سامنے لائے ہیں اور جنہوں نے آسمان فقاہت کی فضاء اجتہاد میں غوطہ زن ہوکر اپنی علمی تشنگی کوسیراب کیا ہے۔

یہ عالم بزرگوار جو چشمۂ مرتضوی سے سیراب ہوئے اور حضرت امام باقر وحضرت امام صادق علیہما السلام کے احکام ومعارف کے حصول کے ساتھ ڈیڑھ ہزار سالہ حوزہ تشیع کے علمی وعملی ثمرہ قرار پائے اور بہت سے طلاب علوم نے ان سے اپنی علمی پیاس بجھائی ۔

٢:علم اور عالم کا مقام قرآن کی نظر میں

جان لینا چاہئے کہ وہ آیات جو علم وعمل کے حاصل کرنے کے حوالے سے عالم متقی  کے بارے میں مرکز وحی یعنی پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر نازل ہوئی ہیںبہت زیادہ ہیں ہم یہاں اختصار کے طور پر چند آیات کا ذکر کریںگے۔

١: اقراء باسم ربّک الذی خلق خلق الانسان من علق اقرأ وربک الاکرم الذی علّم بالقلم(علق١تا۵) یہ آیت خداوند عالم کی طرفسے نعمت وجود اور خلق وایجاد کے بعد نعمت علم کو بیان کررہی ہے۔

٢: قل ھل یستوی الذین یعلمون والذین لایعلمون انما یتذکر اولوا الالباب(زمر٩) اس آیۂ مجیدہ میں صاحبان عقل کے لئے یاد ہانی ہے کہ علم وعالم جہل وجاہل پر عظمت وبرتری رکھتے ہیں۔

٣: یرفع اللہ الذین آمنوا منکم والذین اوتوا العلم درجات،(مجادلہ ١١) ۔

اس آیت میں علم کی رفعت و بلندی اورعظمت و احترام کو خداوند منّان نے بیان فرمایا ہے ۔ ضمناً صالح عالم اور صالح علم کی خصوصیات یہ ہیں کہ وہ اس عظیم مرتبہ پر فائز ہیں جو خدا کی راہ میں جان ومال اور عزّت وآبرو کے حوالے سے جہاد کرنے سے افضل و برتر ہے۔ لہٰذا دوسری آیت میں فرمایا : فضل اللہ المجاہدین باموالہم وانفسہم علی القاعدین درجه(نساء ٩۵)  اس آیت کی بنیاد پرعلم کے بہت سے درجات ہیں اور جہاد کرنے والے کاایک درجہ اور اجر ہے۔

۴: انّما یخشی اللہ من عبادہ العلمٰوء آ ان اللہ عزیز غفور(فاطر٢٨) یہ آیت اس موضوع کوبیان کرتی ہے کہ خدا کی عظمت اور معرفت کے سامنے جھکنے والے اور احترام تام رکھنے والے اہل علم ہیں جو اللہ کے عذاب سے ڈرتے ہیں اور اس کے فرمان اور حکم پر عمل کرتے ہیں۔

۵: فلمّا احسّ عیسیٰ منھم الکفر قال من انصاری الی اللہ قال الحواریون نحن انصار اللہ آمنا باللہ واشہد بانّا مسلمون(آل عمران ۵٢) یہ آیت العلماء ورثه الانبیاء ”یعنی علماء انبیاء کے وارث ہیں” کی مکمل تائید کر رہی ہے۔

۶: ولقد ارسلنا موسیٰ باٰیٰتنا ان اخرج قومک من الظلمٰت الی النور(ابراہیم٣) اس آیت کے بیان کے ضمن میں خداوند کریم مسلمانوں کو تنبیہ کرنے اور وعظ و نصیحت کرنے کو صالح وپرہیز گار علماء کے ساتھ مختص فرمارہا ہے ۔

٧: الذین یبلغون رسالات اللہ ویخشونہ ولایخشون احداً الا اللہ وکفیٰ باللہ حسیباً(احزاب٣٩) یہ آیت اس بات کو روشن کرتی ہے کہ صالح علماء اور خدا ترس افراد ہی تبلیغ دین کا حق رکھتے ہیں۔

٨: فاسئلوا اھل الذکر ان کنتم لا تعلمون(انبیائ٧) یہ آیت اس بات کو واضح کرتی ہے کہ اہل ذکر علماء صالح کی خدمت میں جاکر علم کی پیاس بجھانا چاہئے۔

٩: فلولا نفر من کل فرقه منہم طائفه لیتفقہوا فی الدین (توبہ ١٢٢) یہ آیت ہر مسلمان پراس واجب کفائی کو بتارہی ہے کہ وہ علم حاصل کریں اور دوسروں تک پہنچائیں ۔ چاہے وہ معاشرہ کے جس گروہ اور قبیلہ سے بھی تعلق رکھتا ہو اور جو علم حاصل کریں اس کی اطاعت اور قول دوسروں کیلئے حجت ہیں۔

١٠: اللہ الذی خلق سبع سمٰوات ومن الارض مثلھن یتنزل الامر بینھن لتعلمووا ان اللہ علی کل شیٔ قدیر(طلاق ١٢) علماء تفسیر نے اس آیت سے خلقت عالم اعلیٰ اور عالم سفلیٰ مراد لی ہیں۔

٣:معصومین علیہم السلام کے بیان میں علم اور عالم کا مقام

ایسی روایات جو علم وتحصیل علم کی فضیلت اور علماء کے اکرام کے بارے میں معصومین علیہم السلام سے نقل ہوئی ہیں، بہت زیادہ ہیں جنہیں ایک مستقل کتاب میں ہی لا ئی جاسکتی ہے۔ یہاں مختصر طور پر چند اقوال وفرامین ذکر کئے جاتے ہیں۔

١:جناب ثقه الاسلام محمدبن یعقوب کلینی  نے اپنی اسناد کے ساتھ حدیث نبوی نقل کی ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: طلب العلم فریضه علی کل مسلم الا ان اللہ یحب بغاه العلم (اصول کافی ج١ ص ٣٠) یعنی علم حاصل کرنا ہر مسلمان پر فرض ہے ۔ آگاہ رہو کہ خداوند متعال علم کے چاہنے والوں سے محبت رکھتا ہے۔

٢:قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم : من سلک طریقاً یطلب فیہ علماًسلک اللہ بہ طریقاً الی الجنّه وان الملٰئکه لتضع اجنحتہا لطلب العلم رضاً بہ وانہ یستغفر لطلب العلم من فی السماء ومن فی الارض حتّی الحوت فی البحر وفضل العالم علی العباد کفضل القمر علی سائر النجوم لیله البدر وان العلماء ورثه الانبیاء ان الانبیاء لم یورثوا دینارا ولا درھماً ولکن ورثوالعلم فمن اخذ منہ اخذ بحظّ وافر(اصول کافی ج١ ص٣۴) یعنی آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ فے فرمایا: جو شخص طلب علم کاراستہ چلتا ہے خداوند عالم اسے جنت کا راستہ چلاتا ہے، ملائکہ رضایت خدا کے حصول کے لئے طالب علم کے لئے اپنے پر کھول دیتے ہیں اور بے شک آسمانوں اور زمینوں کی مخلوقات طالب علم کے لئے طلب مغفرت کرتی ہیں یہاں تک کہ مچھلیاں دریاؤں میں طالب علم کے لئے بخشش طلب کرتی ہیں۔ لوگوں پر عالم کی فضیلت ایسی ہے جیسے چودھویں کا چاند تمام ستاروں پر افضلیت اور فوقیت رکھتا ہے۔ اور بے شک علماء انبیاء کے وارث ہیں۔

٣: شیخ مفید مولا امیر المومنین علیہ السلام کی روایت یوں نقل کرتے ہیںکہ : قال : قال المتعبد علی غیر فقہ کحمار الطاحونہ یدور، ولایبرح ورکعتان من العلم خیر من سبعین رکعه من جاھل لان العالم تأتیہ الفتنه فیخرج منہا بعلمہ وتأتی الجاھل فینسفہ نسفاً ، وقلیل العمل مع کثیر العلم خیر من کثیر العمل مع قلیل العلم والشک والشبھه(کتاب الاختصاص ص٢۴۵)اس حدیث میں ایسے عبادت کذار کی مذمت بیان ہوئی ہے جو علم فقہ کے حصول کے بغیر عبادت میں مشغول رہے فرماتے ہیں:ایسا شخص آٹا پیسنے والی چکی کے گدھے کی مانند ہے جو خود کوئی فائدہ نہیں اٹھا تا اور چکر لگاتا رہتا ہے ، عالم کی دورکعت نماز جاہل کی ستر رکعت نمازوں سے افضل ہے….زیادہ علم کے ساتھ تھوڑا ساعمل ، تھوڑے علم کے ساتھ زیادہ عمل سے بہتر ہے۔

۴:علامہ محمدباقر مجلسی حضرت امام محمد باقر علیہ السلام سے نقل کرتے ہیں کہ مولا نے فرمایا: الروح عماد الدین والعلم عماد الروح والبیان عمادالعلم(بحار ،چاپ جدید ج ١ ص١٨١)

یعنی روح دین کا ستون ہے ، علم روح کا ستون ہے اور بیان علم کا ستون ہے۔

۵:علامہ حرانی حلبی حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام سے روایت نقل کرتے ہیں کہ حضرت نے فرمایا:تفقہوا فی دین اللہ فان الفقہ مفتاح البصیره وتمام العباده والسبب الی المنازل الرفیعه والرتب الجلیله فی الدین والدنیا وفضل الفقیہ علی العابد کفضل الشمس علی الکواکب ومن لم یتفقہ فی دینہ لم یرض اللہ لہ عملاً(تحف العقول ۴١٠)۔ یعنی دین میں سوجھ بوجھ حاصل کرو کہ بے شک فقہ بصیرت کی چابی ، مکمل عبادت اور دین ودنیا دونوں میں اعلی مراتب اور بلند مقامات پر پہنچنے کا ذریعہ ہے ۔ فقیہ عابد پر اس طرح فضیلت رکھتا ہے جیسے سورج ستاروں سے افضل ہے اور جوشخص اپنے دین میں فقہ کا علم حاصل نہیں کرتا خداوند متعال اس کے عمل کو پسند نہیں فرماتا۔

۶: حدیث نبوی میں آیا ہے کہ: یاعلی نوم العالم افضل من عباده العابد

یعنی یا علی ! عالم کی نیند جاہل کی عبادت سے بہتر ہے،

یا علی رکعتین یصلیہا العالم افضل من الف رکعه یصلیہا العابد  یعنی یا علی! عالم کی پڑھی ہوئی دو رکعت نما ز عابد کی پڑھی ہوئی ہزار رکعت نمازوں سے بہتر ہے۔

یاعلی لافقر اشد من الجھل ولا عباده مثل التفکر یعنی  یا علی ! جہل سے بڑھ کر کوئی فقر نہیں اور تفکر کی مثل کوئی عبادت نہیں۔                                                               (غوالی اللئالی ج ۴ ص٧٣)

٧: فقیہ اھلبیت حرّ عاملی حضرت امیر المؤ منین علیہ السلام سے حدیث نبوی نقل کرتے ہیں کہ آنحضرت نے بارگاہ ربوبیت میں عرض کی:اللہم ارحم خلفائی  . ثلاثا . قیل یارسول اللہ ومن خلفائک؟ قال : الذین یأتون بعدی یروون حدیثی وسنّتی( وسائل الشیعہ ج ١٨ ص ١٠٠) یعنی خداوندا میرے خلفاء پر رحم فرما ( یہ جملہ تین بار تکرار فرمایا) پوچھا گیا: آپ کے خلفاء کون ہیں؟ تو آپ ۖ نے فرمایا: وہ ہیں جو میرے بعد آئیں گے اور میری احادیث و سنّت کی تبلیغ کریں گے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

غیبت کبری کے آغاز سے لیکر حیات سید ابوالحسن اصفہانی  تک کے شیعہ بزرگ فقہائ

 

واضح رہے کہ معارف جعفری کی وادی میں سیر کرنے والے خوش قسمت افراد ، جوکہ معارف حقہ سے بھی لطف اندوز ہونے والے ہیں اور کتاب وسنّت سے احکام الٰہی کے ثبوت میں قلم کو خون شہید سے افضل جاننے والے ہیں اور ناسوت کی پستیوں سے علم وعمل کے ملکوت کی بلندیوں تک راہ شعور کے راہی رہے ہیں، ان پر پوشیدہ نہیں ہے کہ امام زمان  کی غیبت صغریٰ جو کہ ٢۵۵ہجری یا ٢۶٠ہجری سے لیکر ٣٢٩ہجری قمری تقریباً ٧۴ یا۶٩سال تک رہی ۔ شیعہ اپنے مسائل پوچھنے کے لئے حکم خدا میں امام زمانہ  کے سفراء اور نوّاب اربعہ کی طرف رجوع کرتے تھے جونواب خاصہ امام زمان علیہ السلام کے بلند مرتبہ پر فائز تھے۔ اور عدالت کو کون ومکان میں پھیلانے والے امام کی سفارت کے عہدوں پر فائز تھے۔ اور امام زمانہ وشیعوں کے درمیان واسطہ تھے اور شیعہ حضرات کے مسائل کے جوابات اپنے امام زمانہ سے دریافت کرتے تھے۔ لیکن اس مختصر سی مدت میںجو وفات شیخ ابوالحسن سیمری تک تھی کے بعد امام زمانہ علیہ السلام کی غیبت کبریٰ کا آغاز ہوا اور شیعہ حضرات کو مجبوراً بعض احادیث کی راہنمائی کے مطابق فقہای امامیہ کی طرف رجوع کرنا پڑا ۔ خصوصاً احتجاج طبرسی میں منقول حدیث ” واما الحوادث الواقعه فارجعوا الی رواه احادیثنا….” جس میں حکم امام یہ تھا کہ غیبت کبریٰ کے زمانہ میں ، شیعہ فقہاء اور مجتہدین کی طرف رجوع کریں اور وہ لوگ بھی کہ اتنی بڑی ذمہ داری ان کے کندھوں پر تھی ہر ایک نے اپنی سیرت اور اپنے مسلک کے مطابق فتویٰ دینا شروع کیا اور وہ مسائل کہ جس میں اکثر لوگ گرفتار اور مبتلا تھے انکا حل تلاش کرنا شروع کیا۔

ہم یہاں اس فصل میں مختصراًان بعض مشہور شخصیتوں کانام بیان کریں گے کہ جو چوتھی صدی سے لیکر موصوف بزرگوار کے زمانہ تک پرمشتمل ہے کہ واقعاً وحقیقتاً شیعۂ اما میہ کے لئے بہت بڑا مایۂ افتخار ہے۔ شیعوں کی تاریخ میں کوئی بھی زمانہ ایسا نہیں گزرا جسمیں وہ رہنما وپیشوا سے محروم رہے ہوں۔    ہم تذکرہ کے طور پر حضرت امیرالمؤمنین علیہ السلام کے اسم گرامی کے اعداد کے مطابق(١١٠) ایک سو دس بزرگ علماء کا ذکر کریں گے۔

١: ثقه الاسلام ابوجعفر محمد بن یعقوب ابن اسحاق کلینی  رازی صاحب کتاب شریف کافی متوفیٰ ٣٢٩ ھ ق  بغداد میں مدفون ہیںآپ شیخ المشائخ اور رئیس المحدثین کے نام سے مشہور ہیں۔

٢: علامہ ابوالحسن علی بن حسین بن موسیٰ بن بابویہ قمی شہرت (صدوق اوّل) بہت سی کتابوں کے مصنف متوفیٰ ٣٢٩ ھ ق  قم میں مدفون ہیں  آپ محمد بن علی بابویہ کے والد ہیں جو شیخ صدوق کے نام سے مشہور ہیں۔

٣: ابواحمد عبدالعزیز بن یحییٰ بن احمد بن عیسیٰ جلودی بصری بزرگان شیعہ متوفیٰ ٣٣٢ یا ٣٠٢ نجاشی ١٩٩ ھ ق کے ترتیب سے کتابیں تحریر فرمائی ہیں۔

۴: ابو محمد حسن بن علی بن ابی عقیل آپ ابن ابی عقیل یا ابو محمد عمانی ۔

۵: ابوالقاسم جعفر بن محمد بن جعفر بن موسیٰ بن قولویہ قمی ابن قولویہ کے نام سے شہرت رکھتے ہیں متوفی ٣۶٨ ھجری قمری۔

۶: ابوعلی محمد بن احمد بن جنید بغدادی اسکافی بہت ساری کتابوں کے مالک متوفی ٣٨١ ھ ق۔

٧: علّامہ ابوجعفر محمد بن علی حسین بن موسی بن بابویہ قمی شہرت شیخ صدوق متوفی ٣٨١ ھ ق  صاحب من لا یحضرہ الفقیہ۔

٨: شیخ الاعظم محمد بن محمد بن نعمانی بن عبدالسلام بن جابر بن نعمان بن سعید کنیت ابو عبداللہ شہرت بہ شیخ مفید متوفی ۴١٣ ھجری قمری۔

٩ : شیخ الاجل علم الھدی ابوالقاسم علی بن حسین بن موسیٰ بن محمد بن موسیٰ بن ابراہیم بن موسیٰ بن جعفر علیہما السلام ۔ سید مرتضیٰ کے نام سے شہرت رکھتے ہیں متوفیٰ ۴٣۶ ھ ق  آپ نہج البلاغه کی جمع آوری کرنے والے علامہ سید رضی کے بھائی ہیں۔

١٠: شیخ تقی الدین نجم الدین بن عبیداللہ جلی آپ ابوالصلاح حلبی کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ کی وفات ۴۴٧ ھ ق میں ہوئی ۔

١١: مولانا ابوالفتح محمدبن علی بن عثمان سید مرتضیٰ کے شاگردوں میں سے ہیں متوفیٰ ۴۴٩ ھجری قمری ۔

١٢: ابوجعفر محمد بن حسن طوسی لقب ” شیخ الطائفہ ” عالم ، عامل ،فقیہ، اصولی ، متکلم، محدث، ثقه، مفسر قرآن، جامع المعقول والمنقول ، متوفیٰ ۴۶٠ ھ ق نجف اشرف ۔

١٣: قاضی سعدالدین بن ابوالقاسم شیخ عبدالعزیز بن براج شامی حلبی متوفی ۴٨١ ھ ق

١۴: شیخ ابو علی حمزہ بن عبدالعزیز دیلمی معروف بہ ” سلّار” متوفی ۴۴٨ ھ ق  یا  ۴۶٣ ھ ق

١۵: شیخ الاجل عمادالدین ابوجعفر مشہور ” ابو حمزہ” معروف عماد طوسی ۔

١۶: مولانا شیخ ابوعلی بن ابو جعفر بن حسن طوسی ۔آپ شیخ طائفہ کے فرزند ارجمند ہیں آپ کی وفات ۵١۵ ھجری قمری میں ہوئی ۔

١٧: شیخ الاعظم ابوعلی حسن طوسی آپ شیخ مفید ثانی کے لقب سے مشہور ہیں آپ کی وفات ۵۴٨ ھ ق میں ہوئی ہیں۔

١٨: امین الاسلام ابوعلی فضل بن حسن بن فضل طبرسی۔ آپ چھٹی صدی کے بزرگان علماء امامیہ میں سے تھے آپ صاحب تفسیر مجمع البیان ہیں آ پ کی وفات ۵۴٨ ھ ق میں ہوئی ۔

١٩: ابو منصور احمد بن علی ابیطالب طبرسی آپ کی تالیفات میں سے مشہور ترین کتابیں یہ ہیں ۔  ١: الاحتجاج علی اصل اللجاج  ٢: تاج الموالید  ٣: تاریخ الائمہ  ۴: فضائل الزھراء   ۵: الکافی فی الفقہ                                   ۶:مناظرالطالبیہ۔

٢٠:عماد الدین ابو جعفر محمد بن علی بن محمد بن علی طبرسی آملی آپ کی وفات ۵۶٠ ھ ق میں ہوئی ۔

٢١: قطب الدین ابوالحسین ” ابوالحسن” سعید بن ھبه اللہ بن حسن راوندی آپ کی وفات  ۵٧٣ ھ ق میں ہوئی ۔ آپ کی قبر شریف صحن حضرت معصومہ  میں واقع ہے۔

٢٢: ابوالمکارم عزّالدین حمزہ بن علی بن زھرہ حسینی آپ ابن زھرہ کے نام سے مشہور ہیں۔

٢٣: منتخب الدین ابوالحسن علیبن عبیداللہ بن ابی محمد حسن حسکا آپ کی وفات ۵٨۵ ھ ق میں ہوئی۔

٢۴: الحافظ ابوعبداللہ محمد بن علی بن شہر آشوب آپ ابن شہر آشوب کے نام سے مشہور ہیں آپ کی وفات ۵٨٨ ھ ق میں ہوئی ۔

٢۵: شیخ الاجل فخرالدین ابوعبداللہ محمد بن احمد بن ادریس حلّی آپ ” ابن ادریس ” کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ کی وفات حسرت آیات ۵٩٨ ھ ق میں ہوئی  ویسے تو آپ کی وفات ۵۴٣ ھ ق میں مشہور ہیں۔

٢۶: سید یدالدین محمود بن علی بن حسن رازی ۶٠٠ ھجری کے بعدوفات ہائی۔

٢٧: محدّث اور ثقه ہے ابوالفضل شاذان بن جبرئیل بن اسماعیل قمی حدود ۶١۵ ھجری قمری میں وفات پائی ۔آپ محدّث اور ثقہ ہیں۔

٢٨: شمس الدین فخّار بن معد موسیٰ آپ کا لقب ابوعلی ہے اور ابن معد کے نام سے مشہور ہے آپ کی وفات ۶٣٠ ھ ق میں ہوئی ۔

٢٩: ابوابراہیم محمد بن جعفر بن ھبه اللہ بن نمای آپ ” ابن نما ” کے حوالے سے مشہور ہیں متوفیٰ۶۴۵ ھ ق ۔

٣٠: ابو موسیٰ اور ابوالحسن کے حوالے سے معروف ہیں علی بن موسیٰ بن جعفر آپ کی کنیت ”ابن طاوؤس ” ہیں کہتے ہیں کہ آپ نے امام زمان علیہ السلام کی زیارت کی تھی آپ نے ۵٠ سے زیادہ قیمتی کتابیں لکھی ہیں۔

٣١: معلّم اکبر ، شیخ الاسلام خواجہ نصیر الدین محمد بن محمد بن حسن متوفیٰ ۶٧٢ ھ ق ۔

٣٢: نجیب الدین ابوالفضل احمد بن موسیٰ بن جعفر علوی آپ کا لقب جمال الدین تھا اور ”ابن طاؤوس ” کے نام سے معروف ہیں آپ ہی وہ پہلا شخص ہے جس نے احادیث کو صحیح ، حسن ، ضعیف اور موثق میں تقسیم فرمایا۔ آپ کی وفات ۶٧٣ ھ ق میں ہوئی۔

٣٣: نجم الدین ابوالقاسم جعفر بن حسن بن ابی ذکریا یحیٰ بن حسن بن سعید  حلّی متوفیٰ ۶٧۶ ھ ق ۔

٣۴: نجیب الدین ابوذکریا یحیٰ بن احمد بن یحیٰ بن حسن بن سعید حلّی آپ ابن سعید کے نام سے مشہور ہیںمتوفیٰ ۶٨٩ یا  ۶٩٩ھ ق ۔

٣۵: علامہ فاضل آیه اللہ جمال الدین ابو منصور حسن بن سدید الدین بن زین الدین علی بن مطہر  آپ ” ابن مطہر” اور ” علامہ” اور ” علامۂ دھر ” کے نام سے مشہور ومعروف ہیں۔ آپ کی تالیفات تقریباً ١٢٠ سے اوپر ذکر کی گئی ہیں آپ کی وفات حسرت آیات ٧٢۶ ھ ق میں ہوئی ۔

٣۶: عمیدالدین ابوعبداللہ سید عبدالمطلب بن ابی الفوارس آپ ”سید عمیدی” کے نام سے مشہور ہیں۔آپ کی وفات ٧۵۴میں ہوئی ۔

٣٧: فخرالمحققین ابوطالب محمد بن علامہ حلّی آپ نے شب جمعہ ١۵ یا ٢۵ جمادی الآخر ٧٧١ھ ق کو وفات پائی۔

٣٨: نصیر الدین علی بن محمد بن علی حلّی آپ کی رحلت ٧٧۵ ھجری قمری میں ہوئی ۔

٣٩: شیخ اجل شہید اوّل شمس الدین ابوعبداللہ محمود بن مکی دمشقی ،فقہ اور اصول میں تصانیف کے حوالے سے اب تک کسی نے آپ کی جگہ نہیں لی ہے ۔ کتاب لمعہ اب تک دنیائے تشیع کے مدارس میں نصاب درس فقہ واجتہاد ہے آپ کو حکومت وقت نے قاضی برھان الدین مالکی اور عباد بن جماعه شافی کے فتویٰ کے مطابق ایک سال تک شام کے قلعہ میں زندان میں رکھا پھر تلوار کے ذریعہ آپ کو شہید کیا۔ شہید کرنے کے بعد آپ کی لاش اطہر کو سولی پر چڑھا یا پھر پتھراؤ کیا پھر آپ کے بدن اطہر کو جلایا یہ واقعہ جمعرات کے دن نہم جمادی الاوّل ٧٨۶ ھجری قمری میں پیش آیا ۔ آپ کے فرزندوں میں شیخ رضی الدین ابوطالب محمد اور شیخ جمال الدین ابومنصور حسن اور آپ کی شریک حیات امّ علی اور آپ کی بیٹی ام الحسن فاطمہ سب کے سب فقیہ اور مجتہد تھے۔

۴٠: زین الدین ابوالحسن علی بن خازن حائری معروف بہ ” ابن خازن ” آپ شہید اوّل کے شاگردوں میں سے تھے آپ کی وفات ٨٢٠ ھ ق میں ہوئی ۔

۴١: شرف الدین ابو عبداللہ مقداد بن عبداللہ بن محمد بن حسین بن محمد حلّی  آپ ” فاضل مقداد ” کے حوالے سے جانا جاتا ہے۔ آپ بھی شہید اوّل کے ممتاز شاگردوں میں سے تھے آپ کی       وفات ٨٢۶ ھ ق میں ہوئی ۔

۴٢: جمال الدین ابوالعباس احمد بن محمد بن فھد حلّی معروف بہ ” ابن فہد ” آپ فقہ،اصول و فروع ، جامع معقول و منقول اور زھد وتقویٰ میں یکتائے زمان اور علم وعرفان میں بے مثال شہرہ آفاق رکھتے تھے ۔کہا جاتا ہے کہ ابن فہد نے امیر المؤمنین  کو خواب میں دیکھا مولائے کائنات علیہ السلام  اور علم الھدیٰ ساتھ تھے ۔ابن فہد نے سلام کیا تو جواب سلام کے بعد علم الھدیٰ نے کہا ۔ ”اھلاً بنا صرفاً اھل البیت” اس کے بعدآپ کی تالیفات کے بارے میں پوچھا گیا پھر علم الھدیٰ نے کہا اس کے علاوہ اور بھی تالیفات مسائل کے تحریر اور تسھیل طرق ودلائل ہیں ۔ پس اس کے بعد اس طرح گویا ہوئے ” بسم اللہ الرحمن الرحیم الحمدللہ المقدس بکمالہ عن مشابھه المخلوقات شروع کریں ۔ ابن فہد کہتے ہیں جب میں بیدار ہوا تو کتاب تحریر کو لکھنا شروع کیا اور اسی جملہ کو کتاب کے شروع میں ذکر کیا ۔ آپ کی وفات کربلائے معلّی میں ٨۴١ ھجری قمری میں ہوئی ۔

۴٣:زین الدّین ابوالحسن شیخ علی بن محمد بن ہلال جزائری عراقی، آپ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ : اس زمانے میں شیعوں کے تمام معاملات میں (چاہے  وہ معاشی ہو یا معاشرتی ، سیاسی ہو یا اقتصادی) مرجع وماویٰ آپ  ہوا کرتے تھے۔ روایات اور احادیث کے سلسلے میں آپ ثقہ اور بزرگان شیعہ میں سے تھے ۔ آپ علّامہ بزرگوار محقق کرکی اور ابن ابی جمہور احسائی کے استاد تھے ۔ آپ کی وفات تقریباً٩۴٠ ھق میں واقع ہوئی ۔

۴۴: عالم ربّانی ،مروج اسلام،شیخ علائی نورالدین ابوالحسن شیخ علی بن عبدالعالی عاملی کرکی رحمه اللہ علیہ ،  آپ ”محقق کرکی” کے لقب سے بہت مشہور ہیں ۔ آپ اپنے زمانے کے بزرگ شیعہ علماء میں سے تھے۔اس زمانے کے بادشاہ ”شاہ طہماسب صفوی” نے آپ کو ”نابغۂ زمان ”اور”علّامہ دھر” کالقب دیا ۔دسویں صدی ہجری قمری کے اکثر بزرگ علماء کرام جیسے شہید ثانی اور علی ابن عبدالعلی میسی وغیرہ آپ کے ممتاز شاگردوں میں سے تھے۔ آپ ٩۴٠ھق کو درجۂ شہادت پر فائز ہوئے۔

۴۵: شیخ زین الدین بن علی بن احمد بن محمد بن جمال الدین بن تقی الدین بن صالح بن مشرف العاملی آپ” شھید ثانی” کے نام سے مشہور ہیں آپ زھد وتقویٰ علم وعرفان اور دوسرے بہت سے کمالات سے مزیّن تھے آپ کی حالات زندگی دوسرے علماء وفضلاء کے لئے نمونہ ہیں ۔آپ ۵۴ سال کی عمر میں ٩۶۵ھجری قمری کو درجۂ شہادت پر فائز ہوئے  ” خدا رحمت کند این عاشقان پاک طینت را”

۴۶: سالک راہ خدا، عظیم الشان شخصیت اور اسوۂ زھد وتقویٰ حضرت آیه اللہ العظمیٰ مقدس اردبیلی رحمه اللہ علیہ، آپ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ آپ صاحب کرامت شخصیت تھے آپ کو جب بھی کوئی دینی مسئلہ پیش آجاتے تو فوراً نجف اشرف میں مولائے کائنات کی بارگاہ مقدس میں پوری رات گزار لیتے  اور جواب وصول کرلیتے ۔ گاہے مولائے کائنات فرماتے کہ مسجد کوفہ جائیے وہاں پر میرے فرزند ارجمند مہدی موجودہیں۔آپ وہاں جاکر امام زمان علیہ السلام سے جواب وصول کیاکرتے ۔آپ کے بارے میں بہت سی کرامات نقل ہوئی ہیں لیکن تفصیل کا موقع نہیں ہے وہ مشہور کتابین جو آپ نے تالیف فرمائیں درج ذیل ہیں ۔

١: اثبات واجب           ٢: استیناس المعنویہ                  ٣: اصول دین      ۴: حاشیہ بر شرح قوشجی             ۵: حاشیہ بر شرح مختصرالاصول عضدی    ۶: الخراجیہ             ٧ : شرح الارشاد الاذھان ،    حدایق الشیعہ بھی آپ سے منسوب ہیں۔ مقدس اردبیلی ماہ صفر ٩٩٣ یا ٩٩۴ ھ ق کو وفات پائی۔ آپ کو بارگاہ علی بن ابی طالب علیہ السلام کے ایوان طلا میں دفن کیا گیا ۔

۴٧:شیخ اجل مولانامحمد بن علی بن محمد نجفی بلاغی آپ مقدس اردبیلی کے برجستہ شاگردوں میں سے تھے آپ نے عراق میں بلاغی کے نام سے شہرت پائی۔ آپ کی وفات کربلا معلی میں ١٠٠٠ ھجری قمری کو واقع ہوا ۔

۴٨: رکن الاسلام شمس الدین محمد بن علی بن حسین موسوی عاملی جبعی آپ ” صاحب مدارک ” کے نام سے مشہور ومعروف ہیں۔ آپ نے مقدس اردبیلی سے کسب فیض کیااور یہ دونوں شخصیات ایک دوسرے کی اقتداء کیا کرتے تھے۔ صاحب مدارک کی وفات ١٠٠٩ ھجری قمری میں بتائے جاتے ہیں۔آپ کی قبر شریف پہ یہ آیه مبارکہ تحریر ہیں :” رجال صدقوا ماعاھدواللہ علیہ فمنہم من قضیٰ نحبہ ومنہم من ینتظر وما بدّلوا تبدیلاً”( سورہ احزب ٢٣)

۴٩:شیخ الاجل علّامہ مولانا شیخ حسن بن زین الدین عاملی جبعی آپ کا لقب جمال الدین تھا آپ انتہائی زھد وتقویٰ میں مشہور تھے آپ نے مقدس اردبیلی اور ملّا عبداللہ یزدی سے تعلیم حاصل کی۔

۵٠:آیه اللہ علامہ سید ضیاء الدین نوراللہ بن سید شرف الدین نستوی مرعشی آپ ”شہید ثالث” کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ زمان حکومت صفوی میں زندگی بسر کرتے تھے ۔فقہ ،اصول، معقولات اورمنقولات پر ید طولا رکھتے تھے ۔ آپ نے ٨٠ سے زیادہ کتابیں تالیف فرمائی ہیں آپ کی شہادت ١٠١٩ ھ ق کو واقع ہوئی ۔

۵١: استاد الحکماء بھاء الملّت والدین علّامہ محمد ابن عزّالدین حسین بن عبدالصمد بن محمد بن  علی بن حسن بن محمد بن صالح حادثی ھمدانی جبعی عاملی۔

آپ شیخ بہائی کے حوالے سے مشہور ومعروف ہیں ۔آپ کے تمام اساتیذبزرگ علماء اور مجتہدین میں سے تھے ان میں سے چند کا ذکر ہم یہاں کریں گے ۔

١: آیه…فاضل جواد                 ٢: آیه …ملاعبداللہ تستری       ٣: آیه… سید حسین مجتہد

۴: آیه … ملا خلیل قزوینی      ۵: آیه … میرزا رفیعا نائنی     ۶: آیه… ملّا صدرا شیرازی

٧: آیه…مجلسی اوّل                     ٨: آیه…ملّا محسن فیض کاشانی      ٩: آیه… محقق سبزواری

١٠: آیه …ملاصالح مازندرانی (وغیرہ)

آپ نے ٩٠ سے زیادہ کتابیں تحریر فرمائی ہیں ۔آپ کی وفات حسرت آیات ١٠٣٠ ھ ق  یا ٩١٣١ ھ ق کو اصفہان میں واقع ہوئی ۔

۵٢: آیه… میر محمد باقر بن شمس الدین استر آبادی آپ ” میر داماد” کے حوالے سے جانے جاتے ہیں آپ اپنے زمانے کے سب سے بڑے عارف ، فیلسوف ، فقیہ  اور اصولی تھے ۔ آپ کے زھدوتقویٰ کے حوالے سے دنیا معترف ہے۔ صاحب معارف عالیہ نے آپ کے بارے میں یہ شعر کہا ہے

عقلیش از قیاس عقل برون                نقلیش از قیاس نقل فزون

آپ کی وفات حسرت آیات کربلا اور نجف میں زیارتوں کے دوران ١٠۴٠  یا ١٠۴١ یا ١۴٠٢  ھجری قمری واقع ہوئی ۔

۵٣:میر موحد ابوالقاسم بن میرزا بیگ بن امیر صدرالدّین موسوی فندرسکی مذھب امامیہ کے بلند پایہ شخصیات میں سے ہیں آپ مختلف علوم پر کافی مہارت رکھتے تھے آپ  نے١٠۵٠ ھ ق کو اصفہان میں رحلت فرمائی ۔ آپ نے کئی بار ہندوستان کی طرف سفر کیا ۔اس بات کو ملّا احمد نراقی نے اپنے شعر میں ذکر کیا ہے۔

۵۴: صدر الدین محمد بن ابراھیم بن یحییٰ قوامی شیرازی جوکہ ” صدر المتالھین” اور ” ملّا صدرا” کے لقب سے مشہور ہیں آپ کی شخصیت کے متعلق ایک مستقل کتاب کی ضرورت ہے۔

۵۴: شیخ الاسلام محمد بن حسن بن علی بن حسین عاملی، معظم لہ بہت بڑے محدث تھے اسی لئے آپ کو شیخ المحدثین بھی کہتے ہیں آپ کی رحلت ١١٠۴ھ ق میں ہوئی ۔

۵۵: سلطان العلماء علاء الدین سید حسین بن میرزا رفیع الدین محمد بن امیر شجاء الدین محمود مرعشی آپ متعدد قابل قدر کتابوں کے مؤلف ہیں آپ علم منقولات و معقولات پر مکمل عبور رکھتے تھے آپ کی وفات ١٠۶۴ھ ق میں ہوئی اور نجف اشرف میں مدفون ہیں۔

۵۶: علّامہ ملّا محمد تقی بن مقصود علی اصفہانی ” مجلسی اوّل” کے نام سے مشہور ہیں۔ علم رجال ، علم حدیث، علم فقہ، علم اصول وغیرہ پر مکمل دسترس رکھتے تھے۔ آپ نے نفیس ترین قسم کی کتابیں تالیف فرمائی ہیں۔ آپ کی خدمات تاریخ تشیع میں کسی معجزہ سے کم نہیں ہیں۔ آپ کی وفات ١٠٧٠ھ ق اصفہان میں ہوئی ۔

۵٧: علّامہ عبداللہ ابن محمد تونی بشروی بزرگان شیعہ میں سے ایک تھے آپ نے دینی اور اجتماعی لحاظ سے بہت زیادہ کوششیں کیں۔ اس کے علاوہ آپ کی کئی تالیفات موجود ہیں۔ آپ کی       وفات ١٠٧١ھ ق میں واقع ہوئی ہے۔

۵٨:حسام الدین ملّا محمد صالح بن ملّا احمد سروی مازندرانی بہت بڑے مجتہد گزرے ہیں۔ آپ منقولات ومعقولات دونوں پر مکمل عبور رکھتے تھے ۔ موصوف نے کئی قیمتی کتابیں تحریر فرمائی ہیں معظم لہ شیخ بہائی ، اور ملّا عبداللہ شوشتری کے ہر دلعزیز شاگردوں میں شمار ہوتے ہیں۔ آپ کی وفات ١٠٨٠ ھ ق میں واقع ہوئی ہے۔

۵٩: شیخ الاسلام ملّا محمد باقر بن محمد مؤمن خراسانی ”محقق سبزواری” کے نام سے مشہور ہیں آپ کی کتاب ”ذخیره العباد” ”کفایہ” اور مفاتیح النجاه” بہت ہی مشہور ہیں آپ نے ١٠٩٠ھ ق کو وفات پائی اور مدرسہ میرزا جعفر مشہد مقدس میں مدفون ہیں۔

۶٠: مُلّا محسن محمد بن شاہ مرتضیٰ بن شاہ محمود کاشانی آپ شیعہ اکابرین میں سے ہیں آپ ” فیض کاشانی” کے نام سے بہت مشہور ہیں۔ آپ گیارھویں صدی ھجری قمری کے برجستہ علماء میں سے ایک ہیں۔ آپ نے شاہ عباس ثانی کے زمانے میں زندگی کی ۔ معظم لہ کی عظیم تالیفات بھی ہیںاور موصوف صاحب کرامات بھی تھے۔آپ کی وفات ١٠٩١ھ ق کو کاشان میں ہوئی ۔ آپ کی مرقد شریف آج بھی لوگوں کی زیارت گاہ بنی ہوئی ہے۔

۶١: عالم ربّانی ، مُلّا میرزا محمد بن حسن اصفہانی شیروانی بڑے علماء  میں آپ کا شمار ہوتاہے۔ آپ مختلف دینی علوم پر مکمل عبور رکھتے تھے آپ کی کئی تالیفات موجود ہیں ۔ آپ کی وفات ١٠٩٧ھ ق میں واقع ہوئی ۔

۶٢: ثقه الاسلام آقا حسین بن جمال الدّین محمد خوانساری آپ ” محقق خوانساری ” کے نام سے مشہور ہیں ۔ گیارھویں صدی ھجری قمری کے برجستہ علماء میں شامل ہیں آپ کاارتحال ١٠٩٧ھ ق کو واقع ہوا ۔

۶٣: علّامہ میرزا محمدمہدی بن ابوالقاسم موسوی شہرستانی بڑے شیعہ عالم گزرے ہیں آپ نے کئی کتابیں تحریر فرمائی ہیں آپ کی وفات ١٢١۵ھ ق میں واقع ہوئی ۔

۶۴: علّامہ محمد باقر بن محمد تقی بن مقصود علی اصفہانی ، آپ ” علّامہ مجلسی ” مجلسی ثانی” کے نام سے مشہور ہیں ۔آپ کی کتاب بحار الانوار تاریخ تشیع میں معجز نما کتاب ہے ۔آپ کے جد اعلیٰ مقصود علی اعلی پایہ کے شاعرتھے نمونے کے طور پر یہ شعر آپ قارئین کی خدمت میں ھدیہ کرتے ہیں

تاشد قدح کش از می عشق آرزوی ما      بردوش می کشند ملائک سبوی ما

آپ کاوجود مبارک شیعوں کے لئے انتہائی معزز اور محترم ہیں ۔آپ نے جو دین کی خدمت انجام دی اور دین محمدی اور شریعت احمدی کی پاسداری فرمائی اس کی نظیر نہیں ملتی ۔ آپ کی لکھی ہوئی کتابوں کو آج بھی علماء اور فضلاء روحانی غذا سمجھتے ہیں ۔ آپ کی رحلت ١١١٠ھ ق میں ہوئی ۔ خداکی بے پایان رحمت اور برکت آپ کے اوپر ہو۔

۶۵: علّامہ کبیر سید نعمت اللہ بن عبداللہ بن محمد موسوی جزائری شیعہ علماء کے بزرگ شخصیات میں سے ہیں آپ نے بیش بہا کتابیں تحریر فرمائیں ١١١٢ھ ق میں وفات پائی۔

۶۶: جمال الملت والدین مولانا محمد بن آقا حسین خوانساری مایہ ناز شیعہ علماء میں شمار ہوتے ہیں آپ محقق اور مختلف علوم پر مہارت تامّہ رکھتے تھے خصوصاً فقہ ، اصول اور تفسیر میں استاد مانے جاتے تھے آپ کی رحلت ١١٢١ ھ کو ثبت ہوئی ہے۔

۶٧: تاج الفقہاء محمد بن حسن بن محمد ” تاج العلماء اور تاج الفقہائ” کے نام سے مشہور ہیں آپ کو فاضل ھندی ، فاضل اصفہانی اور عالم ربّانی بھی کہتے ہیں آپ کی کئی تالیفات ہیں معظم لہ کی وفات ١١٣۵ھ ق میںہوئی ۔

۶٨: ثقه الاسلام شیخ یوسف بن احمد بن ابراہیم بن احمدی نہایت جلیل القدر عالم تھے۔ آپ نے مذھب حقہ کے دفاع میں کئی کتابیں تالیف فرمائیں۔ آپ نے کئی ممالک کا سفر کیا جسمیں بحرین سر فہرست ہیں ۔وہاں آپ نے تشیع کی بڑی خدمات سر انجام دیں۔ آپ کی وفات ١١٨۶ھ ق میںواقع ہوئی ۔

۶٩: مجدد مذھب علّامہ آقا محمد باقر بن محمد آمل اصفہانی آپ” وحید بہبہانی ” کے نام سے بہت مشہور ہیں آپ کی وفات ١٢٠۵ھ ق میں ہوئی ۔

٧٠: مُلّا محمد مھدی نراقی بہت ہی عظیم شخصیت ہیں آپ کے علمی کمالات اورروحانی درجات کے حوالے سے آج بھی علماء معترف ہیں ۔آپ ایک عظیم عرفانی شخصیت تھے۔اخلاق کے لحاظ سے آپ کو معلّم اخلاق کہاجاتا ہے۔ آپ کی وفات١٢٠٩ھ ق ثبت ہوئی ہے۔

٧١: علّامہ اوحدی آپ ”بحر العلوم” کے نام سے مشہور ہیں۔

٧٢: سید اجل مولانا میرزا محمد مہدی بن ابوالقاسم موسوی شہرستانی حائری               متوفیٰ ١٢٢۶ ھ ق ۔

٧٣: علامہ سید جواد بن سید محمد حسنی حسینی عاملی غروی آپ ”صاحب مفتاح الکرامه” کے نام سے مشہور ہیں۔

٧۴: علم الاعلام ، سیف الاسلام شیخ جعفر بن شیخ خضر بن شیخ یحییٰ حلّی آپ ” کاشف الغطاء ” کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ کی وفات ١٢١۵  یا  ١٢١۶ ھ ق میں واقع ہوئی۔

٧۵: سیّد العلماء والمجتھدین علی ابن سید ابوالمعالی طباطبائی آپ کی وفات ١٢٣١ ھ ق میں ہوئی ۔

٧۶: شیخ اجل ابوالقاسم محمد بن حسن جیلانی الاصل قمی المسکن آپ کی وفات ١٢٣١ ھ ق میں واقع ہوئی اورمقبرۂ شیخان قم میں مدفون ہیں ۔

٧٧: مولانا سید محسن بن سید حسن بن سید مرتضیٰ حسینی کاظمی بغدادی متوفیٰ ١٢۴٠ ھ ق ۔

٧٨: سیدالفقہاء ۔المجاھد ین ، محمد بن علی بن ابوالمعانی طباطبائی متوفیٰ ١٢۴٢ ھ ق ۔

٧٩: عارف واصل حاج ملا احمد بن محمد مہدی بن ابی ذر نراقی الاصل ،کاشانی المسکن متوفیٰ ١٢۴۵ ھ ق۔

٨٠: شیخ فقیہ محمد تقی بن عبدالرحیم رازی متوفیٰ ١٢۴٨ھ ق۔

٨١: حجه الاسلام سید محمد باقر بن محمد تقی موسوی متوفیٰ ١٢۶٠ ھ ق۔

٨٢: شیخ محمد حسین بن عبدالرحیم رازی متوفیٰ ١٢۶١ ھ ق ۔

٨٣: سیدالعلماء ابراہیم بن حجہ الاسلام سید محمد باقر موسوی قزوینی متوفیٰ ١٢۶٢ ھ ق ۔

٨۴: شیخ الفقہاء محمد حسن بن باقر بن عبدالرحیم بن محمد بن مُلا عبدالرحیم متوفیٰ١٢۶۵ ھ ق یا ١٢۶۶ ھ ق۔

٨۵: علامہ ملا محمد سعید مازندرانی بار فروشی متوفیٰ ١٢٧٠ ھ ق ۔

٨۶: شیخ الطائفہ ثانی ، حضرت آیه اللہ العظمیٰ شیخ مرتضیٰ الانصاری بن مولانا محمد امین بن مولا شمس الدین بن ملا احمد شوشتری ازفول انصاری آپ علماء امامیہ کے برجستہ اور برگزیدہ شخصیات میںسے ہیں  آپ کے زھد وتقویٰ کے حوالے سے تالی تلؤ معصوم  ہیں اور علم وعمل کے حوالے سے شیخ الطائفہ ثانی کہا جاتا ہے ۔اھل قلم اور اصحاب رجال نے آپ کو ” خاتم الفقہاء والمجتہدین ” کا لقب دیا ہے۔ آپ کو فخر شیعہ اور ناصر الشریعہ بھی کہا جاتا ہے۔ آپ نے اپنے زمانے کے عظیم علماء سے کسب فیض کیا جسمیں شیخ موسیٰ کاشف الغطاء ، سید محمد مجاھد اور صاحب جواہر وغیرہ شامل ہیں۔ آپ کی عظیم ترین تالیفات موجود ہیں جسمیں رسائل اور مکاسب اب تک حوزہ علمیہ کے سطوح عالیہ کے دروس میں شامل ہیں۔ یہ دونوں کتابیں بڑی اہمیت کے حامل ہیں۔

٨٧:شیخ اجل علّامہ عبدالحسین بن علی تہرانی آپ ” شیخ عراقین ” کے حوالے سے بہت مشہور ہیں۔آپ صاحب جواھر محدث نوری صاحب مستدرک الوسائل کے شاگردوں میںسے تھے آپکی وفات١٢٨۶ھ ق میں واقع ہوئی ہے۔

٨٨:معزّ الدین محمد مہدی قزوینی آپ بیس (٢٠) سال کی عمر میں درجۂ اجتہاد کو پہنچے ۔آپ  شیخ انصاری اور میرزائے شیرازی کے شاگردوں میں سے ہیں۔ آپ نے بیس سے زیادہ فقہ اوراصول پر کتابیں تالیف کی ہیں ۔ آپ کی وفات  ١٣٠٠ ھجری قمری میں واقع ہوئی ۔

٨٩: فاضل کامل شیخ محمد حسن بن محمد اسماعیل اردگانی آپ سید علی میبدی کے ممتاز شاگردوں میں سے تھے آپ کی وفات کربلائے معلی میں واقع ہوئی ہے۔ آپ کی تاریخ وفات کے بارے میں یہ قطعہ موجود ہے

ولھا ذاب قلب الوجد ھماً           لموت ولی امیرا لمؤمنیناً

فقم فزعا وارخ ” بالبکائ         حسین بالثری امسی رھیناً

” ١٣٠۵”

٩٠: رکن الاسلام حاج ملا علی تہرانی رازی کنی آپ علماء امامیہ کے بزرگان میں سے تھے آپ نے ناصر الدین قاچار کے دور میں زندگی ۔کی آپ علم فقہ ،علم اصول ،علم تفسیر اور علم رجال پر فوق عادہ دسترس رکھتے تھے۔ آپ نے بہت سی تالیفات اپنے بعد بطور یادگار چھوڑے ہیں ۔آپ کی       وفات ١٣٠۶ ھ ق میں ہوئی ۔

٩١: مجدد مذھب میرزا محمد حسن بن محمود بن اسماعیل حسینی شیرازی، آپ تقریباً ١٢۵٩ ھ ق میں حوزۂ علمیہ نجف اشرف میں داخل ہوئیاور آپ کے اجتہاد کی تائید شیخ الفقہاء صاحب جواہر نے کی ہے۔ کچھ مدت تک آپ نے شیخ مرتضی انصاری سے کسب فیض کیا ۔آپ اصطلاح فقہاء میں ” میرزاء مجدد ” کے نام سے مشہور ہیں آپ نے تمباکو کی حرمت کے حوالے سے جو فتویٰ صادر فرمایا تھا اس  سے بھی آپ نہایت مشہور ومعروف ہوگئے۔ آپ کا نام امام زمان علیہ السلام سے ملاقات کرنے والوں میں بھی شامل ہے۔ آپ صاحب کرامات بھی تھے ۔آپ کی اور بھی اوصاف بتائی گئی ہیں۔ آپ کی وفات حسرت آیات ١٣١٢ ھ ق میںواقع ہوئی ۔

٩٢: علامہ حاجی میرزا حبیب اللہ رشتی

٩٣: علامہ اوحدی حاج سید علی ابن محمد علی الحسینی المیبدی متوفیٰ ١٣١٣ ھ ق۔

٩۴: علامہ سید محمد بن قاسم طباطبائی متوفیٰ ١٣١۶ ھ ق۔

٩۵: آیه اللہ العظمیٰ فقیہ اھل بیت حاج میرزا محمد ہاشم قزوینی (خوانساری) متوفیٰ ١٣١٨ ھ ق۔

٩۶: شیخ الفقہاء حاج میرزا محمد حسن بن میرزا جعفر بن میرزا محمد اشتیانی متوفیٰ ١٣١٩ ھ ق۔

٩٧: علامہ حاج آقا رضا بن محمد ہادی ہمدانی نجفی موصوف بہ ” فقیہ ھمدانی متوفیٰ ١٣٢٢ ھ ق۔

٩٨: شیخ المحققین محمد حسن بن عبداللہ بن محمد باقر مامقانی نجفی آپ کی تالیفات میں سے بشری الوصول الی اسرار علم الاصول اور ذرایع الاحکام در شرح شرائع الاحکام شہرت رکھتی ہیں۔ آپ کی وفات ١٨ محرم ١٣٢٣ ھ ق کو نجف اشرف میں ہوئی ہے۔

٩٩: علامہ مجاہد حاج میرزا حسین بن حاج میرزا خلیل خلیلی نجفی متوفیٰ ١٣٢۶ ھ ق۔

١٠٠:علامہ شیخ شہید حاج فضل اللہ ابن مُلّا عباس مازندرانی متوفیٰ ١٣٢٧ ھ ق ۔ آپ بزرگان شیعہ میں سے ایک تھے، آپ نے دین کے لئے بہت زیادہ خدمات سر انجام دیں،یہاں تک کہ آپ کو انقلاب مشروطیت میں حکومت وقت نے ٣ رجب ١٣٢٧ ھ ق کو پھانسی دے کر شہید کردیا۔ آپ کے تابوت کو قم منتقل کیا گیا اور صحن حضرت معصومہ میں دفن کیا گیا۔

١٠١:علّامہ ربّانی آقا سید محمد کاظم طباطبائی یزدی۔

١٠٢: علّامہ سید اسماعیل بن سید صدر الدین موسوی متوفیٰ ١٣٣٧ ھ ق ۔

١٠٣:علّامہ ربّانی آخوند مُلا محمد کاظم خراسانی یزدی۔

١٠۴: شیخ الفقہاء میرزا محمد تقی شیرازی صاحب انقلاب عراق کے بانی اور مؤسس ہیں۔

١٠۵:علّامہ شیخ فتح اللہ شریعت اصفہانی۔

١٠۶:علّامہ میرزا حسین بن شیخ عبد الرّحیم نائنی جوکہ”شیخ الاسلام” کے لقب سے مشہور ہیں۔ آپ درج ذیل آیات عظام  کے شاگرد خاص تھے ۔

١:آیه اللہ محمد کاظم یزدی صاحب عروه الوثقیٰ ،

٢:آیه اللہ آخوند خراسانی صاحب کفایہ

٣: آیه اللہ شیخ عبداللہ مازندرانی  ،

آپ کی وفات حسرت آیات ١٣۵۵ ھ ق میں واقع ہوئی ۔

١٠٧: ”آیه اللہ حاج شیخ عبدالکریم بن محمد جعفر مھجردی میبدی یزدی” آپ حوزۂ علمیہ قم کے مؤسس اور بنیاد گزار ہیں آپ کے اساتید محترم ”آیه اللہ میرزا شیرازی اوّل” میرزا شیرازی دوّم” ”شہید شیخ فضل اللہ نوری” ”سید محمد کاظم یزدی” اور ”شیخ محمد کاظم خراسانی” وغیرہ ہیں ۔

جن لوگوں نے آپ کی فکرو مکتب سے کسب فیض حاصل کیا ان میں ”امام خمینی” سید احمد خوانساری،سید شہاب الدین مرعشی، سید محمد رضا گلپایگانی، حاج سید رضا زنجانی، حاج آقا روح اللہ کمالوند، سید صدر الدین صدر، سید علی یثربی، اخوند ملا علی ھمدانی، سید محمد حجت، سید محمد داماد ، سید محمد تقی خوانساری اوران کے علاوہ ہزاروں دوسرے افراد شامل ہیں،آپ سلطان آباد واراک سے ہجرت کرکے قم تشریف لائے اور حوزۂ علمیہ قم کی بنیاد رکھی۔ آپ نے فقہ و اصول پر کئی قسم کی باارزش کتابیں لکھی ہیں۔ آپ نے ١٣۵۵ ھق میں اس دار فانی کو الوداع کہا۔

١٠٨: شیخ الفقہاء آیه اللہ العظمیٰ آقا ضیاء الدین بن علی بن آخوند مُلا محمد عراقی نجفی،، آپ علم معقولات اور علم منقولات پر مکمل عبور رکھتے تھے ۔فقہ اور اصول میںبڑے بڑے علماء نے آپ کے محضر سے استفادہ فرمایا۔ آپ نے فقہ اور اصول میںبہت نفیس قسم کی کتابیں تحریر فرمائیں۔ آپ کی وفات ١٣۶١ ھ ق میں ہوئی ۔

١٠٩: علّامہ ثانی حاج شیخ محمد حسین بن محمد حسن معین التجّار اصفہانی ۔ آپ ”علّامہ کمپانی ” کے نام سے بہت مشہور ہیں۔ آپ کا شمار بزرگان شیعہ میں کیا جاتا ہے ۔آپ تمام معنی میں آیه اللہ العظمیٰ تھے اور تمام علوم پر دسترس رکھتے تھے ۔خصوصاً شعر وادب سے بہت ہی دلچسپی رکھتے تھے اور آپ کے اشعار بہت ہی مشہور ہیں۔  آپ کی وفات ١٣۶١ ھ ق کو نجف اشرف میں ہوئی ۔

حسن ختام کے طور پر آپ کے غزل عرفانی قارئین کی نذر کررہا ہوں۔

غرّۂ غرّای  تو   چشم   مرا  خیرہ  کرد  طرّۂ زیبای تو عقل مرا تیرہ کرد

برد  بشیرین  لبی  شیرہ ٔ جان   مرا        کام مرا شکرین بردن آن شیرہ کرد

سلسلہ  موی  تو یافت  چہ آشفتگی          رشتۂ عمر مرا حلقۂ زنجیرہ کرد

حسن تو ای مہ جبین رھرو عشقم نمود    لطف تو ای نازنین طبع مرا چیرہ کرد

شیوۂ عاشق کشی سیرۂ معشوق ماست     آنچہ بہ من می کند آن روش وسیرہ کرد

از پس عمری  بزد جامہ ٔ تقوا  بہ  نیل    مفتقر از بسکہ از روی وریا زیرہ کرد

٭٭٭

١١٠: حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید ابوالحسن اصفہانی رحمه اللہ علیہ ۔ آپ علم معقولات ومنقولات پر ید طولیٰ رکھتے تھے  ۔آپ کے حسن سلوک اور حسن اخلاق سے سب آشنا تھے آپ اپنے زمانے میں پورے عالم اسلام کی مرجعیت ،خاص طور شیعیت کی مرجعیت آپ کے مقدس ہاتھ میں تھی۔آپ کے بارے میں تفصیلی بحث  ہو گی ۔انشاء اللہ

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

حیات مقدس حضرت آیه اللہ العظمیٰ سیّد ابوالحسن  موسوی اصفہانی رحمه اللہ علیہ

 

جیسا کہ علمائ، ادبائ،محققین اور مؤرخین سبھی اس بات سے آگاہ ہیں کہ جناب سید ابوالحسن موسوی اصفہانی  کی شخصیت محتاج تعارف نہیں ہے۔ آپ کا وجود مبارک تمام اہل جھان پر اظہر من الشمس ہے۔ آپ نے مختلف موضوعات پر کتب لکھیں۔ آپ نشر معارف اھلبیت  کے حوالے سے زبان زد عام وخاص ہیں۔آپ کی سیرت اور کردار پر اگر بحث کی جائے تو بقول ضرب المثل ” مثنوی ہفتاد من کاغذ شود” ہو جائے گی۔ یہاں پر مختصراً اپنی بساط کے مطابق اس عظیم مرد فقیہ کے بارے میں کچھ حق ادا ہوجانے کی غرض سے چند نکات بیان کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

سید قدس سرہ کا نام اور لقب:

سید ابوالحسن بن سید محمد بن سید عبدالحمید موسوی بہبہانی الاصل ، اصفہانی المولد ، نجف اشرف میں دینی علوم کے لئے ہجرت فرماگئے اور وہیں پر ہی وفات پائی ۔

اس عنوان میں چار نکات قابل ذکر ہیں۔

الف: شہرت موسوی: معظم لہ شجرہ نسب کے حوالے سے نسلاً بعد نسلٍ ٢٣ پشت گزرنے کے بعد حضرت امام موسی ابن جعفر علیہما السلام سے جاملتے ہیں لہٰذا اسی مناسبت سے موسوی مشہور ہیں۔

موصوف کاشجرہ نسب مرحوم آقای سید محمد باقر لنجہ ای ابن مرحوم آقا میرزا حسین ابن سید ابوتراب کے نسخہ کے مطابق :

ابوالحسن بن محمد بن عبدالحمید بن محمد البھبھانی بن علی بخش بن محمد بن خلیل بن محمد طاہر ابن اسداللہ بن نصراللہ بن ولی بن نصر اللہ بن سید محمد بن جلال الدین بن محمد بن صدر الدین بن محمد طیار بن محمد بن طاہر بن مہدی بن عزّالدین بن تاج الدین بن قطب الدین بن ابراہیم بن موسیٰ بن محمود بن رکن الدین بن ابوطاہر البذلابن ابوالحسن بن علاء الدین بن مرتضیٰ بن موسیٰ بن ابراہیم بن امام الھمام ابالحسن موسیٰ ابن جعفر الکاظم ابن امام جعفر ان محمد الصادق ابن امام محمد بن علی الباقر ابن امام علی ابن الحسین السجادابن امام حسین شہید ابن امام علی ابن ابی طالب صلواه اللہ علیہم اجمعین الی قیام یوم الدین۔

ب:  شہرت بہبہانی: موصوف معظّم لہ کے آباء واجداد کی چند نسلیں بہبہان کے موسوی سادات میں شمار ہوتی تھیں اور شہر بہبہان میں رہائش پذیر تھے۔ ان کے جدّبزرگوار سید عبدالحمید بہبہان میں متولد ہوئے ، ان کے والد گرامی بہبہانی کہلواتے تھے اور اسی نام سے مشہور تھے ان کے شجرہ میں بھی ایسا ہی ثبت وضبط ہے۔ لہٰذا بعض اھل علم اور علماء رِجال نے موصوف کو اسی شہرت سے یاد کیا ہے۔

ج:اصفہانی:آپ اصفہان کے ایک قریہ مدیسہ میں پیدا ہوئے ۔ عام طور پر انسان جہاں پیدا ہوتاہے وہیں سے منسوب ہوجاتا ہے۔ اور اس کا اصلی وطن اسی جگہ کو قرار دیا جاتا ہے۔ اسی طرح آپ ایک مدت تک اصفہان ہی میں رہے اور آپ نے اپنی ابتدائی تعلیم اصفہان ہی میں حاصل کی اور اصفہانی مشہور ہوگئے۔

د: نجفی: یہ شہرت اس وجہ سے حاصل ہوئی کیونکہ معظّم لہ اصفہان سے ہجرت کرکے ۵٧ سال تک مولائے کائنات علی ابن ابی طالب علیہ السلام کے جوار میں مکتب اہل بیت  کی خدمت کرتے رہے ۔ یعنی ١٣٠٨ ھ ق  سے آخر عمر تک وہاں پر منصوب رہے ۔ اسی لئے اہل علم، اہل رجال ، مؤرخین ، مؤلفین اور مصنفین نے آپ کو نجفی الہجرت والمدفن کہتے ہیں۔

معظم لہ کی تاریخ ولادت:

اگرچہ بعض لوگوں نے آپ کی تاریخ ولادت ١٢٧٧ ھ ق ثبت کیا ہے لیکن اکثر اہل علم محققین اور شخصیات نے آپ کی تاریخ ولادت ١٢٨۴ ھ ق کو مدیسہ نامی گاؤں میں لکھی ہے جو فلاورجان کے جنوب مغرب میں واقع ہے۔

سید موصوف کے والد گرامی اور جدّاعلی کاذکر:

آپ کے والد بزرگوار کا اسم گرامی سید محمد اصفہانی ہے، اور ان کا شماروہاں کی بزرگ شخصیت اور صاحب زہد وتقویٰ میں ہوتے تھے۔ آپ خوانسار شہر میں مدفون ہیں۔ آپ کے جدّ گرامی علامہ سید عبدالحمید اصفہانی ایک علمی اور ادبی شخصیت تھے۔ آپ نے آیه اللہ شیخ محمد حسن صاحب جواہر متوفیٰ ١٢۶۶ ھ ق اور شیخ الفقہاء والمجتہدین شیخ موسیٰ سے استفادہ کیا۔ صاحب اعیان الشیعہ کی نقل کے مطابق سید محمد عراق (کربلا) میں متولد ہوئے اور اسی دوران ہی موصوف کے جدّ بزرگوار طلب علم کی خاطر عراق میں سکونت پذیر تھے ۔ سید عبدالحمید  کی وفات اصفہان میں ہوئی اور وہیں مدفون ہیں ۔  البتہ آپ کی تاریخ وفات معلوم نہ ہو سکی۔

علم ومعرفت کی طرف پہلا قدم:

جیسا کہ پہلے ذکر ہوچکا کہ سید ابوالحسن اصفہانی  خاندان علم ومعرفت سے تعلق رکھتے تھے اسی وجہ سے آپ نے جلدہی علمی مراحل کو طے کرلیا ۔ جب آپ نے فیصلہ کرلیا کہ دینی علوم حاصل کرنا ہے تو یہ بات اپنے پدر بزرگوار کے سامنے پیش ہوئی۔ اگرچہ آپ کے والد گرامی خود ایک عالم برجستہ تھے ۔ مگر تنگ دستی اور فقر کی وجہ سے بیٹے سے کہا :

بیٹا! علم حاصل کرنے کے لئے رقم درکار ہے ہماری مالی حالت بہتر نہیں ہے ۔ یہ بات تم جانتے ہو کہ تعلیم حاصل کرنے کے لئے بھوک اور پیاس برداشت کرنا پڑتی ہے۔ طلبہ گی میں تنگدستی اور محرومیت کے علاوہ کچھ نہیں ہے۔ لہذا تمہیں اختیار حاصل ہے میرے پاس تمہاری تعلیم کے لئے اخراجات نہیں ہے ۔ اگر تم یہ سب کچھ برداشت کرسکو تو کوئی بات نہیں۔ آپ نے جواب میں عرض کیا : والد گرامی آپ مجھے اجازت دیجئے باقی میری ذمہ داری ہے۔ میں آپ پر بوجھ نہیں بنوں گا ۔ والد محترم نے جب بیٹے کے عزم کودیکھا تو آپ نے اجازت دے دی ۔ اس وقت آپ کی عمر شریف ١۴ سال تھی ۔ ١٢٩۴ھ  ق میں مدیسہ سے اصفہان کی طرف روانہ ہوئے۔

حوزۂ علمیہ میں داخلہ

سید قدس سرہ  نے والد گرامی سے اجازت لینے کے بعد حوزۂ علمیہ اصفہان میں داخلہ لیا۔جو اس وقت کے مشہور علمی اور دینی مراکز میں سے تھا ۔ آپ نے مدرسہ صدر میں قیام فرمایا ۔ وہاں سے لیکر ١۴ ربیع الاوّل ١٣٠٨ھ ق تک اصفہان میں درس حاصل کیا پھر آپ نجف اشرف تشریف لے گئے وہاں سے آپ نے درجۂ اجتہاد حاصل کیا ۔ آپ درس خارج فقہ واصول دیا کرتے تھے ۔ یہاں تک کہ آپ آیه اللہ العظمیٰ کے درجہ پر فائز ہوگئے ۔آپ کی سیادت اور علمی مقام کاپوری دنیا معترف ہے۔

حوزۂ علمیہ میں آپ کے اساتیذ

آپ نے جلیل القدر اساتذہ سے کسب فیض کیا ان کا مختصر ذکر کرنا مناسب معلوم ہوتا ہے جن کے زھد وتقویٰ ، علم وعمل اور فکری تربیت کی وجہ سے آپ اس عظیم مقام پر فائز ہوئے۔ ان برجستہ اساتید کے اسماء گرامی درج ذیل ہیں۔

١: حجه الاسلام جناب سید محمد مشہدی ، آپ آقای نحوی کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ کو ادبیات عرب یعنی صرف ونحو پر عجیب دسترس حاصل تھی ۔ آپ اصفہان کے برجستہ استادوں میں سے تھے۔

٢:حکیم مقالہ آخوند ملا محمد کاشانی، آپ چودھویں صدی ہجری قمری کے برجستہ عارف ، فلسفی اورحوزہ علمیہ کے صف اوّل کے استادوں میں شمار ہوتے تھے ۔ آپ کی بہت سی کرامات نقل ہوئی ہیں ۔ آپ مدرسہ صدر کے عظیم استادوں میں سے تھے۔ وہیں پر آپ کی وفات ہوئی اور تخت فولاد اصفہان میں مدفون ہیں۔

٣:وحید عصر اور فرید دھر جناب سید محمد باقر اصفہانی ، آپ بزرگ علماء میں سے ہیں آپ ١٢۶۴ھ ق کو مہر درچہ فانی اصفہان کے گاؤں میں پیدا ہوئے ۔ اور ١٣۴٢ھق میں دعوت حق کو لبیک  کہا ۔ آپ اصفہان میں مدفون ہیں۔

۴: علّامہ دھر حاج شیخ جہانگیر خان ابن محمد خان قشقائی اصفہانی آپ کا شمار عرفاء ، حکماء ا ورعلماء برجستہ میں ہوتا ہے۔ آپ نے ١٣٢٨ھ ق میں وفات پائی۔

۵: علّامہ ابوالمعالی الشیخ محمد بن محمد ابراہیم کرباسی آپ کا تعلق اصفہان کے مایہ ناز علماء ، حکماء اور مجتہدین میں سے تھا ۔ آپ انتہائی صاحب تقوی ، فقیہ ، اصولی، رجالی اور بہت سی تالیفات کے مالک تھے۔ آپ کی وفات ١٣١۵ھ ق ثبت ہوئی ہے۔

۶: علّامہ کبیر حاج سید محمد ہاشم چہار سوقی اصفہانی، آپ نہایت ملنسار ، صاحب تقوی، بہت سے علوم پر عبور رکھنے والی شخصیت تھیں۔ آپ کی علمی ، فکری اور دینی خدمات کے حوالے سے اصفہان کے ہر خاص وعام معترف ہیں۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

سید قدس سرہ کو امام عصر ارواحنافداہ کی پہلی عنایت

 

اگر دیکھا جائے تو سید ابوالحسن اصفہانی  پر امام زمانہ عجل اللہ فرجہ الشریف کی عنایات بہت زیادہ ہیں۔جو حد تواتر تک پہنچ چکی ہیں۔ اسے ایک الگ باب میں ذکر کریں گے۔جیسا کہ ہم نے عرض کیا کہ سید موصوف کے والد گرامی شروع میں معاشی کمزوری کی وجہ سے تحصیل علم کے مخالف تھے اور کہا تھا میں تمہارے اخراجات کاذمہ دار نہیں ہوں۔ پھر آپ کو تحصیل علم کے لئے رخصت کیا تھا ۔ آپ نے اصفہان میں مدرسہ صدر میں داخلہ لیا وہاں پر آپ کو سخت مشکلات کاسامنا کرنا پڑا ۔ سردیوں میں آپ کے پاس سردی سے بچنے کے لئے نہ کوئی اوڑھنا تھا اور نہ بچھونا۔ اور نہ ہی آپ کے پاس کوئی رقم تھی کہ سردی سے بچنے کے لئے کچھ خرید سکیں۔ اتفاقاً ایک دن آپ کے والد گرامی آپ سے ملنے کے لئے مدیسہ سے اصفہان آئے اور اپنے بیٹے کا یہ دلخراش منظر دیکھا تو فرمایا: میں نے تمہیں نہیں کہاتھا کہ طلبہ بننا بہت سخت ہے ؟ اس سے بہتر تھا کچھ اور پیشہ اختیار کرلیتے اب بتاؤ کون ہے جو تمہاری مدد کرے؟سید کو یہ باتیں بہت گران گزری ۔ اور روبہ قبلہ ہوکر امام زمان علیہ السلام سے مخاطب ہو کر کہنے لگے کہ : اے میرے آقاومولا! میری مدد کیجئے تاکہ کوئی یہ نہ کہہ سکے کہ تمہارا کوئی صاحب نہیں ہے۔ حوزہ علمیہ کے بزرگان نقل کرتے ہیں : دیر نہ ہوئی تھی کہ مدرسہ کے دروازہ کو دستک ہوئی اور کوئی سائل کہتا ہے سید ابوالحسن سے کام ہے۔ سید کو فوراً بلالیتے ہیں اور سید سے فرماتے ہیں یہ پانچ قران لے لو اور کمرے کی الماری میں ایک شمع بھی ہے اسے بھی لے لو اور جلاؤ تاکہ کوئی یہ نہ کہہ سکے کہ تمہارا کوئی صاحب نہیں ہے۔

سید قدس سرہ کی حوزۂ علمیہ نجف اشرف کی طرف ہجرت

سید ابوالحسن   سطحیات تک دینی علوم حاصل کرنے کے بعد مزید اعلیٰ تعلیم کی حصول کے لئے ١۴ ربیع الاوّل ١٣٠٨ ھ ق کو ارض مقدس نجف اشرف کی طرف روانہ ہوگئے۔ بروز منگل ١١ جمادی الاول ١٣٠٨ھ ق کو نجف اشرف میں پہنچ گئے۔ اور ١۴ تاریخ کو مدرسہ صدر میں داخلہ لیا۔

مقامات مقدسہ میں آپ  کے اساتید

آپ نے نجف اشرف میں وارد ہوتے ہی درس خارج میں شرکت کرنا شروع کیا آپ کے اساتیذ کا شمار یہاں کے مایہ ناز علماء اور مجتہدین میں ہوتے تھے۔ یہاں پر مناسب ہے کہ کچھ ذکر آپ کے اساتیذ کابھی ہوجائے تاکہ آپ کی علمی ، فکری اور دینی کردار میں ان اساتید کابھی ذکر ہوجائے جن کے توسط سے آپ نے عروج علمِ دین کی منزلیں طے کیں۔ ان مایہ ناز شخصیتوں کا ذکر درج ذیل ہے۔

١:علّامہ کبیر، شیخ الفقہاء والمجتہدین آیه اللہ العظمیٰ فقیہ اہل البیت  حاج میرزا حبیب اللہ رشتی رضوان اللہ علیہ ، آپ ”شیخ الطائفہ” شیخ مرتضی انصاری ، مجدد مذھب میرزاء شیرازی کے ممتازشاگردوں میں سے تھے۔ آپ فقہ واصول میں منفرد اور مختلف علوم میں حیرت انگیز مہارت اور تجربہ رکھتے تھے۔ آپ زہد وتقوی کے لحاظ سے بلادعرب و عجم میں شہرت عامہ رکھتے تھے ۔ آپ کی مشہور تالیفات میں سے  ١:اجارہ    ٢: اجتماع امرونہی  ٣:الامامه     ۴: بدائع الافکار ۵:التعادل والتراجیح                   ۶:التقریرات شیخ الانصاری    ٧:تقلید الاعلم                ٨:الغصب وغیرہ شامل ہیں۔ آپ کی وفات ١٣١٢ھ ق میں ثبت ہوئی ہے۔

٢:شیخ الفقہاء والمجتہدین ، فقیہ اہل بیت ، آیه اللہ العظمیٰ آخوند مُلّا محمد کاظم خراسانی رحمه اللہ علیہ ، آپ جامع معقول ومنقول ہیں آپ حاوی فروع واصول ہیں ۔ آپ برجستہ شیعہ اکابرین میں سے ہیں معظم لہ شیخ مرتضیٰ انصاری اور میرزا شیرازی رحمه اللہ علیہ کے ممتاز شاگردوں میں سے ہیں۔ آپ کادرس خارج نجف کی تاریخ میں عظیم ترین اجتماعات میں شمار ہوتا ہے۔ جسمیں ڈیڑھ ہزار طلبہ اور علماء شرکت فرماتے تھے۔آپ کی آواز پورے عالم میں سنی جاتی تھی ۔ آپ تمام شیعوں کے متفقہ مرجع دینی اور مرجع تقلید تھے آپ ١٣٢٩ھ ق کو مسمومیت کی وجہ سے درجۂ شہادت پر فائز ہوئے۔

٣: سید العلماء والمجتہدین آیه اللہ العظمیٰ السید محمد کاظم یزدی رحمه اللہ علیہ، ”صاحب عروه الوثقی” اس عظیم کتاب کی اب تک ڈیڑھ سو کے لگ بھگ شرح لکھی جاچکی ہے۔ جسمیں مستمسک العروه آیه اللہ سید محسن الحکیم  ، مدارک العروه شیخ یوسف حائری  بہت معروف ہیں ۔

۴: شیخ الفقہاء والمجتہدین والمجاھدین آیه اللہ العظمیٰ میرزا محمد تقی شیرازی آپ ” میرزاء ثانی ” کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ نے حکومت برطانیہ کے سامراجی اور استعماری طاقت کے خلاف بڑی جدوجہد کی۔ علماء و اکابرین عراق آپ کی بڑی عزّت کرتے تھے۔ آپ کے والد گرامی اپنے زمانے کے عرفاء میں شمار ہوتے تھے۔ اور شیراز میں آپ کا خاندان بہت ہی مشہور خاندان شمار کیا جاتا ہے۔ آپ سید ابوالحسن اصفہانی   کے مخلص اور ہمدرد استادوں میں سے ایک ہیں۔ آپ کی وفات ۶۵ سال کی عمر میں ١٣٣٨ھ ق کو ہوئی۔

۵: شیخ الفقہاء والمجتہدین علامہ کبیر اٰیه اللہ العظمیٰ حاج ملا محمد جواد شیرازی الاصل             و اصفہانی المولد اور نجفی المسکن، آپ ”شریعت اصفہانی” کے حوالے سے بہت مشہور ہیں ۔ آپ کی بہت سی تالیفات ہیں ۔ جن میں درج ذیل کتابیں  ١:اصالهالصحه    ٢:افاضه القدیر                ٣:قاعدہ صدور در حکمت

۴:قاعدۂ طہارت                       ۵:اعلام الاعلام بہ مولود خیرالانام          ۶:ابافه المختار وغیرہ ہیں۔ آپ کی وفات١٣٣٩ھ ق میں ہوئی۔

 

سید قدس سرہ کا علمی مقام و مرتبہ:

سید ابوالحسن اصفہانی   اگرچہ حوزہ علمیہ نجف اشرف کے مذکورہ آیات عظام اور مجتہدین کے شاگرد تھے ۔ مگر مقدمات اور سطحیات کا آپ خود درس دیا کرتے تھے ۔ اور ایک لحاظ سے خود حوزۂ علمیہ کے برجستہ استادوں میں سے تھے ۔ آپ نے اپنے اساتیذ سے اجازت نامہ لینے کے بعد ایک زمانہ ایسا آیا کہ آپ خود درس خارج دینے لگے ۔ یہاں تک کہ آپ کا درس خارج اتنا مشہور ہوا کہ میرزاء  نائنی   اور آیه اللہ عراقی  کے دروس پر مقدم ہونے لگا ۔ اور آپ میرزاء  نائنی   کے بعد دنیائے تشیع میں مرجع اعلیٰ کے عہدہ پر فائز ہوئے ۔ شیعوں کے مرجع تقلید اور رہبری آپ کے مقدس ہاتھوں میں آگئی ۔ اسی ضمن میں آپ کی عظیم شخصیت آج بھی شیعوں کے لئے عظیم سرمایہ ہے۔

سید قدس سرہ کی مکمل مرجعیت اور حوزۂ علمیہ نجف اشرف کی ریاست:

سید ابوالحسن اصفہانی   کی مکمل مرجعیت ، علماء اور مجتہدین کے قول کے مطابق تاریخ علماء امامیہ میں ضرب المثل کی حیثیت رکھتی ہے۔ آیه اللہ شہید باقر الصدر رحمه اللہ علیہ اس ضمن میں فرماتے ہیں ” وفی الحقیقه ان وجودھذا الرجل العظیم لایزال راسخاً علی الرغم من حذہ السنین وان زعامتہ العلیا الروحیه لایزال مضرب المثل بھا تمیزت بہ من خصال وصفات فتغمد اللہ ھذا الامام الھمام بعظیم رحمتہ وحشرہ مع اجدادہ الظاہرین…الی آخر”۔

در واقع آیه اللہ العظمیٰ اخوند ملا محمد کاظم خراسانی   ١٣٢٩ھ ق میں آپ کی وفات کے بعد مرجعیت کی نوبت مکمل طور پر میرزاء شیرازی دوم علامہ حاج شیخ محمد تقی کے پاس آگئی ۔ آپ نے سید ابوالحسن اصفہانی   کو اپنا قائم مقام بنایا۔ اپنے مسائل احتیاظی کو سید  کی طرف ارجاع دیتے تھے۔ سید رحمه اللہ علیہ کی مرجعیت اس وقت مکمل طور پر مسلم ہوچکی تھی ، جب میرزاء شیرازی کی وفات کے بعد شیخ احمد کاشف الغطاء مرجع ہوئے۔ آپ کی وفات کے بعد میرزاء نائنی اورجب شیخ عبدالکریم حائری ١٣۵۵ ھق میں رحلت فرماگئے تو اس کے بعد آپ واحد مرجع تقلید جہان تشیع ہوئے یہ سلسلہ دس (١٠)سال تک جاری رہا۔

نجف اشرف میں آپ کا درسی سلسلہ:

جیسا کہ پہلے ذکر ہو چکا کہ سید کادرسی سلسلہ اس زمانہ میں جاری تھا۔ جب آپ خود درس خارج میں مشغول تھے خاص طور پر آپ درس معالم الاصول نجف اشرف کی مساجد اور مدارس وغیرہ میں دیا کرتے تھے۔ لیکن جب آپ نے درس خارج دینا شروع کیا تو آپ کا درس نجف اشرف کے برجستہ اور ممتاز درسوں میں شمار ہونے لگا ۔ یہاں تک کہ آپ کے دروس کو اپنے زمانے کے دوسری شخصیات کے دروس پر ترجیح دیئے جانے لگا ۔ آیه اللہ حاج شیخ محمد رضا جرقوئی نقل کرتے ہیں کہ تمام علماء اصفہان ، قم اور نجف کو درک کیا لیکن سب سے افقہ سید ابوالحسن اصفہانی   کا درس تھا۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

آپ قدس سرہ کے شاگردوں کاتذکرہ:

اگر ہم واقع بینی سے دیکھیں گے تو یہ بات واضح ہو جائے گی کہ : اکثر فقہاء اور مجتہدین سید موصوف کے شاگردوں میں سے ہیں ۔ بہ الفاظ دیگر سید کے شاگرد اکثراً درجۂ اجتہاد پر فائز ہوئے ہیں۔ اور آپ کے سفرۂ درس سے واقعاً فیضیاب ہوئے ہیں ۔ ان میں سے بعض شاگردوں کاذکر ہم یہاں کریں گے۔

١: آیه اللہ میرزا احمد بن محمد حسن بن میرزائے آشتیانی، آپ ١٣٠٠ھق میں تہران میں متولد ہوئے ۔ آپ تقریباً دس سال تک نجف اشرف میں سید قدس سرہ ، میرزائے نائنی   سے فقہ اور اصول کی تعلیم حاصل کرتے رہے آپ کی تصانیف بہت زیادہ ہیں ۔ خاص طور پر فقہ، اصول، تفسیر وغیرہ پر آپ نجف اشرف کے بر جستہ افراد میں سے تھا۔

٢: آیه اللہ میرزا فاقر آشتیانی،آپ ١٣٢٣ھ ق میں تہران میں متولد ہوئے ۔ پھر ١٣۴٠ھ ق کو نجف اشرف کی طرف تلاش علم کی خاطر ہجرت فرمایا۔ آپ نے سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی  ، آیه اللہ عراقی اور میرزا ابوالحسن مشکینی وغیرہ سے کسب فیض کیا ۔ آپ کی تالیفات  فقہ اور اصول میں مشہور ہیں۔

٣: آیه اللہ میرزا مہدی آشتیانی آپ نجف اشرف کے ممتاز اساتید میں شمار ہوتے ہیں ۔ آپ درس فقہ، اصول ، فلسفہ ، منطق وغیرہ میں بہت مشہور ہیں۔ آپ نے میرزاء نائنی   ، سید ابولحسن اصفہانی   ، سید محمد فیروز آبادی، آقا ضیاء الدین عراقی وغیرہ سے استفادہ فرمایا ۔ آپ کی وفات ١٣٧٢ھ ق کو ہوئی۔

۴: آیه اللہ ابوتراب ، آپ ویسے تو ” آل آقا” کے نام سے مشہور ہیں ۔ آپ نے سید موصوف ، میرزاء نائنی اور آقا ضیاء الدین عراقی رحمه اللہ علیہم سے کسب فیض کیا ۔ آپ کی وفات ١٣٩٧ھ ق میں ہوئی۔

۵: آیه اللہ محمد طاہر ابن شیخ عبدالحمید بن عیسیٰ، آپ ” آل شبیر” کے نام سے بہت ہی مشہور تھے۔ آپ نجف اشرف کے بزرگان میں سے تھے۔ آپ نے بہت سی کتابیں تحریر کیں۔ آپ نے سید رحمه اللہ علیہ اور آقا ضیاء الدین عراقی سے کسب فیض کیا ۔ آپ کی ولادت ١٣١٩ھق اور آپ کی وفات ١٣٩٧ھ ق میں ہوئی ۔

۶: آیه اللہ آل طیب سید کاظم ابن سید مہدی تستری، آپ ١٣٣٩ھق کو شوستر میں پیدا ہوئے ۔ آپ نے سید موصوف ، شیخ کاظم شیرازی، سید محمد حجت ، محمد تقی خوانساری وغیرہ سے دینی علوم حاصل کیا۔

٧: آیه اللہ آل یاسین ۔ شیخ مرتضیٰ ابن شیخ عبدالحسین آل یٰسین ، آپ حوزہ علمیہ کے ممتاز شخصیات میں شمار ہوتے ہیں۔ آپ نے سید موصوف ، میرزاء نائنی ، آقای عراقی، وغیرہ سے کسب علم ومعرفت کیا اور اجتہاد کے درجہ پر فائز ہوگئے۔

٨:آیه اللہ آملی شیخ محمد تقی ابن شیخ محمد آملی ، آپ بھی نجف اشرف کے علماء اور اکابرین میں شامل ہیں۔ آپ محقق ، اصولی، فقہی اورجامع معقول ومنقول وغیرہ تھے۔ آپ ١٣٠۴ھق کو تہران میں پیدا ہوئے ۔١٣٣٩ھق کونجف اشرف کی طرف ہجرت فرمائی اور چودہ سال تک سید موصوف، میرزاء نائنی، اور آقای عراقی کی شاگردگی اختیار کی ، اور آخر میں درجہ ٔ اجتہاد پر فائز ہوگئے ۔ آپ نے بہت سی تالیفات بطور یادگار چھوڑے ہیں۔

٩: آیه اللہ سید محمد باقر ابن سید میر عبدالباقی آپ آیه اللہ الٰہی کے نام سے مشہور ہیں۔ آپ سید موصوف اور میرزاء  نائنی، آقای ضیاء الدین عراقی ، آقای ابولحسن مشکینی اور آیه اللہ شیخ محمد کاظم شیرازی کے ہردلعزیز شاگردوں میں سے تھے۔ آپ نے قم اور مشہد سے آقای فقیہ حائری ، آیه اللہ حسین قمی اور آیه اللہ کفائی سے بھی استفادہ فرمایا۔

١٠: آیه اللہ علی اصغر ابرسچی شاہرودی ١٣٢۴ھق کو شاہرود میں پیدا ہوئے۔ آپ نے ابتدائی تعلیم مشہد مقدس سے میں حاصل کی پھر قم چلے گئے ۔ وہاں دو سال رہنے کے بعد نجف اشرف کی طرف ہجرت فرمائی پھر وہاں سے سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی، اور سید محمود شاھرودی سے کسب فیض کیا۔

١١: آیه اللہ ابوترابی، آپ قزوین میں ١٣٠٩ھق میں پیدا ہوئے ۔آپ بھی دوسرے علماء کی طرح سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی   اور محقق عراقی سے کسب علم معرفت کرنے والوں میں سے ہیں۔ آپ نے ١٣٣٩ھق میں اس دنیا کو خیر باد کہا۔

١٢: آیه اللہ سید شمس الدین ، معظم لہ ١٣٢۴ھ ق کو تہران شہر میں آنکھ کھولی۔ آپ نے ابتدائی تعلیم قزوین ہی میں حاصل کی پھر حوزۂ علمیہ قم پھر نجف اشرف چلے گئے ۔ وہاں پر سید موصوف، میرزاء نائنی آیه اللہ حائری، آقای حجت اور آقای خوانساری وغیرہ سے کسب نور معرفت کیا۔

١٣:آیه اللہ شیخ عبدالٰہی اراکی، آپ ١٣٠٨ھق کو اراک میں پیدا ہوئے ۔ آپ نے درج ذیل آیات عظام سے دینی علوم حاصل کئے۔شریعت اصفہانی ، محقق عراقی، میرزاء نائنی ، شیخ علی قوچانی ، شیخ مہدی مازندرانیسید وغیرہ۔ آپ نے ٢٩ سال میں وفات پائی۔

١۴: آیه اللہ میرزا آقا اصطہبانانی، آپ نجف اشرف کے بزرگان میں سے تھے ۔ آپ دینی علوم کو دوسرے علماء کے علاوہ سید موصوف سے بھی حاصل کرتے تھے۔ پھر اجتہاد کے درجے پر فائز ہوگئے۔

١۵: آیه اللہ شیخ عباس علی اسلامی آپ نے مشہد مقدس میں آیه اللہ میرزا مھدی اصفہانی،  آقای کفائی ، حاج آقا حسین قمی ، حاج شیخ مرتضیٰ آشتیانی سے دینی علوم حاصل کئے۔ پھر مذید دینی علوم کے لئے نجف اشرف کی طرف ہجرت فرمائی ۔ وہاں پر آپ خاص طور پر سید موصوف سے کسب فیض کیاکرتے تھے۔

١۶: آیه اللہ شیخ محمد علی اشرفی، آپ نے مشہد سے دینی علوم کا سلسلہ شروع کیا ۔ پھر نجف اشرف کی طرف ہجرت فرمائی وہاں پر سید موصوف ، میرزاء نائنی، آقای عراقی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔

١٧: آیه اللہ سید احمد اشگوری، آپ حوزۂ علمیہ نجف اشرف کے برجستہ علماء میں سے تھے۔

معظم لہ ١٣٢۵ھق کو نجف اشرف میں متولد ہوئے۔آپ نے فقہ واصول سید موصوف سے حاصل کئے۔

١٨: آیه اللہ سید مہدی اشگوری، آپ تہران کے بزرگان میں سے تھے۔ اعلیٰ تعلیم کے لئے نجف چلے گئے ۔ وہاں پر سید ابوالحسن اصفہانی ، محقق کمپانی، شیخ کاظم شیرازی اور آیه اللہ خوئی سے کسب فیض کیا۔

١٩: آیه اللہ شیخ محمد حسین اصطہبانائی آپ سامراء میں حرم مطہر امام حسن عسکری علیہ السلام میں نماز پڑھا تے تھے ۔ آپ نے نجف اشرف میں سید موصوف اور ابوالحسن مشکینی سے دینی علوم حاصل کئے۔ ١٣٩١ھق کو صدام کی حکومت نے عراق سے آپ کو بیدخل کردیا ۔ تو آپ حوزۂ علمیہ قم میں تشریف لائے اور وہاں پر آیه اللہ مرعشی نجفی سے بھی دینی علوم حاصل کئے۔

٢٠: آیه اللہ ابوالقاسم اصفہانی  ، آپ قم کے بزرگ علماء میں شامل ہیں آپ اصفہان میں ١٣٠۴ھق کو متولد ہوئے ۔ قم میں آپ نے آیه اللہ سید محمد باقر اور سید مہدی درچہ ای ، آخوند ملا عبدالکریم گزی ، آخوند ملا محمد کاشی اور میرزا محمد صادق اصفہانی سے کسب فیض کیا پھر نجف اشرف چلے گئے ۔ وہاں پر سید موصوف ، سید محمد فیروز آبادی،سید محسن کوہ کمری سے اعلیٰ دینی تعلیم حاصل کئے۔

٢١: آیه اللہ شہید سید حسن اصفہانی ابن سید ابوالحسن اصفہانی ابن محمد بن عبدالحمید اصفہانی رحمه اللہ علیہم ، آپ نجف اشرف میں ١٣٢٢ھق کو متولد ہوئے۔ اور ١٣۴٩ھق کو نماز مغربین کے دوران شیخ علی اردھانی کے ہاتھوں شہید ہوئے ۔ آپ بھی اپنے والد بزرگوار سے کسب فیض کرنے والوں میں شامل ہیں۔

٢٢: آیه اللہ سید علی ابن صاحب ترجمہ سید  ابوالحسن ابن محمد بن عبدالحمید اصفہانی، آپ نے نجف اشرف میں اپنے والد گرامی کے حضور مبارک وپرفیض میں دینی علوم حاصل کئے مذید اینکہ آیه اللہ میرزاء نائنی اور آقای ضیاء عراقی سے بھی بہرہ مند ہوئے۔ پھر آپ مشہد مقدس میں تشریف لائے یہاں پر آپ کے کافی احترام تھے۔ اور حرم مطہر امام رضا علیہ السلام میں امام جماعت تھے اور یہیں پر آپ رحلت فرما گئے۔ اور حرم مقدس میں دفن ہوئے۔

٢٣: آیه اللہ سید محمد حسین ابن سید علی بروجنی ، آپ نجف اشرف کے بزرگان میں سے تھے۔ آپ ایران کے شہر چہار محل بختیاری میں ١٣٠١ھق کو متولد ہوئے اور ١٣٢۵ھق کو نجف اشرف ہجرت کرگئے ۔ وہیں پر اعلیٰ دینی تعلیم سید موصوف، میرزاء نائنی، شریعت اصفہانی، خصوصاً میرزاء محمد تقی شیرازی سے حاصل کی۔

٢۴:آیه اللہ شیخ محمد حسین ابن شیخ سلیمان اعلمی ، آپ نے حوزۂ علمیہ نجف اشرف میں سید موصوف ، محقق عراقی، میرزاء نائنی اور فاضل کمپانی سے اعلیٰ دینی تعلیم حاصل کی ۔ آپ کی بہت ساری تالیفات بھی ہیں۔

٢۵: آیه اللہ سید محمود ابن سید ابوالفضل امام جمعہ حفید آیه اللہ سید محمد مجتہد طارمی مؤلف ” انیس الفقہائ” ، آپ حوزۂ علمیہ نجف اشرف کے علماء برجستہ میں سے تھے۔ آپ نے سطحیات تک زنجان میں حاصل کی پھر نجف اشرف چلے گئے وہاں پر سید موصوف ، سید کاظم طباطبائی، صاحب عروه ، شریعت اصفہانی ، میرزاء نائنی، محقق کمپانی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔

٢۶:آیه اللہ العظمیٰ الشیخ محمد تقی بہجت دام ظلّہ العالی،آپ حوزۂ علمیہ قم کے برجستہ علماء کرام میں سے ہیں، آپ موجودہ زمانے کی عظیم عرفانی شخصیّت ہیں، آپ مجتہد مسلّم ،اور درجۂ اوّل کے علماء میں سے ہیں۔سیرو سلوک پر آپ کی مختلف کتابیں چھپ چکی ہیں ، اور دنیا بھر سے تشنگان علم عرفان واخلاق اپنی علمی پیاس بجھانے کے لئے آپ کی بارگاہ میں حاضر ہوتے ہیں اور آپ سے کسب فیض کرکے ہر جگہ اخلاق کی روشنی پھیلاتے ہیں ، حوزۂ علمیہ قم میں سیر وسلوک کے حوالے سے آپ مشہور ومعروف ہیں اور آپ کی شخصیت سے دنیا واقف ہے۔ آپ بھی حضرت سید ابوالحسن اصفہانی  کے برجستہ اور قریبی شاگردوں میں سے ہیں، ہماری دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ آپ کو طول عمر عنایت کرے اور جہان تشیع کی خدمت کرنے اور علوم محمد وآل محمد کی ترویج کرنے کی زیادہ سے زیادہ توفیق ہو ۔آمین

٢٧: آیه اللہ سید محمد رضا ابن سید فخر الدین موسوی بروجردی، آپ مشہد مقدس کے برجستہ علماء میں شمار ہوتے ہیں ۔ معظم لہ سلسلہ سادات نوربخش سے ہیں ۔ آپ نے درس خارج فقہ و اصول سید قدس سرہ سے حاصل کیا۔ اس کے علاوہ آیه اللہ میرزاء نائنی ، محقق عراقی، آیه اللہ حسین قمی اور میرزا محمد آقا زادہ کفائی سے درس حاصل فرمایا۔ اور جامع مسجد گوہر شاد میں نماز جماعت پڑھاتے تھے۔ آپ کے فرزند آیه اللہ سید مجتبیٰ علم الھدی بروجردی بھی مشہد مقدس کے مایہ ناز علماء میں شمار ہوتے ہیں ۔ آپ زھد وتقویٰ کے لحاظ سے اپنی مثال آپ ہیں ۔ معظم لہ کا علمی ، فکری اور دینی مقام  مترجم نے بارہ سالوں میں نزدیک سے مشاہدہ کیا ہے ۔ خدا تعالی انہیں طول عمر عنایت فرمائے ۔آمین

٢٨:آیه اللہ شیخ محمد کاظم ابن آخوند ملّا اکبر مھدوی دامغانی مشہد مقدس کے جلیل القدر علماء میں سے ہیں ۔ آپ نے درس خارج مشہد مقدس ہی میں حاصل کیا ہے ۔ مختصر مدت کے لئے نجف چلے گئے ۔ وہاں پر سید قدس سرہ کے سفرۂ درس پر شرکت فرمائی ۔ میرزاء نائنی اور آیه اللہ کفائی سے اجتہاد کی سند حاصل کی۔

٢٩: آیه اللہ العظمیٰ سید عبدالاعلیٰ ابن سید علی رضا سبزواری ، آپ نجف اشرف کے مایہ ناز علماء میں شمار ہوتے ہیں ۔ آپ جامع معقول ومنقول ، حاوی فروع واصول، عالم عامل،فاضل، فقیہ، اصولی، اور مفسّر ہیں۔ معظم لہ ١٣٢٨ھق کو سبزوار میں متولد ہوئے۔ مقدمات اور سطحیات سبزوار اور مشہد مقدس میں حاصل کیں۔ اعلیٰ تعلیم کے لئے نجف اشرف چلے گئے ۔ وہاں مایہ ناز علماء اور مجتہدین سے درس خارج حاصل کیا۔ خاص طور پر سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی اورمحقق عراقی سے کسب فیض کیا۔

٣٠: آیه اللہ العظمیٰ سید محمود ابن سید علی حسین شاھرودی، آپ نجف اشرف کے برجستہ علماء اور فقہاء میں سے ہیں۔ آپ عالم ، فاضل، عامل، فقیہ، اصولی، مدقق، اور محقق ہیں آپ نے سید موصوف، میرزاء نائنی اور آخوند خراسانی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔

٣١:آیه اللہ شہید ابوالحسن ابن میرزا محمد ابراہیم موسوی شمس آبادی، آپ اصفہان کے چیدہ علماء اور بزرگان میں سے ہیں۔ خدا کی راہ میں اپنی جان کو قربان کردی ۔ آپ نے نجف اشرف میں میرزاء نائنی، مشکینی، عراقی، وغیرہ سے سنداجتہاد حاصل کی۔ ١٣٩۶ھق کو اصفہان میں نامعلوم افراد کے ہاتھوں شہید ہوگئے۔

٣٢: آیه اللہ آقا نجفی ابن سید محمد بن میرزا مھدی ابن میرزا صالح ابن سید محمد حسین حائری موسوی شہرستانی، معظم لہ ١٣٢٩ھق کو نجف اشرف میں پیداہوئے۔ آپ نے اعلیٰ دینی تعلیم میرزاء نائنی ، آیه…کمپانی ، آیه اللہ خوئی اور سید قدس سرہ سے حاصل کرلی۔

٣٣:آیه اللہ سید احمد شہرستانی ، معظم لہ ١٣٢۴ھق کو نجف اشرف میں متولد ہوئے۔۔ درس خارج آیه اللہ کمپانی، میرزاء نائنی، مشکینی، عراقی اور سید قدس سرہ سے حاصل کئے۔

٣۴:آیه اللہ العظمیٰ سید عبداللہ شیرازی، آپ فقیہ عالم ، فاضل ، عامل ، اصولی اور محقق ہیں۔ معظم لہ ١٣٠٩ ھ ق کو شیراز میں متولد ہوئے۔ مقدمات اور سطحیات تک شیراز ہی میں حاصل کیں۔ پھر اعلیٰ تعلیم کے لئے نجف اشرف چلے گئے۔ وہاں پر سید قدس سرہ  ،  میرزاء نائنی ، محقق عراقی سے کسب فیض کیا۔ فقہ و اصول پر آپ نے نفیس کتابیں تالیف کی ہیں۔

٣۵: آیه اللہ سید ھبه اللہ محمد علی ابن حسین حسینی شہرستانی، آپ علماء امامیہ شہرستان کے بزرگان میں سے ہیں۔ آپ نے علامہ نائنی، علامہ عراقی، اور سید قدس سرہ سے تعلیم حاصل کی۔

٣۶: آیه اللہ العظمیٰ سید صدر الدین ابن سید اسماعیل صدر موسوی عاملی، آپ علماء امامیہ کے عظیم شخصیات میں سے ہیں۔آپ مختلف علوم مثلاً علم معقول ، علم منقول، علم فروع واصول پر دسترس رکھتے تھے ۔ معظم لہ ١٣٩٩ھ ق کو کاظمین عراق کے ایک گاؤں میں پیدا ہوئے ۔ حوزۂ علمیہ نجف اشرف میں علامہ یزدی ، آخوند خراسانی، شیخ محمد حرز الدین اور سید قدس سرہ سے کسب فیض کیا۔

٣٧: آیه اللہ العظمیٰ علّامہ سید محمد حسین طباطبائی ، آپ شیعہ علماء کے بزرگ شخصیات میں سے ہیں۔ آپ فقہ و اصول پر دسترس رکھتے تھے ۔ خصوصاً فلسفہ میں آپ نہایت عظیم استاد سمجھے جاتے تھے۔ آپ اپنے زمانے میں عظیم فلسفی، عارف کامل اور صاحب کرامت انسان تھے۔ آپ کے زھد وتقویٰ کا پوری دنیا معترف ہے۔ آپ نے بڑی بڑی کتابیں تالیف فرمائی ہیں۔ مگر سب سے زیادہ آپ کی ایک کتاب ”تفسیر المیزان” پوری دنیا میں مشہور ومعروف ہے۔ تفسیر المیزان کو تفاسیر کا بادشاہ کہا جاتا ہے۔ آپ ١٣٢١ھق کو متولد ہوئے ۔ حوزۂ علمیہ نجف اشرف میں میرزاء نائنی ، علامہ کمپانی، سید علی قاضی اور سید قدس سرہ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی۔ آپ نے قم المقدس میں وفات پائی اور جوار حضرت معصومہ علیہا السلام میں مدفون ہیں۔ روحش شاد ورحمت خدا براوباد۔

٣٨: آیه اللہ شیخ محمد حسین ابن شیخ محمد جواد بن عاملی ، آپ تہران کے بزرگ شخصیات میں سے ہیں ۔ معظم لہ ١٣٢٣ھق کو نجف اشرف میں متولد ہوئے ۔ آپ نے سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی اور محقق عراقی سے کسب فیض کیا۔

٣٩:آیه اللہ سید علی ابن سید محمد حسین نجفی علم الٰہی ، آپ کربلائے معلیٰ میں متولد ہوئے۔ آپ نے سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی، محقق عراقی اور سید محمد فیروز آبادی سے کسب فیض کیا۔

۴٠: آیه اللہ شیخ محمد ابن محمد حسین غروی ، آپ بروجرد کی عظیم شخصیات میں شمار ہوتے ہیں ۔ آپ نے بھی نجف اشرف میں سید موصوف اور دوسرے علماء سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی۔

۴١: آیه اللہ شیخ محمد حسین ابن ملا علی غروی، آپ نے بھی نجف اشرف میں سید موصوف ، علامہ کمپانی، میرزاء نائنی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔

۴٢: آیه اللہ شیخ ذبیح اللہ قوچانی، آپ مشہد مقدس کے بڑے علماء میں سے تھے۔ آپ ١٣٢٩ھق کو خیر آباد قوچان میں پیدا ہوئے۔ مشہد مقدس سے مقدمات اور سطحیات ختم کرنے کے بعد نجف چلے گئے۔ وہاں پر اعلیٰ تعلیم سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی، علامہ عراقی اور سید محمود فقیہ سبزواری سے حاصل کیں۔

۴٣:آیه اللہ شیخ محمد حسین کلباسی، آپ حوزۂ علمیہ قم کے بزرگان میں سے ہیں۔ معظم لہ ١٣٢٣ھق کو اصفہان میں متولد ہوئے۔ آپ نے اعلیٰ دینی تعلیم سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی،محقق عراقی اور شیخ عبدالحسین سے حاصل کی۔

۴۴:آیه اللہ العظمیٰ شیخ محمد حسین کوہستانی، آپ مازندران کے مشہور متقی ، پرہیزگار، علماء میں سے ہیں۔ آپ مختلف علوم میں مہارت رکھتے تھے۔ سیروسلوک کے حوالے سے آپ کو صاحب کرامت مانا جاتاہے۔ آپ کوہستان نامی قریہ میں متولد ہوئے۔ مقدمات سے سطحیات تک مشہد مقدس میں حاصل کی ۔ پھر اعلیٰ تعلیم کے لئے نجف اشرف چلے گئے۔وہاں پر آپ نے سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی اور محقق عراقی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔ آپ کی وفات ١٣٩٢ھق ثبت ہوئی ہے۔

۴۵:آیه اللہ سید محمدابن سید علی مددی، آپ مشہد مقدس کے بزرگان میں سے ہیں۔ معظم لہ ١٣٣٩ھق کو نجف اشرف میں متولد ہوئے ۔ آپ نے ابتداء سے آخر تک علوم دینی وہیں پہ حاصل کئے۔ آپ نے استاد سید قدس سرہ ، میرزاء نائنی، سید محمو د شاھرودی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔

۴۶:آیه اللہ شہید اسداللہ مدنی، آپ ١٣٣١ھق میں متولد ہوئے۔ اعلیٰ تعلیم کے لئے نجف اشرف چلے گئے ۔ وہاں پر آیه اللہ سید ابوالحسن اصفہانی، میرزاء نائنی اور سید محمود شاھرودی سے کسب فیض کیا۔ آپ تبریز کے امام جمعہ اور مجاھد علماء میں شمار ہوتے تھے۔ آخر العمر منافقین کے ہاتھوں محراب عبادت میں شہید ہوگئے۔

۴٧: آیه اللہ شیخ مرتضیٰ ابن شیخ محمد حسین مدرس، آپ ١٣٢١ھق میں متولد ہوئے ۔ آپ قم کے بزرگان میں سے ہیں۔ مقدمات اور سطحیات کے بعد نجف اشرف چلے گئے ۔ اور اعلیٰ دینی علوم کو سید موصوف اور دوسرے آیا ت عظام سے حاصل کیا۔

۴٨:آیه اللہ العظمیٰ سید محمد ابن سید محمد جواد میبدی،آپ کا شمار اہل تشیع کے صف اوّل کے علماء میں ہوتا ہے ۔ آپ مختلف علوم پر دسترس رکھتے ہیں۔ آپ نے سید موصوف ، میرزاء نائنی اور محقق عراقی وغیرہ سے کسب فیض کیا۔

۴٩: آیه اللہ العظمیٰ سید محمد ہادی میلانی، آپ نجف اشرف میں متولد ہوئے۔ آپ مختلف علوم دینی پر مکمل دسترس رکھتے ہیں۔ آپ مشہد مقدس کے مراجع میں شمار ہوتے ہیں۔آپ نے سید قدس سرہ ، محقق عراقی، میرزاء نائنی اور علامہ بلاغی سے دینی علوم حاصل کئے۔

۵٠: آیه اللہسید محمد صادق حسین واقفی یزدی ،آپ شہر یزد کے برجستہ علماء میں شمار ہوتے ہیں موصوف باف نامی شہر میں پیدا ہوئے ۔ ابتدائی تعلیم وہیں پر حاصل کیں ،سطحیات کے بعد اعلیٰ تعلیم کے لئے نجف اشرف تشریف لے گئے وہاں پر آپ نے دوسرے بزرگ علماء کے علاوہ حضرت آیه اللہ سید ابوالحسن اصفہانی  سے کسب علم ومعرفت کیا۔حوزہ علمیہ نجف اشرف سے واپسی پر کرمانشاہ میں امام جماعت کے فرائض انجام دیتے رہے اور ١٣۶٠ھق میں دار فانی کو خیر بادکہتے ہوئے جہان باقی کی طرف کوچ کرگئے۔

 

حضرت سید ابوالحسن اصفہانی  قدس سرہ الشریف کے چند قابل ذکر برجستہ شاگردوں کا تذکرہ

جیسا کہ شمع شبستان حوزۂ علمیہ نجف اشرف میں تاریخ تشیع کے عظیم مرد فقیہ اور عارف دوران سید ابوالحسن اصفہانی   جیسی جلیل القدر شخصیت نے جہاں پر بڑے عزم بالجزم کے ساتھ فکری، دینی اور سیاسی حوالے سے خدمات انجام دیں وہاں پر آپ نے سفرۂ درس پر علوم محمد وآل محمد علیہم السلام کے شمع کے پروانوں کو علمی طور پر بھی سیراب فرمایا۔ اس کا ایک مختصر سا نمونہ ہم نے یہاں پر آپ کی خدمت میں پیش کیا ۔ ویسے تو آپ کے شاگردوں کی تعداد ہزاروں کے لگ بھگ ہیں لیکن ہم نے یہاں پر مختصر طور پر ان چند شخصیات کا ذکر کیاہے جو بعد میں مسلم مجتہد بنے۔ اور اپنے اپنے علاقے میں علوم محمد وآل محمد کی خدمت کرنے کی وجہ سے عظیم المرتبت شخصیات میں شمار ہوئے۔ مؤلف نے تقریباً ڈیڑھ سو سے زائد شخصیات کا ذکر کیا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ قارئین سے معذرت بھی کی ہے ۔ جبکہ بندہ ناچیز نے خلاصہ کرتے ہوئے صرف پچاس شاگردوں کا ذکر کیا ہے۔ امید ہے کہ انشاء اللہ قارئین کرام اپنے دامن عفو میں مجھے بھی جگہ دیں گے۔ البتہ توفیق خداوندی شامل حال رہی تو کسی اور موقع پر تفصیلاً ذکر کریں گے انشاء اللہ۔

بحث ہو رہی تھی سید قدس سرہ کے درس خارج کے حوالہ سے ۔ آپ جب بھی درس دینے کے لئے تشریف لاتے  تھے تو حوزۂ علمیہ کے چھوٹے بڑے سب آپ کی تعظیم کے لئے کھڑے ہو جاتے تھے۔ آپ کے درس کا ایک خاص انداز ہوا کرتا تھا جو نہایت جذّاب اور دلنشین تھا۔ یہی وجہ ہے کہ آپ کے سفرۂ درس سے بڑے بڑے آیات عظام وجود میں آئے، آپ کے اخلاق حمیدہ کی بھی ایک دنیا معترف ہے۔ اس ضمن میں عارف کامل حکیم مطلق حضرت آیه اللہ العظمیٰ بہجت دام ظلہ فرماتے ہیں کہ: ایک دفعہ سید رحمه اللہ علیہ کے درس کی دو مہینے تک چھٹی ہوگئی جس کی وجہ سے علماء دوسرے آیات عظام کے دروس میں جانے لگے ۔ جب آپ کے درس کا دوبارہ اعلان ہوا تو تمام علماء آپ کے درس میں شریک ہوئے تو سید موصوف نے فرمایا : مجھے یاد نہیں ہے کہ درس کہاں تک پہنچا تھا۔ سب نے یک زبان ہو کر کہا: بحث ارث سے شروع کریں تو بہتر ہے۔ آپ نے بغیر کسی توقف کے بسم اللہ الرحمن الرحیم پڑھ کر درس دینا شروع کیا، حالانکہ یہ فقہ کی ابحاث میںسخت ترین بحث شمار ہوتی ہے۔ اس کے لئے پہلے مطالعہ کرنا پڑتا ہے مگر مرحوم سید رحمه اللہ علیہ نے شاگردوں کا احترام رکھتے ہوئے درس دیا۔

سید قدس سرہ کی تصانیف اور آثار

سید قدس سرہ کی بہت سی قیمتی اور گرانقدر تصانیف ہیں ۔ آپ کی اہم تصانیف درج ذیل ہیں۔

١: وسیله النجاه : یہ کتاب سید موصوف کی توضیح المسائل سے اخذ شدہ ایک خلاصہ ہے جسکا نام ”ذخیره الصالحین” ہے ۔ حضرت آیه اللہ آقابزرگ تہرانی کے قول کے مطابق یہ کتاب سید موصوف کی توضیح المسائل ہونے کے علاوہ آیه اللہ العظمیٰ سید محمد کاظم یزدی رحمه اللہ علیہ کی کتاب عروه الوثقیٰ پر شرح بھی ہے۔ اس نفیس اثر کا فارسی اور اردو میں بھی ترجمہ ہو چکا ہے۔ ذخیره الصالحین یا وسیله النجاه کا فارسی ترجمہ علامہ سید ابوالقاسم اصفہانی کے توسط سے ہوا ہے  اس کا فارسی نام صراط النجاه ہے۔ وسیله النجاه کا اردو ترجمہ جناب مولانا شیخ سعادت بن منور علی سلطان پوری نے ذریعه النجاه کے نام  سے کیا ہے۔ یہ کتاب ١٣۵۶ھق میں ھندوستان میں چھپ چکی ہے۔

٢: کتاب شریف” عروه الوثقیٰ” مؤ لف سید محمد کاظم یزدی رحمه اللہ علیہ پر شرح

٣: آخوند ملا محمد کاظم خراسانی رحمه اللہ علیہ کی کتاب ”کفایه الاصول” پر شرح

۴: علامہ حلّی  کی کتاب” تبصرہ” پر شرح ۔

۵: صاحب الجواہر رحمه اللہ علیہ کی کتاب ”نجات العباد ” پر شرح

۶: توضیح المسائل یعنی ذخیره الصالحین

٧: رسالۂ عملیہ ” انیس المقلدین”

٨: فقہی مسائل پر مشتمل کتاب ” وسیله النجاه الصغریٰ”

٩: منتخب الرسائل

١٠: مناسک حج

١١: رسالۂ  مصباح الوارثین ، جس میں ارث سے متعلق بحث کی گئی ہے۔ حجه الاسلام غلام رضا بن احمد خوانساری نے اس کی جمع آوری کی ہے۔اس کے علاوہ آپ کے شاگردوں نے بہت سے مطالب جو آپ نے درس میں کہے تھے اکٹھے کئے ہیں۔ آیه اللہ العظمیٰ حاج شیخ محمد تقی   نے مایہ ناز کتاب ” کفایه الاصول” پر دیئے جانے والے آپ کے دروس خارج کو مرتب فرمایا ہے جو” تقریرات سید ابوالحسن اصفہانی” کے نام سے چھپ چکی ہے۔

سید قدس سرہ کی کتاب ” وسیله النجاه” پر شرح لکھنے والوں کی فہرست

١: حضرت آیه اللہ شیخ علی پناہ اشتہاردی قمی نے سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه” پر شرح لکھنے کے علاوہ اور بھی اہم قسم کی کتابیں تحریر فرمائی ہیں۔

٢:آیه اللہ میرزا آقا اصطہبانائی شیرازی نے سید قدس سرہ کی کتاب  ”وسیله النجاه”  پر شرح اور حاشیہ لکھنے کے علاوہ بہت سی دیگر نفیس قسم کی کتابیں تحریر فرمائی ہیں۔

٣: آیه اللہ العظمیٰ شیخ محمد تقی بہجت دام ظلہ (متولد ١٣٣٢ھ ق ) آپ عارف کامل ، مجتہد مسلم اور درجہ اول کے مراجع میں سے ہیں ۔ آپ نے سید قدس سرہ کی کتاب پر حاشیہ لکھنے کے علاوہ آیه اللہ حاج شیخ محمد حسین اصفہانی کمپانی کی مشہور کتاب ”ذخیره العباد” پر بھی شرح لکھی ہے۔ اس وقت آپ کی بہت ساری تالیفات موجود ہیں۔

۴: آیه اللہ العظمیٰ شیخ جواد تبریزی رضوان اللہ علیہ نے آیه اللہ بروجردی ، آیه اللہ عبدالھادی شیرازی اور آیه اللہ سید ابوالقاسم خوئی سے فیض حاصل کیا ۔ معظم لہ نے سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه”  پر حاشیہ لکھا ہے ، اس کے علاوہ اور بھی بہت عمدہ قسم کی کتابیں تحریر فرمائی ہیں۔ جن میں ارشاد الطالب، اسس القضاء والشہادات اور کفایه الاصول پر شرح قابل ذکر ہیں۔

۵: آیه اللہ العظمیٰ شیخ مرتضیٰ ابن شیخ عبدالکریم حائری (متولد١٣٣۴ھق )۔ معظم لہ حضرت امام خمینی رضوان اللہ علیہ کے قریبی شاگردوں میں سے ہیں۔ آپ کو زھدو تقویٰ کا نمونہ بھی کہا جاتا ہے۔ آپ نے مرحوم سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه”  پر شرح لکھی جس کانام ابتغاء الفضیلہ فی شرح تحریر الوسیله” ہے۔

۶: آیه اللہ شیخ محسن حرم پناہی بن مہدی بن الحسن بن الحسین (متولد ١٣۴٧ھق) آپ حوزہ علمیہ قم کے بزرگان میں سے ہیں ۔ معظم لہ نے آیات عظام ، خوانساری ، حجّت ، بروجردی، گلپائگانی اور اراکی وغیرہ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی، معظم لہ نے سید قدس سرہ کی کتاب  ”وسیله النجاه”  پر شرح لکھی ۔  آپ اس کے علاوہ بہت سی تالیفات کے مالک ہیں۔ آپ قائد شہید علّامہ سید عارف حسین الحسینی رحمه اللہ علیہ کے استاد بھی ہیں۔

٧:رہبر کبیر انقلاب اسلامی ایران حضرت امام خمینی رحمه اللہ علیہ (متولد ١٣٢٠ھق) ۔ آپ کی عظمت کے لئے یہی کافی ہے کہ آپ نے تاریخ اسلام میں ایک ایسا انقلاب برپا کیا جس کی بنیاد ” شرق وغرب کا سہارا لئے بغیر اسلام کے روشن اصولوں پر استوار ہے” ۔ آپ نے پوری دنیا کو ہلا کر رکھ دیا۔ آپ ایک طرف شیعوں کے مرجع تقلید تھے تو دوسری طرف دنیائے سیاست کی عظیم شخصیت ، حلم وعلم میں ابوذر وسلمان تھے۔ آپ زھد وتقویٰ کے لحاظ سے عارف کامل تھے ۔ شعر وادب کے لحاظ سے آپ صاحب دیوان ہیں اور ادب کی دنیا میں آپ کا بہت بڑا نام ہے۔ نیز دنیا آپکی شخصیت کے بارے میں انگشت بہ دندان ہے۔ آپ نے بھی سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه”  پر شرح لکھی ہے ۔ اس کے علاوہ بھی بہت سی تصانیف موجود ہیں۔ آپ سے متعلق اس وقت ہزاروں کتابیں مختلف موضوعات پر لکھی جاچکی ہیں اور لکھی جارہی ہیں۔ انشاء اللہ یہ سلسلہ تاظہور حضرت حجّت امام زمان علیہ السلام جاری وساری رہے گا۔

اب اس عظیم انقلاب کے علمبردار حضرت آیه اللہ خامنہ ای حفظہ اللہ ہیں جو اس کی رہبری فرمارہے ہیں ۔ انشاء اللہ یہ عظیم غازی تا ظہور امام علیہ السلام سلامت رہیں۔

٨: حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید ابوالقاسم خوئی رحمه اللہ علیہ (متولد١٣١٧ھق) ۔ آپ صدام کے دور حکومت میں حوزہ علمیہ نجف اشرف کی قیادت فرماتے رہے۔ آپ کی شخصیت تاریخ تشیع میں ہمیشہ زندہ رہے گی۔ آپ نے بھی سید قدس سرہ کی کتاب  ”وسیله النجاه”  پر شرح لکھی ہے ۔ اس کے علاوہ بھی کئی قیمتی کتابیں تحریر فرمائی ہیں ۔ ان میں خاص طور پر ”معجم الرجال” نامی کتاب قابل ذکر ہے۔

٩: آیه اللہ العظمیٰ سید عزّ الدین محمد زنجانی دام ظلہ (متولد١٣٣٨ھق) ۔ آپ مختلف علوم پر دسترس رکھتے ہیں ۔ خاص کر علوم فلسفہ پر آپ کو مہارت تامہ حاصل ہے۔ اور اس علم میں آپ صاحب نظر سمجھے جاتے ہیں۔ آپ نے بھی مختلف موضوعات پر کتابیں لکھی ہیں ۔ خاص کر مرحوم سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه”  پر آپ کی شرح قابل ذکر ہے۔

١٠: حضرت آیه اللہ العظمیٰ شیخ محمد فاضل لنکرانی رحمه اللہ علیہ جو ١٣۵٠ھق کو متولد ہوئے ۔ آپ  حوزہ علمیہ قم میں فقہ اور اصول پر درس خارج دیتے رہے ۔ آپ دنیائے تشیع کے مرجع عالیقدر تھے۔ آپ نے مختلف موضوعات پر کتابیں تحریر فرمائی ہیں ۔ ان میں خاص کر مرحوم سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه”  پر شرح کا ذکر آتا ہے۔

١١: حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید محمدرضا گلپائیگانی رحمه اللہ علیہ جوکہ ١٣١۶ھ ق کو متولد ہوئے ۔ آپ شیعہ مراجع میں سے تھے ۔ آپ نے مختلف موضوعات پر قلم اٹھا یا ہے ۔ خاص طور پر مرحوم سید رحمه اللہ علیہ کی کتاب  ”وسیله النجاه”  پر آپ کی لکھی ہوئی شرح کا نام آتا ہے۔

١٢: حضرت آیه اللہ العظمیٰ شیخ ناصر مکارم الشیرازی دام ظلہ العالی جوکہ ١٣۴٧ ھ ق کو متولد ہوئے ۔ آپ حوزۂ علمیہ قم کے بزرگان میں سے ہیں ۔ اس وقت آپ مرجع تقلید ہیں ۔ آپ نے بھی مرحوم سید قدس سرہ کی کتاب ”وسیله النجاه”  پر شرح کھی ہے۔ اس کے علاوہ بھی آپ کے متعدد دینی کتب تحریر فرمائی ہیں ۔ خاص کر تفسیر نمونہ جوکہ پوری دنیا میں مشہور ہو چکی ہے اور کئی زبانوں میں اس کا ترجمہ بھی ہو چکا ہے ۔ انشاء اللہ آپ کا سایہ باقی رہے۔

١٣:حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید محمّدحسین میبدی رحمه اللہ علیہ جوکہ ١٣٠٢ھق میں متولد ہوئے ۔ آپ نے مرحوم سید قدس سرہ کی کتاب پر شرح کے علاوہ متعدد کتابیں تحریر فرمائی ہیں۔ ان میں ” النص جلی فی مناقب  امام علی  اور منتخب احادیث النبوی کاذکر آتا ہے۔ آپ کی فقہ اور اصول میں بھی تالیفات موجود ہیں۔

١۴: حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید محمد ہادی میلانی رحمه اللہ علیہ جوکہ ١٣١٣ھق میںمتولد ہوئے۔ آپ نے فقہ اور اصول میںکتابیںتحریر فرمائی ہیں اس کے علاوہ کئی دیگر موضوعات پر بھی آپ کی کتابیں موجود ہیں ، خاص طور پر مرحوم سید رحمه اللہ علیہ کی کتاب  ”وسیله النجاه”  پر آپ کا حاشیہ قابل ذکر ہے۔

١۵: آیه اللہ العظمٰی سید شہاب الدّین مرعشی                          ١۶: آیه اللہ سید علی بھبھانی

١٧: آیه اللہ العظمٰی سید حسین حمّامی                     ١٨:آیه اللہ العظمٰی سید ابوالحسن رفیعی

١٩: آیه اللہ العظمٰی سید عبدلاعلیٰ سبزواری                           ٢٠: آیه اللہ العظمٰی سید محمد صادق روحانی         ٢١:آیه اللہ شیخ مسعود سلطانی                                               ٢٢:آیه اللہ شیخ عباس علی شاہرودی

٢٣: آیه اللہ العظمٰی سید محمود شاھرودی                               ٢۴:آیه اللہ العظمٰی سید عبداللہ شیرازی   ٢۵:آیه اللہ شیخ محمد رضا طبسی                                          ٢۶ آیه اللہ العظمیٰ سید علی فانی

٢٧آیه اللہ العظمٰی سید محمد جواد عینکی                               ٢٨: آیه اللہ شیخ احمد مطہری ساوجی

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

سید قدس سرہ کی نسبت ائمہ ھدیٰ صلواه اللہ علیہم اجمعین کی عنایات

 

 

روز ازل سے آج تک خدا کے مقرب بندوں  خاص طور پر حضرت آدم علیہ السلام سے لیکر امام زمان علیہ السلام تک خداوند کرم کا فضل وکرم شامل حال رہا ہے ۔ یہ وہ سچی حقیقت ہے جس سے کوئی صاحب ایمان انکار نہیں کرسکتا۔ اس بات کاشاھد اور ثبوت ہردور میں دیکھا جاسکتا ہے۔

قرآن مجید میں ابراہیم اور آل ابراہیم علیہم السلام پر جو اللہ کا لطف و عنایت ہوئی ہے، مفصل طور پر بیان ہوئی ہے ۔ یہ سلسلہ محمد وآل محمد صلوات اللہ علیہم اجمعین کے حوالے سے جاری وساری ہیں ۔ ان ذوات مقدسہ کے نور سے ظلمت اور تاریکی میں ڈوبے ہوئے ہزاروں انسان راہ ہدایت پر آرہے ہیں اور ہر صاحب ایمان کے لئے شیطان کے شر سے محفوظ رہنے کی عظیم پناہ گاہ ہیں۔ یہ حقیقت سید موصوف کے دور میں بھی قاعدۂ لطف سے بہرہ مند ہوچکے ہیں۔

اس حوالے سے بعض واقعات کا ہم یہاں پر قارئین کی استفادہ کے لئے ذکر کریں گے۔

معظم لہ پر امیر المؤمنین علیہ السلام کا لطف وکرم

علامہ شیخ محمد رضا طبسی کے قول کو جناب آقای بیدھندی معظم لہ کے ترجمہ میں لکھتے ہیںکہ:

مرحوم آیه اللہ طبسی ، مرحوم سید قدس سرہ کے اصحاب استفتاء میں سے ، ایک واسطے کے ساتھ حضرت آیه اللہ الخوئی رحمه اللہ علیہ سے نقل کرتے ہیں کہ :

سید قدس سرہ کے ہم عصر ایک عالم محترم جو سادات گھرانے سے تعلق رکھتا تھا اور نجف کا ایک محترم عالم دین تھا۔ اس کے گھر کا کرایہ کچھ مدت تک دیر ہوگئی ۔ گھر کا مالک ہر روز کہتا کہ اگر کل گھر کا کرایہ نہ لائے تو تمہارا سامان باہر گلی میں پھینک دوں گا۔ یہ مرد عالم پریشان اور افسردہ حالت میں امیر المؤمنین  کے حرم میں مشرّف ہوا ۔ اور آستانۂ قدس طہارت اور اللہ کی قدرت وولایت سے توسّل کیا۔ سخت گرمی کی وجہ سے اس کی آنکھوں پر خواب نے غلبہ کیا اور سوگیا ۔ خواب کے عالم میں اپنے آپ کو امیر المؤ منین علیہ السلام کے سامنے پایا۔ حضرت امیر علیہ السلام نے اس سے پوچھا کہ اتنا گریہ وزاری کیوں کررہے ہو؟ وہ عالم اپنے قصّے کو بیان کرتا ہے۔ امام علیہ السلام نے فرمایا کہ : ہم نے آج تمہیں دیکھا ہے۔ وہ عرض کرتا ہے کہ آقا میں ہر رات کو دوگھنٹے حرم شریف میں مشرف ہونے کی سعادت حاصل کرتا ہوں۔ حضرت علیہ السلام نے فرمایا : نہیں میں تو تمہیں ابھی دیکھ رہا ہوں۔ بہر حال کوئی بات نہیں ہم تمہاری حاجت کو حوالہ کرتے ہیں۔ اور پھرجب وہ بیدار ہو گیا اور بہت تعجب کے ساتھ اپنے آپ سے پوچھنے لگا کہ یہ حوالہ کیا تھا؟ اور حضرت علیہ السلام نے مجھے کس کے حوالہ کیا ہے؟ اسی حیران اور تعجب کے ساتھ واپس گھر پلٹ آتا ہے۔

صبح کو اس کے دروازے پر دستک ہوئی۔ وہ دروازہ کھولتا ہے اور اپنے آپ کو سید اصفہانی   کے سامنے پاتا ہے۔ کیونکہ آقا اصفہانی    کے آنے کا سوچ بھی نہیں سکتا تھا اس لئے بہت پریشان ہو گیا اور جلدی جلدی کہتا ہے کہ آقا تشریف لے آئیں۔ آیه اللہ اصفہانی   فرماتے ہیں کہ ہماری مأموریت یہیں تک تھی اور ایک لفافہ اس کے ہاتھ میں دے کر چلے گئے ۔ جب اس نے لفافہ کھولا تو بہت تعجّب کے ساتھ اس میں دیکھا کہ جتنے پیسے کا گھر کے مالک کا مقروض تھا اتنے ہی اس میں ہیں۔

 

سید قدس سرہ کا امام زمان علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہونا

دانشمند معظم ، حجه الاسلام والمسلمین حاج شیخ محمد رازی دامت بر کاتہ  دانشمند کے گنجینہ میں لکھتے ہیں۔ مرحوم آیت اللہ اصفہانی رحمه اللہ علیہ ان مراجعین میں سے ایک تھے جنہوں نے امام زمانہ عجل اللہ فرجہ سے بغیر کسی واسطے کے ملاقات کی۔ ان کا ایک قصہ یوں ہے کہ:

اس قصے کے لکھنے والے کو علامہ متتبع آقای سید محمد حسن میرجہانی طباطبائی جو صاحب تالیفات مفیدہ ہیں اور آیه اللہ اصفہانی کے اصحاب خاص میں سے تھے۔ انہوں نے نقل کیا ہے کہ: علماء زیدیہ کا ایک عالم سید بحر العلوم یمنی ، امام زمانہ ولی عصر کا انکار کرتا تھا اور علماء اور مراجعین شیعہ کو خط لکھا اور ان  سے امام علیہ السلام کے وجود اور امام کی زندگی کو ثابت کرنے کے لئے دلیل مانگی۔ اور علماء شیعہ روایات اور سنی شیعہ تاریخ کی کتابوںسے دلیل لاتے لیکن وہ قانع نہ ہوتا۔ اور کہتا کہ میں نے بھی ان کتابوں کو دیکھا ہے۔ یہاں تک کہ مرحوم آیه اللہ سید ابوالحسن اصفہانی   کو خط لکھا اور پختہ جواب چاہا۔ سید نے ان کے جواب میں لکھا کہ آپ کے جواب کو مشافھهً دینا چاہتا ہوں  اس لئے آپ نجف اشرف تشریف لائیں۔

آخر کار سید بحر العلوم اپنے بیٹے سید ابراہیم اور کچھ خاص مریدوں کے ساتھ نجف اشرف مشرف ہوئے اور تمام علماء ان سے ملے  ،  من جملہ مرحوم آیه اللہ اصفہانی   بھی ان سے ملے۔ ملنے کے بعد بحر العلوم نے عرض کی میں نے آپ کی دعوت کی وجہ سے یہ سفر کیا ہے۔ اس لئے آیا ہوں کہ جس جواب کا وعدہ آپ نے مجھے دیا تھا اسے پورا کریں۔ تو آیت اللہ اصفہانی   نے فرمایا کہ  آیندہ شب آپ میرے پاس تشریف لائیں۔ اگلی رات کو جب وہ آئے تو کھانا کھانے کے بعد اور اکثر مہمانوں کے چلے جانے اور آدھی رات کا وقت گزر جانے کے بعد اپنے نوکر حسین مشہدی جوکہ چراغ دار      تھے ان کو بلایا اور سید بحر العلوم اور ان کے بیٹے سے کہا کہ چلیں! اور دروازے تک ہم ان کے ساتھ تھے۔ مرحوم اصفہانی   نے ہمیں فرمایا کہ آپ نہ آئیں اور خود بحر العلوم اور ان کے بیٹے کے ساتھ چلے گئے۔ اور ہمیں پتہ نہیں چلا کہ وہ کہاں گئے ہیں ۔ دوسرے دن سید ابراہیم یمنی جوکہ بحر العلوم کے بیٹے تھے ان سے ملاقات کی اور ان سے رات کے ماجرے کے بارے میں پوچھا تو انہوں نے کہا بحمد اللہ ہم مستبصر اور شیعہ اثنا عشری ہوگئے ہیں۔ تو میں نے پو چھا وہ کیسے؟ تو اس نے کہا کہ اس لئے کہ آقای اصفہانی   نے حضرت ولی عصر امام زمان  کو میرے باپ کو دکھا یا۔

جب اس کی تفصیل میں نے پوچھی تو اس نے کہا کہ: ہم جیسے ہی گھر سے باہر آئے ، نہیں جانتے تھے کہ کہا ں جارہے ہیں؟ یہاں تک کہ شہر سے خارج ہوئے اور وادی السلام میں داخل ہوئے اور وادی السلام کے درمیان میں ایک جگہ تھی جسے مقام مہدی  کہتے تھے، تو اس وقت مشہدی حسین سے چراغ لیکر میرے ابو اور میرے ساتھ اس جگہ داخل ہوئے اس وقت آقاے اصفہانی   نے وہاں کے کنویں سے خود پانی نکالا اور تجدید وضو کیا اور ہم اس کے اس عمل پر ہنس رہے تھے، وضو کے بعد مقام کے اندر داخل ہوگئے اور چار رکعت نماز پڑھی اور کچھ کلمات کہے۔ اچانک ہم نے دیکھا کہ وہ جگہ روشن ہو گئی  تو اس نے میرے باپ کو بلایا جب وہ داخل ہو اتو تھوڑی ہی دیر کے بعد اس کے رونے کی آواز بلند ہوئی اور چیخ ماری اور بے ہوش ہوگئے۔ جب میں نزدیک ہو ا تو دیکھا کہ آقای اصفہانی   میرے باپ کے کندھوں کی مالش کررہے ہیں تاکہ ہوش میں آئیں۔ اور جب ہم وہاں سے واپس آئے تو میرے باپ نے کہا کہ میں نے مشافھهً امام عصر حجه ابن الحسن علیہما السلام کی زیارت کی ہے اور اس کے دیکھنے کے بعد مستبصر اور شیعہ اثنا عشری ہو گیا ہوں۔ کچھ دن نجف اشرف ٹہرنے کے بعد یمن پلٹ گئے اور اپنے مریدوں میں سے چار ہزار لوگوں کو شیعہ اثنا عشری کیا۔

ذمہ داری اور توفیق دیدار

حضرت آیه اللہ میر جہانی نے لکھنے والے کے حوالہ سے حکایت کی ہے کہ: حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید اصفہانی قدس سرہ نے ایک دن مجھ سے کہا کہ میں سامراء جاؤں اور کچھ پیسے اپنے ساتھ لے جاؤں اور ان پیسوں کا ایک ثلث میرزاء شیرازی کے مدرسہ کے طالب علموں میں تقسیم کروں اور ایک ثلث کو وہاں کے رہنے والے شیعوں کے درمیان تقسیم کروں اور ایک ثلث کو حرم عسکریین علیہما السلام کے خدّام کے درمیان تقسیم کروں تاکہ ان کے دلوں میں محبّت پیدا ہو۔ کیونکہ زیادہ تر خدّام اھل سنّت سے تعلق رکھتے تھے۔بندۂ حقیر نے جیسے حکم ہوا تھا اسی طریقے سے تمام پیسوں کو سامراء میں تقسیم کردیا۔ جب میں پہلے دو ثلث کو تقسیم کر چکا تھا تو میں تیسرے ثلث کو تقسیم کرنے گیاسید قوام کو بلوایا جو حرم عسکریین علیہما السلام کا متولّی تھا  اور جو ثلث بچ گیا تھا میں نے اسے دیدیا اور اس سے کہا کہ آقا اصفہانی نے مجھے کہا تھا کہ آپ سے کہوں کہ شیعہ زائرین کا خیال رکھیں (آقای اصفہانی خدام کی محبت کو جلب کرنے کے لئے جوکہ اھل سنت تھے اور غالباً شیعہ زائرین کے ساتھ اچھی رفتار سے پیش نہیں آتے تھے یہ پیسہ ان کو دیتے تھے) سید قوام نے ان پیسوں کو لے لیا اور بہت خوش ہوا ۔ اور ہمارے ساتھ بہت اچھی اور صمیمانہ رفتار سے پیش آیا۔ کیونکہ اس کے ذہن میں یہ تھا کہ دوبارہ آقا اصفہانی پیسے بھیجیں گے۔ میں نے اس فرصت کو غنیمت جانا اور سید قوام سے کہا کہ اگر ممکن ہو تو اجازت دیں ہم ایک یا دو راتوں کے لئے حرم عسکریین علیہما السلام اور سرداب میں جاتے ہیں۔ یہاں تک کہ آقای اصفہانی نے جمعہ کی رات کو ہمیں لکھ بھیجا کہ نجف واپس آجائیں۔ پس ہم نے جمعہ کی رات حرم میں گذاری اور صبح کی نماز ادا کرنے کے لئے جب سرداب میں گئے تو دیکھا کہ فضا بہت زیادہ روشن ہے ۔ باوجود اسکے کہ وہاں پر کوئی بجلی نہیں تھی بلکہ شمع جلاکر فضا کو روشن کیا جاتا تھا ۔ جب میں نے غور سے دیکھا تو وہاں پر ایک سید بزرگوار جو سید العراقین اصفہانی کے مشابہ تھے تشہد پڑھنے میں مصروف تھے۔ میں نے یہ خیال کیا کہ وہ نماز پڑھ رہے ہیں اور کیونکہ نماز گزار کو سلام کرنا مکروہ ہے اس لئے میں نے سلام نہیں کیا۔ اور ان کے سامنے سے گزر کر صفّہ کے قریب کھڑا ہوا ۔ نماز اور زیارت آل یاسین کو پڑھنے کے بعد دعائے ندبہ پڑھنے میں مصروف ہو گیا ۔ یہاں تک کہ اس جملہ پر پہنچا ”سخرت لہ البراق وعرجت بروحہ الیٰ سمائک” تو انہوں نے فرمایا” جزاک اللہ خیرا ” ”عرجت بہ” پڑھو ، کیونکہ معصوم  سے ”بروحہ” نقل ہواہے۔ عرجت بہ پڑھو کیونکہ میرے نانا رسول خدا  روح اور جسم دونوں کے ساتھ معراج پر گئے ہیں۔ روح کوئی خاص مرکّب نہیں رکھتی اور کبھی بھی امام پر مقدم نہیں ہوتی۔ اس گفتار سے مجھ پر ایک عجیب قسم کا خوف طاری ہوا اور اس وحشت کی وجہ سے حضور قلب کو باقی نہ رکھ سکا اور لڑ کھڑا تی زبان سے دعا کو تمام کیا اور اٹھ کر اپنے پیچھے دیکھا تو کوئی  بھی وہاں نہ تھا۔ جلدی سے اوپر آیا اور جس کے پاس اپنا جوتا رکھا تھا اس سے پوچھا کہ تم نے کسی ایسے شخص کو نہیں دیکھا؟ تو اس نے کہا میں نے کسی ایسے شخص کو نہیں دیکھا ۔ یہ ایک عنایت تھی جو مرحوم سیّد کی طرف سے میرے شامل حال ہوئی۔

امام زمانہ علیہ السلام سے سیّد کا قریبی تعلق

دانشمند معظم آقای رازی نے بھی آیت اللہ حاج شیخ عبدالنبی عراقی کی حالات کے ذیل میں ذکر کیا ہے کہ: اہل علم اور غیر اہل علم میں سے کچھ قابل اعتماد افراد نے مرحوم (آقای عراقی) سے حکایت کی ہے کہ آپ نے فرمایا: چودہ ١۴ مسائل میری نظر میں مشکل تھے۔ اور چاہتا تھا کہ حضرت ولی العصر  سے سؤال کروں ۔ پس ہر بدھ کو چالیس راتوں تک جیسا کہ نجف اشرف میں معمول تھا مسجد سہلہ مشرف ہوتا رہا  اور درخواست کرتا رہا۔ یہاں تک کہ چالیسویں بدھ کی رات کو مسجد سے باہر آیا تو ایک شخص آیا اور اس نے مجھ سے کہا کہ: کیا حضرت ولی عصر  کو دیکھنا چاہتے ہو؟ تو میں نے اس شخص سے کہا کہ ہاں دیکھنا چاہتا ہوں ، اس نے کہا کہ میرے ساتھ آؤ۔ میں اس کے پیچھے پیچھے چلتا رہا یہاں تک کہ ایک گھر کے دروازے پر پہنچے کہ جسکا دروازہ چھوٹا سا تھا۔ وہ گھر کے اندر چلا گیا اور کچھ دیر بعد آیا اور مجھ سے کہا کہ: گھر میں داخل ہوجاؤ، میں گھر میں داخل ہوا تو دیکھا کہ ایک چھوٹا سا گھر ہے جس میں چھوٹا سا صحن ہے اور اس میں ایک تخت ہے جس پر وجود مقدس حضرت صاحب الزمان ارواحنا فداہ تشریف فرما ہیں۔ میں نے سلام عرض کیا ۔ اتنا رعب تھا حضرت کا اور میں اتنا مجذوب ہو چکا تھا کہ اپنا سؤال ہی بھول گیا اور دوسرے سؤال کئے اور باہر آگیا۔ تھوڑا سا چلاہی تھا کہ اپنے مسائل مجھے یاد آگئے فوراً واپس ہوا  اور دستک دی دوبارہ وہی شخص باہر نکلا اور مجھ سے کہا کہ کیا چاہتے ہو؟ میں نے جواب میں کہا کہ کچھ سؤالات ہیں جو امام عصر سے پوچھنا چاہتا ہوں۔ تو اس نے کہا کہ امام علیہ السلام تشریف لے جاچکے ہیں لیکن ان کے نائب موجود ہیں۔ تو میں نے کہا کہ ان کے نائب سے ہی پوچھ لیتا ہوں۔ اب جب میں اجازت لینے کے بعد گھر میںداخل ہوا تو دیکھا کہ مرحوم آیت اللہ العظمیٰ آقای ابوالحسن اصفہانی  حضرت کی جگہ پر تشریف فرما ہیں۔ میں نے اپنے سؤالات پوچھے اور جواب لینے کے بعد باہر آیا اور اپنے آپ سے کہا کہ آیت اللہ اصفہانی تو نجف میں تھے کب وہ یہاں پر آئے ہیں؟ پس میں رات کو ہی نجف واپس آگیا اور صبح سورج کے طلوع ہونے سے پہلے آیت اللہ کے گھر گیا اور کہا کہ آقا سے کہیں کہ عبدالنبی عراقی آئے ہیں۔اجاز ت ملنے پر گھر میں داخل ہوا تو دیکھا کہ نماز پڑھنے میں مصروف ہیں۔ نماز سے فارغ ہونے کے بعد پوچھا کہ کیا چاہتے ہو تمہارے سوالات کے جوابات تو میں نے رات کو تمہیں دے دئے تھے۔ میں نے دوبارہ وہی سؤالات کئے تو آقا نے رات کی طرح اب بھی ان کے اسی طرح جواب دیئے۔ تو اس وقت میں  نے مرحوم کی موقعیت اور امام کیساتھ ارتباط کو جان لیا۔

 

افسر بلشویکی اور آیه اللہ اصفہانی کی حکایت

اس کو بھی فاضل فوق الذکر نے کتاب گنجینۂ دانشمندان میں معظم لہ کے ایک اور ترجمہ کے ذیل میں جو اصفہان کے رجال کی شناخت کے بارے میں تھا، ذکر کیا ہے:۔

ہمارے لئے عالم ربّانی وسالک سبحانی ومحدّث جلیل وثقۂ نبیل مرحوم حاج ملّا محمود زنجانی نے حکایت کی ہے جو حاج ملا آقا جان کے نام سے مشہور تھے۔ اور جنہوں نے پہلی جنگ عظیم کے ختم ہونے کے بعد عراق اور زیارات عتبات عالیات کے لئے پیدل سفر کیا ۔ خانقین میں نماز کے لئے وہاں کی مسجد میں گیا ، دیکھا کہ ایک سفید اور بہت موٹا شخص اہل تشیع کی طرح نماز میں مصروف ہے۔ میں نے بہت تعجّب کیا۔ چند لمحہ صبر کیا یہاں تک کہ وہ اعمال انجام دینے سے فارغ ہوگیا تو میں اس کے نزدیک گیا اور اسے سلام کیا اس کے لہجے سے پتہ چلتاتھا کہ وہ روس کا رہنے والا ہے۔ میں نے اسے اس کی جگہ اور مذہب کے بارے میں سؤال کیا اس نے کہا: کہ میں لنینگراد سے تعلق رکھتا ہوں اور پہلی جنگ عظیم میں ، میں دو ہزار فوجیوں کا کمانڈر تھا اور کربلا کو قبضہ میں لینے پر مأمور تھا۔ میں نے شہر کربلا کے باہر کیمپ لگایا اور اس انتظار میں تھا کہ شہر پر حملہ کرنے کا حکم کب ملتا ہے؟ ایک رات میں نے عالم خواب میں دیکھا کہ ایک بزرگ شخص جس نے مجھے روسی زبان میں تکلم کیا اور مجھ سے کہا کہ حکومت روس کو اس جنگ میں شکست ہوگی۔ اور کل یہ خبر پھیل جائیگی اور تمام روسی فوجی جو عراق میں ہیں عربوں کے ہاتھوں مارے جائیں گے۔ افسوس ہے کہ تو بھی قتل ہوجائے گا۔ اس لئے تو مسلمان ہوجا  تاکہ تجھے میں نجات دوں۔

میں نے پوچھا کہ تم کون ہو کہ تمہاری طرح اخلاق ، خوبصورتی اور شجاعت میں کسی کو نہیں دیکھا ؟ فرمایا : میں ابوالفضل العباس ہوں کہ جس کی مسلمان قسم کھاتے ہیں ۔ میں اسکے بیانات سے بہت زیادہ مجذوب ہوگیا اور اس کے کہنے پر میں اسلام لے آیا۔ انہوں نے مجھ سے فرمایا کہ لشکر سے باہر چلے جاؤ ! میں نے کہا کہ کہاں جاؤں ؟ میںکسی بھی جگہ کو نہیں جانتا۔ تو انہوں نے فرمایا کہ تمہارے خیمے کے نزدیک ایک گھوڑا ہے جو تمہیں میرے والد محترم کے شہر نجف اشرف میں ہمارے وکیل سید ابوالحسن اصفہانی کے پاس لے جائیگا ۔ تو میں نے کہا کہ اس وقت دس فوجی میری حفاظت کررہے ہیں۔ تو انہوں نے کہا کہ اس وقت وہ مست پڑے ہیں اور تمہارے جانے کو احساس نہیں کریں گے ۔ پس میں اٹھا اور اپنے خیمے کو منور اور معطر پایا۔ جلدی سے لباس پہنا اور باہر آیا دیکھا کہ ایک گھوڑا تیار کھڑا ہے۔ اس پر سوار ہوگیا سوار ہونے کے بعد وہ گھوڑا تیزی سے ایک طرف دوڑنے لگا یہاں تک کہ ایک شہر میں داخل ہوا اور گلیوں سے گزرتا ہوا ایک گھر کے سامنے کھڑا ہوگیا۔ میں بہت حیرت زدہ تھا اچانک گھر کا دروازہ کھلا اور ایک بوڑھا اور نورانی سیّد ایک شیخ کے ساتھ باہر آیا کہ جس نے مجھے روسی زبان میں گھر میں داخل ہونے کے لئے کہا۔ میں ے اس سے پوچھا کہ یہ آقا کون ہیں؟ تو اس نے کہا کہ یہ وہی شخص ہے جس کا حضرت ابوالفضل العباس  نے تمہیں دیا تھا اور ان کی طرف تیری سفارش کی تھی۔ میں مجدداً آقا کے ہاتھ پر اسلام لے آیا۔ آقا نے اس شخص سے کہا کہ اس کو احکام اسلام کی تعلیم دیں ۔ دوسرے دن حکومت روس کی شکست کی خبر عربوں کے کانوں تک پہنچ گئی ۔ تمام روسی فوجی میرے علاوہ مارے گئے۔

میں نے پوچھا کہ یہاں کیا کررہے ہو؟ تو جواب دیا کہ نجف کی ہوا گرمیوں میں زیادہ گرم ہوتی ہے اس لئے آقا اصفہانی گرمیوں میں مجھے یہاں بھیج دیتے ہیں ۔ کیونکہ یہاں کی ہوا اچھی ہے اور سال کے باقی اوقات آقا کے پیسوں پر نجف میں گزارتا ہوں۔

آیت اللہ العظمیٰ حاج شیخ محمد علی اراکی نے فرمایا کہ : آقا ھرسینی نے کہا کہ مرحوم آیت اللہ

آقا میرزا محمد شیرازی کی وفات کے بعد معاشی لحاظ سے میری حالت بہت خراب ہوگئی اور کچھ دن بھوک اور تنگی کے ساتھ وقت گزارنے کے بعد نجف اشرف مشرف ہوا ۔ حرم میں داخل ہونے کے بعد ضریح مطہر علوی پر اپنے چہرے کو رکھ کر اپنی حاجات بیان کی۔ اس کے بعد وہاں سے باہر صحن میں آیا ۔ تو صحن شریف میں ایک شخص آیا اور کچھ پیسے مجھے دیئے۔ کچھ مدّت تک اسی سے گزارا چلایا اور جب پیسے ختم ہوگئے تو دوبارہ امیر المؤمنین  سے درخواست کی تومثل سابق صحن میں ایک شخص آیا اور کچھ پیسے دیئے۔ جو چند دنوں تک چلے۔ تیسری اور چوتھی مرتبہ بھی ایسا ہوا اور جب پیسے بالکل ختم ہوگئے تو دوبارہ حرم میں مشرّف ہوا اور التماس کی ۔ اور جب چاہا کہ حرم سے باہر آؤں مرحوم آیت اللہ اصفہانی جو سر مطہر کے پچھلی طرف بیٹھے ہوئے تھے جیسے ہی انہوں نے مجھے دیکھا مجھے آواز دی اور فرمایا: شیخ محمد حسن جب بھی پیسے ختم ہوجائیں تو لازم نہیں ہے کہ امیرالمؤمنین سے درخواست کرو بلکہ مجھے کہو اور اس بات کی تاکید کی۔ تو میں نے تعجب کیا کہ یہ کہاں سے متوجہ ہوئے کہ مجھے پیسوں کی ضرورت ہے؟ اس کے بعد حرم سے باہر آگیا اور دوسرے دن جیساکہ انہوں نے فرمایاتھا ان کے گھر کے دروازے پر گیا۔ وہ مرحوم کی ریاست کے ابتدائی دن تھے، جب میں نے دروازے پر دستک دی توخود تشریف لے آئے اور دروازہ کھولا اور کہا کہ پیسے نہیں ہیں، آؤ اندر آجاؤ اور میں گھر کے اندر گیا اور ایک گھنٹہ بیٹھنے کے بعد پشیمان ہوکر واپس جانے کا ارادہ ہی کیا تھا کہ آقا تشریف لے آئے اور وہ خودغبار آلودہوچکے تھے ۔ سب سے پہلے معذرت خواہی کی اور پھر اپنے دامن کو پھیلادیا جس میں بہت زیادہ درہم اور عراقی پیسے تھے کہ جن کے ذریعہ سے  کافی مدّت تک میرے اخراجات پورے ہوتے رہے۔ اور فرمایا: میں نے دیر کردی مجھے معاف کردے میں نے  یہ بچوں کے صندوقچے کو خالی کرکے آپ کے لئے لے آیا ہوں کیونکہ آپ کو ضرورت تھی۔

 

 

سیّد قدس سرہ کا بلا واسطہ ائمہ طاہرین علیہم السلام سے رابطہ

عالم فاضل علامہ حاج شیخ محمد حسن معزی دامت برکاتہ ، حضرت آیه اللہ العظمیٰ حاج شیخ محمد تقی بہجت مدّظلہ العالی کے قول سے لکھنے والے کیلئے نقل کرتے ہیں کہ : ایک بازار میں رہنے والے شخص کو کوئی پریشانی آن لگی ۔ تو وہ بازاری اس پریشانی کو رفع کرنے کے لئے نجف اشرف گیا تاکہ انفاس قدسیۂ مولانا امیرا لمؤمنین  علیہ السلام سے مدد حاصل کرے۔ معظم لہ فرماتے ہیں کہ جب وہ آدمی اپنی حاجت کو لیکر مولائے کائنات کے حرم میں پہنچا تو اس نے دیکھا کہ آقای اصفہانی   حرم میں تشریف فرماہیں۔ تو وہ آقای اصفہانی   کے پیچھے بیٹھ جاتا ہے اور اپنی حاجت کو بیان کرنے لگتا ہے اور ضمناً دل میں یہ خیال کرتے ہوئے خود سے کہتا ہے کہ اگر یہ سید آقا کانمائندہ ہے تو وہ حتماً میری حاجت کو بھر لایئںگے ۔ اسی دوران سید پیچھے کی طرف مڑ کر فرمایا کہ تیری حاجت روا ہوئی ۔ لکھنے والا کہتا ہے کہ یہ واقعہ بلا واسطہ سیّد قدس سرہ کا ائمہ طاہرین علیہم السلام کے ساتھ ارتباط پر دلالت کرتا ہے۔

حضرت امام زمان ارواحنافداہ کی سفارش

اسی طرح فاضل رازی نے گنجینۂ دانشمندان میں لکھا ہے کہ مرحوم آیه اللہ اصفہانی   نے اپنے شہید بیٹے کی وفات کے بعد چاہا کہ حکومت سے ہاتھ اٹھالیں اور اپنے دروازے کو اپنے پرائے پر بند کردیں، مرحوم ثقه الاسلام والمسلمین زین العلماء والصالحین حاج شیخ محمد کوفی شوشتری کے وسیلہ سے حضرت ولی عصر ارواحناالفداہ کی طرف سے ایک توقیع شریف وصول ہوئی کہ جس پر لکھا تھا: اجلس فی دھلیز بیتک ولا ترخ سترک الی ان یقول ( نحن ننصرک)۔

 

سچّے خواب

صاحب ترجمہ آقای حفید دامت برکاتہ نے اس حکایت کو لکھنے والے کے لئے نقل کرتے ہیں کہ : حجه الاسلام والمسلمین حاج آقا سید جواد میر سجادی سے شخصاً ایک عجیب اور سچّا خواب سنا کہ جو درحقیقت اس مرحوم (صاحب ترجمہ) کی ایک کرامت تھی۔

فرمایا: مرحوم آیه اللہ آقا سید ابوالحسن اصفہانی   کی مرجعیت جب اوج پر تھی تو عالم رؤیا میں امام الہمام موسیٰ ابن جعفر علیہ السلام کو مشاہدہ کیا کہ آپ  حضرت امام امیر المؤمنین  کے ایوان طلائی میں ضریح کے مقابل بیٹھے ہوئے تھے۔ حضرت کا جلال وجمال اس فضاء ملکوتی میں اس قدر تاثیر گذار تھا کہ مجھ سے حرکت اور بولنے کی قوت سلب ہوگئی تھی۔ اچانک دیکھا کہ طبق معمول مرحوم آیه اللہ اصفہانی   قبلہ کی طرف سے صحن مطہر میں داخل ہوئے اور امیر المؤمنین علیہ السلام  کی زیارت کے قصد سے ایوان طلا میں داخل ہوئے۔ امام الھمام موسیٰ بن جعفر علیہما السلام کے سامنے آکر مؤدبانہ کھڑے ہوگئے حضرت نے ان سے خطاب کیا اور کچھ دستورات ان کو دیئے۔ وہ عبارت جس کی طرف میں متوجہ ہوا وہ یہ تھی کہ آپ نے فرمایا: حاجی بغدادی کے کام کو انجام دو، آقا نے کہا ٹھیک ہے اطاعت ہوگی۔ تھوڑی دیر سونے کے بعد اذان صبح سے پہلے بیدار ہوا ۔ اور میں حیران کھڑا تھا کہ حاجی بغدادی کون ہے اور اس کا قصد کیا ہے؟ بالآخرہ اسی صبح ایک مسافر بغداد سے آیا جس کے پاس علماء کاظمین میں سے ایک عالم مرحوم حجه الاسلام والمسلمین آقای حاج میرزا حسین خراسانی قدس سرہ کا خط تھا اور وہ میرے لئے لایا تھا اور خط میں لکھا تھا کہ خط کو لانے والا حاجی بغدادی ہے جو کہ بغداد کا ایک شیعہ محترم تاجر تھا۔(اچانک میں اپنے خواب کی طرف متوجہ ہوا) ایک سال سے اس کا کام بند پڑا ہے اور کوئی بھی اس کی اطلاع نہیں رکھتا  اور اس کا ٹوٹل قرض ٧٠٠ دینار عراقی تھا جو حاجی عبدالحسین جیتا قدس سرہ کو دینا تھا، حاجی عبدالحسین بصرہ میں رہتے تھے اور آیه اللہ اصفہانی کے مقلدین میں سے تھے۔ اور سہم امام علیہ السلام کی بابت مقروض تھے۔ حاجی عبدالحسین نے حاجی بغدادی سے کہاتھا کہ اگر وہ آیت اللہ اصفہانی سے سہم امام علیہ السلام کی بابت ٧٠٠ دینار عراقی کی رسید لے آئیں تو میں تم سے قرض لینے سے ہاتھ اٹھا لوں گا اور تم بری الذمہ ہو جاؤگے۔ اس خط میں یہ بھی لکھا ہو ا تھاکہ اس بندہ خدا کی عزت اس ٧٠٠ دینار کی رسید کے ساتھ وابستہ ہے کسی قسم کی تلاش سے دریغ نہ فرمائیں۔

اینجانب نے اپنے آپ سوچا کہ اگر چہ پیسوں کی تعداد بہت زیادہ ہے(شاید آج کے حساب سے چھے لاکھ روپے ) لیکن اس خواب میں جو دیکھا تھا اسی کے مطابق مسئلہ کو حل کرنا تھا، فوراً آیه اللہ اصفہانی   کی خدمت میں حاضر ہوا اور جیسے ہی میںنے یہ کہا کہ حاجی بغدادی کو یہ مسٔلہ درپیش ہے تو انہوں نے (مہلت نہیں دی حتی کہ میری بات پوری ہونے سے پہلے) فورا کاغذ منگوایا اور ٧٠٠ دینار عراقی کی رسید بابت سہم امام علیہ السلام لکھ کر اس پر مہر اور دستخط کر دیئے اور ساتھ ساتھ یہ بھی سفارش کی کہ ان کو معطل نہ کریں بلکہ جلدی ان کا کام انجام دیں ۔ ان کی ان حرکات سے میں متوجہ ہوا کہ عیناً میں نے خواب سچا دیکھا ہے۔

چند ماہ کے بعد کاظمین میں آقای خراسانی مذکور کے گھر میں اسی خواب کو بیان کیا ۔ انہوں نے کہا کہ بہت عجیب ہے کیونکہ اسی رات کو جب میں حضرت موسیٰ بن جعفر علیہ السلام کی زیارت کو مشرف ہوا اور بالا سر حضرت زیارت میں مصروف تھا تو اس وقت اسی حاجی بغدادی کو دیکھا جو حضرت کی ضریح مقدس سے چمٹا ہوا تھا اور بہت رقت انگیز حالت کے ساتھ آنکھوں سے آنسو جاری تھے اور حضرت کی ضریح سے خطاب کرکے یہ کہہ رہا تھا کہ اگر کل تک میری حاجت پوری نہ ہوئی تو میں اپنے آپ کو دریا ئے دجلہ میں ڈال دوں گا۔ میں اس جریان کو سن کر بہت زیادہ متاثر ہوا اور حرم سے باہر آکر انتظار کرنے لگ گیا کہ حاجی بغدادی کب باہر آتے ہیں تاکہ اس سے اس قدرپریشان ہونے کی علت پوچھوں ۔ جب وہ حرم سے باہر آیا تو تنہائی میں میں نے اس سے اس کی پریشانی کی علت دریافت کی۔ تو اس نے اپنی مصیبت کو میرے لئے بیان کیا اس لئے میں نے اس خط کو لکھ کر اسے نجف بھیجا ۔ یہ بھی سیّد قدس اللہ نفسہ الزکیہ کے قضیوں میں سے ایک عجیب قضیہ تھا۔

سیّد قدس سرہ کی طرف حوالہ کرنا

ایک قابل اعتماد شخص نے حضرت آیه اللہ العظمیٰ خوئی   سے نقل کیاہے کہ نجف اشرف کے فضلاء میں سے ایک فاضل نے مسجد سہلہ میں ایک چلہ مکمل کیا ۔ آخر کار اس نے ایک شخص کو جو سید قدس سرہ سے مشابہ تھا اس کا مشاہدہ کیا اور ساتھ ہی یہ آواز آرہی تھی کہ اگر کوئی حاجت ہے تو اس سے رجوع کرو۔ کیونکہ عمل انجام دینے والا شک رکھتا تھا اس لئے اس نے تین بار عمل انجام دیا اور تین بار یہی ہوا اور یہ امور سید کی نسبت بعید نہیں ہیں جیسا کہ حاج شیخ عبدالنبی عراقی کے بارے میں گزر گیا۔

نجف کے دروازے کی چابی

بزرگان میں سے کسی نے سیّد موصوف کے نواسے حجه الاسلام والمسلمین حاج سید محمد بروجنی اصفہانی سے یہ بات نقل کی ہے کہ : ایک بااعتماد شخص نے یہ بات کی ہے جس رات کو سید موصوف نجف اشرف پہنچ چکے تھے، ایک شخص نے خواب میں دیکھا کہ سید موصوف نجف پہنچ چکے ہیں اور حضرت علی علیہ السلام تشریف لاتے ہیں اور نجف اشرف کے دروازے کی چابی سید موصوف کے ہاتھ میں دے رہے ہیں۔ یہ واقعہ بدھ کے دن جمادی الاول کے گیارھویں دن ١٣٠٨ھق کو ہوا ہے۔ اس واقعہ کو کسی اور شخصیت نے بھی میرے سامنے بیان کیاہے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

ابعاد سیاسی سید قدس سرہ

حکومتی اقدامات

ایرانی حکومت اور عراقی وبرٹش حکومت کے درمیان ، علماء کرام کے جلاوطن کرنے کے مسئلہ پر یہ طے پایا کہ یہ حضرات عتبات کی طرف رجوع کریں ۔ اس شرط پر کہ یہ لوگ سیاسی امور میں مداخلت نہیں کریں گے اور اسی طرح حجاز سے ایران کی طرف خالص مرجعیت پر موافقت حاصل ہوئی ۔

شاہ کے حضور میں

مرحوم سلطان احمد شاہ کی خواہش پر ، بین النہرین اور علماء کے جلاوطن کرنے کے معاملہ پر مرکز کے چند علماء شاہ کے پاس گئے اور مذاکرہ کرنے کی خواہش کی،سلطان احمد شاہ کی طرف سے اس واقعہ پر اظہار ہمدردی کیا گیا ۔ اور انکی طرف سے خصوصی اقدامات کرنے کا وعدہ کیا گیا اور ان سے اپنی محبت اور ہمدردی کا اظہار کیا۔

دربار میں ملاقات

١۵ سرطان ١٣٠٢ ہجری شمسی کو جناب ظہیر الاسلام جو کہ بزرگان اور تہران کے محترم علماء میں سے تھے اور ان کو دربار میں بھی عزّت کی نگاہ سے دیکھا جاتا تھا،آپ چند علماء کرام کے ہمراہ دربار میں گئے اور وہاں بین النہرین کے واقعہ پر مذاکرات کا ارادہ ظاہر کیا۔ اور بین النہرین سے کرمانشاہ آئے ہوئے علماء کرام نے بھی زور دیا کہ حکومت اہم اقدامات انجام دے ۔

 

حکومتی اقدامات

حکومت نے اس سلسلے میں اہم اقدامات انجام دئے اور وزارت خارجہ کو حکم دیا کہ لندن اور بین النہرین میں اپنے نمائندہ کو حکم دیا کہ وہ مذاکرات کے لئے خصوصی حکم جاری کریں۔

تاجروں کے اقدامات

تاجر برادری نے بھی اہم اقدامات کئے اور مہم میں شامل ہوگئے ۔ انہوں نے حکومت کو یہ پیشکش کی کہ وہ توہین جو ہوئی اگر رفع نہ کی گئی تو ہمسایہ ملک کی واردات کو روکا جائے ۔

شہری انتظامات سے متعلق احکامات

علماء کے جلاوطن کرنے کی خبر پھیلنے کی وجہ سے کئی اجتماعات منعقد ہونے لگے کہ اگر ان کو کنٹرول نہ کیا جاتا تو انقلاب برپا ہو جاتا۔ اس وجہ سے تہران کے مئیر کو خصوصی حکم دیا گیا کہ وہ شہر کے امن وامان کو کنٹرول میں رکھیں اور اگر کوئی شر پسند کوئی حرکت کرے تو اسے روکا جائے۔

علماء کرام کا کرمانشاہان میں داخل ہونا

کرمانشاہان سے تہران موصول ہونے والے ٹیلی گراف کے مطابق ١۵ سرطان ١٣٠٢ہجری شمسی یا ٢٢ ذیقعدہ ١٣۴١قمری کو علماء کرام عتباب سے کرمانشاہان میں انتہائی شان وشوکت کے ساتھ داخل ہوئے کہ تمام تاجروں اور اداروں نے ہڑتال کی ہوئی تھی اور سلطان احمد شاہ کے ٹیلی گراف کے جواب میں علماء کرام کی طرف سے یہ ٹیلی گراف جواب دیا گیا۔

 

بسم اللہ الرحمن الرحیم

حضور مبارک اعلیٰ حضرت اقدس شاھنشاہی کی خدمت میں دعا وسلام کے بعد آپ کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ آپ نے اپنے دستخط سے لطف وکرم فرماکر ہم کو ٹیلی گراف بھیجا۔ اس ضمن میں حوزہ کے علماء اور طلباء کی طرف سے جو لوگ دین پروری کررہے ہیں ان کا شکریہ ادا کیا ہے ۔ انشاء اللہ جو لوگ دین کی راہ میں خد مت کریں ہم ان کے ساتھ اور ہماری دعائیں ان کے ہمراہ ہیں۔

والسلام

ابوالحسن الموسوی اصفہانی

محمد حسین غروی نائنی

مرحوم خالصی کی جلاوطنی پر ایران سے توفقنامہ

پہلے ذکر ہو چکا کہ بعض علماء کرام کو عراقی حکومت نے حجاز جلاوطن کردیا تھا۔ ان میں سے ایک مرحوم خالصی تھے۔ جو ایک بزرگ عالم دین تھے، ان کو عراقی حکومت نے حجاز جلاوطن کردیا تھا ، لیکن ایرانی اور برٹش حکومت کے درمیان کئے گئے اقدامات کے نتیجہ میں یہ طے پایا کہ مرحوم خالصی کو حجاز سے واپس ایران لایا جائے۔

علماء کرام کی حمایت میں عمومی مظاہرے

علماء کرام کے جلاوطن کئے جانے کی خبر ہر جگہ منتشر ہونے کے بعد ہر شہر کے علماء نے مظاہرے کئے اور ٹیلی گراف بھیجے اور علماء کے جلاوطن کئے جانے کے بارے میں مرکز کو ٹیلی گراف بھیجے اور حکومت اور شاہ سے فوری اقدامات کرنے کی اپیل کی۔اسی طرح مرکز میں مقیم علماء کرام نے اپنے مظاہرات مساجد میں انجام دیئے اور ٢۴ذیقعدہ کو مسجد جامع ، مسجد عزیزاللہ ، مدرسۂ خان میں علماء کرام اور دینی  طلاب کے اجتماعات دیکھے گئے جوکہ مظاہرات کررہے تھے اور اس سلسلے میں ہر طرف گفتگو ہورہی تھی۔

اس واقعہ کا انجام یہ ہوا کہ مشیر الدوله کی حکومت کے ختم ہونے اور نئی حکومت آنے کے درمیان فوج آگئی ۔ اور بالآخر یہ طے پایا کہ علماء کرام ایران کا چکر لگائیں اور معصومہ قم کی زیارت کے بعد عتبات عالیہ مراجعہ کریں اور یہی ہوا۔ لیکن مذاکرات دیر سے انجام پائے۔ اور اسکے بعد ہم دیکھیں گے کہ اکثر علماء کرام قم میں تھے اور خالصی بین النہرین آنے کی اجازت نامہ حاصل نہ کرسکے اور انہوں نے اپنی فیملی کے ساتھ خراسان ہجرت کی اور شہر مشہد مقدس میں داعی اجل کو لبیک کہا۔ اور ان کے بیٹوں میں سے جو ایران میں رہ گئے تھے ، ان میں سے بڑے لڑکے خراسان سے تہران آئے اور انہوں نے اہم کام انجام دیئے اور ملایر اور کاشان جلاوطن ہونے کے بعد تہران میں زندگی گذار رہے ہیں۔

 

سیّد قدس سرہ کی آیه اللہ کاشانی کی حمایت

چونکہ سیّد ، استعماری حکومتوں کا اسلام اور مسلمانوں کے خلاف کاروائی انکے نفوذ اور پلید عزائم سے واقف تھے۔ انہوں نے آیه اللہ سید ابوالقاسم کاشانی  کی بھر پور حمایت کی اور انکی حمایت میں کسی قسم کی کسر باقی نہ رکھی ۔ سید ابوالقاسم کاشانی عراق سے فرار ہوکر ایران تشریف لائے اور تہران میں انہوں نے قیام کیا، انہوں نے اپنے والد اور عتبات عالیات کے اہم مراجع کے ہمراہ استعماری حکومت برطانیہ اور دوسری استعماری طاقتوں کے خلاف بھر پور قیام کیا اوران کو ذلت کی خاک میں غلطان کیا۔ یہ نہ کبھی بکے اور نہ کبھی جھکے اور اپنی عمر کے آخری لمحے تک حکومت الٰہی کے قیام کے لئے کوششیں جاری رکھیں ۔ انہوں نے ایرانی پٹرول کمپنی کو استعمار کے تسلط سے بچایا۔

جی ہاں ! یہ آگاہ علماء ہی ہیں کہ بقول ڈاکٹر شریعتی ، یہ دعویٰ کیاجاسکتا ہے کہ گذشتہ دوصدیوں میں جو استعمار نے قرارداد کی جنگ شروع کی اس میں کسی نجف کے عالم کا دستخط نہیںتھا جبکہ انہی     قرار دادوں پر ان ڈاکٹروں اور انجئینروں کے دستخط تھے جنہوں نے باہر ممالک سے تعلیم حاصل کی تھی۔

یہ تو واقعیت کا ایک رخ تھا ، اور دوسری طرف اگر دیکھا جائے تو ان ممالک میں جو بھی تحریک تھی اس کے پیچھے ایک سچے اسلامی یا بالخصوص شیعہ عالم کا چہرہ نظر آتا ہے۔ اسی وجہ سے استاد جلال آل احمد فرماتے ہیں : میں ڈاکٹر تندر کیا کے اس قول کے ساتھ موافق ہوں کہ وہ لکھتے ہیں” شیخ شہید نوری کو بعنوان مدافع مشروطہ ان کو سولی پر جانا چاہئے ، اور یہی وجہ تھی کہ ان کو شہید کرنے کے لئے سب کی نظریںنجف اشرف سے فتویٰ صادر ہونے پر جمی ہوئی تھی ۔ یہ اس وقت کی بات ہے جب مغربی سوچ کے حامل روشن فکر ملک خان مسیحی ہمارا رہبر تھا۔ طالب اور قفقازی نے کہا : میں اس بزرگوار کی لاش کو برسر دار ہونا ایسا سمجھتا ہوں گویا کہ یہ ایک ایسا پرچم ہے جو دوسو سالہ مغرب زدگی پر غلبہ کا نشان ہے اور اس مملکت کے اوپر لہرا رہا ہے۔

سچ بات یہ ہے کہ انہوں نے ڈاکٹر محمد مصدق کی پیروی میں دھوکہ کھایا اور آیه ا… اور ڈاکٹر کے درمیان تفرقہ ایجاد کیا۔ اور انکے بقول خود ایران کے پیشوا نے آیه ا… کے خلاف اقدام کیا اور سید مجتبیٰ نواب صفوی اور سید عبدالحسین واحدی کے برسر پیکار آنے کے بعد انکوہژیر اور رزم آراء کے ہاتھوں قتل کروا کر تاریخ کے دھارے کوموڑدیا۔ اور ڈاکٹر مصدق کے برسر اقتدار آنے کے بعد انہوں نے کسی کام میں کوتاہی نہیں کی ۔ اور چند بڑے آفیسرزکو زندان بھیج کر مصدق کو ان کی جگہ لاکھڑا کیا۔ اور چند جانے پہچانے چہروں نے جیسے فوجی رہنما وثوق ، ڈاکٹر اخوی ، نصرت اللہ امینی اور ان جیسے اس بات کا سبب بنے کہ محمد رضا دوبارہ پلٹ آئے۔ اور آیه ا… کو خط کے ذریعے سیاسی مسائل میں مداخلت کرنے سے منع کیا۔ اور معاشرہ کو اتنا آزاد کردیا کہ کسی طرح کی اہانت ، آیه اللہ کی شان میں گستاخی نہیں سمجھی جاتی تھی۔ امام خمینی  فرماتے ہیں کہ :

انہوں نے ایسا کام کیا کہ پارلیمنٹ میں ایک کتے کو چشمہ پہنا دیا اور اسکا نام آیه اللہ رکھ دیا۔ اور یہ اس وقت کی بات ہے کہ جب یہ لوگ (مغرب زدہ لوگ) اس پر فخر کرتے تھے۔

بہر حال کہنے کو بہت سی باتیں ہیں ۔ انصاف کا تقاضا یہ نہیں تھا کہ ذریت پیامبر سے ایک شخص ، جو آزادی کا خواہاں تھا ، تہران کا ایک متدین تاجر جس نے انکی تشییع میں شرکت نہیں کی تھی کہتا ہے: کہ رات کو میں نے پیامبر ۖ اکرم خواب میں دیکھا تو حضرت نے مجھ سے منہ موڑ لیا، میں نے عرض کیا ،یا رسول اللہ ! میں آپ کے چاہنے والوں میں سے ہوں آپ کیوں مجھ سے منہ موڑ رہے ہیں؟ آپ ۖ نے فرمایا، تم کیسے میرے چاہنے والے ہوکہ میرے بیٹے موسیٰ بن جعفر کی تشییع جنازہ میں شرکت نہیں کی۔ میں نے عرض کیا موسیٰ ابن جعفر؟  فرمایا اگر ابوالقاسم کاشانی کی تشییع جنازہ میں شرکت کی تو گویا موسیٰ ابن جعفر کی تشییع جنازہ میں شرکت کی۔

اصفہان کے علماء کی ہجرت اور سیّد قدس سرہ کا اقدام

ومن یخرج من بیتہ مہاجراً الی اللہ ورسولہ ثم یدرکہ الموت فقد وقع اجرہ علی اللہ

تاریخ پر نظر رکھنے والوں سے یہ بات پوشیدہ نہیں ہے کہ علویوں کے خون کو تاریخ میں کس طرح بہایا گیا ۔ امامیہ علماء میں سے ایک حجه الاسلام حاج شیخ آقا نوراللہ اصفہانی ہیں۔ انکے آباء واجداد میں سے اکثر عالم تھے۔ ان کے والد آیه ا… حاج شیخ محمد باقر نجفی اور انکے دادا  آیها… العظمیٰ حاج شیخ محمد تقی ہیں۔ جنہوں نے ہدایت المسترشدین جیسی کتاب لکھی ہیں۔ انہوں نے استعمار کے خلاف مبارزہ ١٣٠٧ھ ش میں معنوی مقامات حاصل کرنے کے بعد اپنے بھائی کے ہمراہ اصفہان کے ایک دیہات سے شروع کیا جسکا نتیجہ یہ ہوا کہ ناصرالدین شاہ کے حکم کے تحت انکو تہران جلاوطن کردیا گیا۔

پہلوی ظلم واستبداد

اصل مطلب کو بیان کرنے سے پہلے کچھ رضا خان پہلوی کے کرتوتوں اور بداعمالیوں اور اس کے نظام حکومت کے بارے میں تحریر کروں ۔ رضا خان در واقع قزاقان قجر کے باقیات کانام ہے۔ انگریزوں کی حمایت کے ذریعے ١٢٩٩ پہلی حوت کو تہران شہر پر حملہ کرکے پورے تہران پر کنٹرول حاصل کیا۔ شروع میں اس نے اپنے آپ کو ایک مذھبی شخص کے عنوان سے متعارف کرایا۔ ملک الشعراء بہار رحمه اللہ علیہ کے قول کے مطابق ابتداء میں اس نے عاشور کے دن ننگے سر ،ننگے پاؤں  دستوں کے آگے آگے ماتم اور سینہ زنی کرتے ہوئے لوگوں کی توجہ کا مرکز بنا۔ بعد میں انگریزوں کی نوکری کرتے ہوئے یہاں تک آگے بڑھا جو تاریخ ایران کے حوالے سے ایک بد نما داغ ہے یعنی کشف الحجاب کا واقعہ اس کے دور میں پیش آیا۔ عزاداری امام حسین علیہ السلام پر پابندی لگادی، اسلامی اقدار کی توہین ، غیرت اور عزّت اسلامی کو پائمال کیا اور تمام معنی میں حکومت برطانیہ کی غلامی اور انکے فرھنگ و کلچر کو ایران میں نافذ کر دیا۔

مسئلہ کشف حجاب ، آیه اللہ العظمیٰ قمی کاقیام اور سید ابوالحسن کی حمایت

ایران کے علماء کی انقلابی سوچ اور رضا شاہ پہلوی کی مخالفت کی ایک وجہ مسئلہ کشف حجاب تھی۔ جو پورے ایران میں علماء کی طرف سے ظاہر ہوا۔ یہاں تک کہ جو علماء حکومت کے حامی تصوّر کئے جاتے تھے ان کی طرف سے بھی اعلان برائت ہوا۔ ان میں سے ایک برجستہ شخصیّت آیه اللہ العظمیٰ حاج آقای حسین قمی رضوان اللہ تعالیٰ علیہ تھے۔ معظم لہ ربیع الآخر کی آخری رات ١٣۵۴ھق کو اپنے بیٹے کے ساتھ احتجاج کے طور پر مشہد مقدس سے تہران کی طرف روانہ ہوئے۔ اگرچہ بہت سی شخصیات کی طرف سے مشورہ دیا گیا کہ آپ اس طرح سفر نہ کریں ورنہ آپ کو زندان بھیجا جائے گا یا قتل کیا جائے گا مگر آپ نے یہ کہتے ہوئے کہ : یہ مسئلہ اسلام اور دین کاہے اگر اس واسطے میں زندان جاؤں یا قتل ہو جاؤں تو کوئی بات نہیں،آپ نے اپنے سفر کو جاری رکھایہاں تک کہ آپ شہر ریٔ میں شاہ عبدالعظیم کی بارگاہ کے اطراف میں پہنچ گئے اور وہیں سکونت اختیار کی اتنے میں لوگ جوق در جوق آپ کی قیام گاہ کی طرف حرکت کرنے لگے تو رضا خان پہلوی کی طرف سے آرڈر ہوا کہ لوگوں کو وہاں جانے سے روک دیا جائے مگر لوگوں کے عشق اور شوق کے سامنے حکومت کے نوکروں کا کچھ نہ بن پایا ، تو وہاں پر حملہ کیا گیا۔ جسمیں بہت سے لوگ شہید اور زخمی ہوئے ۔ یہ خبر پورے ایران میں جنگل کی آگ کی طر ح پھیل گئی۔ مشہد مقدس میں لوگ اس پر اعتراض کرنے کے لئے مسجد گوہر شاد میں جمع ہوئے تو حکومت نے وہاں پر بھی حملہ کیا جسمیں روضۂ اطہر اور مسجد گوہر شاد کے احترام کو پائمال کیا گیا۔ بہت سے لوگ شہید اور زخمی ہوگئے ۔ ان واقعات کے بعد آیه اللہ قمی کربلا ونجف چلے گئے ، تو وہاں سید ابوالحسن اصفہانی نے مکمل طور پر انکی خاطر تواضع کی اور ہر لحاظ سے ان کی مدد اور حمایت کو جاری رکھا۔ ضمناً شیخ تقی بہلول کا کردار مسجد گوہر شاد کے حوالے سے نمایاں ہے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

غروب آفتاب فقاہت

الا یا ایہا الساقی ادر کاساً وناولہا                             کہ عشق آسان نمود اوّل ولے افتاد مشکلہا

انیسویں صدی میں فرانس کے سب سے بڑے قومی شاعر کہ کہنا ہے کہ:

مستقبل کسی کا بھی نہیں ہے اگر ہے تو ان لوگوں کے لئے جنہوں نے معاشرہ میں علمی اور فکری کام سرانجام دے کرعاشقانہ طور پر دنیا سے چلے گئے ہوں ،اور اپنی علمی وعملی سیرت کے ذریعے آیندہ آنے والوں کے لئے چراغ ہدایت بنے ہوں۔ ایسے لوگ ہمیشہ زندہ وجاوید رہیں گے ۔ بقول شاعر

جمال ذی الارض کانوا فی الحیاه                             وہم بعد الممات جمال کتب والسیر

مرحوم سید ابوالحسن اصفہانی رحمه اللہ علیہ لبنان کے شہر بعلبک میں قیام کے دوران بیمار ہوئے، آپ کو فوراً شہر کاظمین بغداد منتقل کرکے ھسپتال میں داخل کیا گیا۔ معظم لہ کے داماد محترم حاج سید میر باد کوبہ ای  نقل کرتے ہیں : میں پیر کی رات نہم ذوالحجہ ١٣۶۵ھق کو آقا کی خدمت میں پہنچا ، عیادت کے بعد عرض کی کہ آقا نجف اشرف میں آپ کا قرض بہت زیادہ ہو چکاہے کچھ فکر کیجئے اور فرمایئے ہمیں کیا حکم ہے؟ پس یہ باتیں سننے کے بعد آپ کی آنکھوں میں آنسو آگئے اور آپ نے گریہ کرنا شروع کیا۔ میں نے عرض کیا: آقا! کیا میری باتوں سے آپ ناراض ہوگئے ہیں؟ کیا آپ کو اذیت ہوئی ؟ آپ نے فرمایا: نہیں ! یہ رونا عشق کا رونا ہے اور یہ آنسو خوشی کے ہیں، کیونکہ میں نے جو دعا کی تھی وہ مولا امیر علیہ السلام نے قبول کی۔

میں نے عرض کیا: آقا آپ نے کیا دعا کی تھی؟ کیا طلب فرمایاتھا؟ فرمایا: جب میں تعلیم حاصل کرنے کے لئے نجف اشرف آیا تھا تواس وقت میں نے یہ دعا کی تھی، مولا! جب میں یہاں آیا تھا تو اس وقت خالی ہاتھ ہی آیا تھا اور اب جارہا ہوں توبھی خالی ہاتھ جارہا ہوں! پس میری یہ دعا قبول ہوگئی ہے آپ میری فکر مت کیجئے ، مولا خود میرے قرض کو ادا فرمائیں گے ۔ جب آپ اس دنیا کے آخری لحظات گن رہے تھے تو اس وقت بھی کمال ہوشیاری کے ساتھ حالات سے آگاہ تھے۔ آپ کی رحلت سے ایک دن پہلے حضرت حجه الاسلام آقا سید علی صدر، آقای سید مہدی خراسانی اور جناب شیخ اسد اللہ زنجانی کو بلا کر علماء کے حضور اپنی مہر کو مذکورہ علماء کے حوالہ کیا۔ خصوصاً حجه الاسلام سید مہدی خراسانی کو مخاطب ہوکر فرمایا: میرے مرنے کے بعد اس مہر کو توڑدینا تاکہ کوئی اس مہر سے غلط فائدہ نہ اٹھا پائے۔ پس چند منٹ کے بعد نہم ذی الحجه پیر کے دن ١٣۶۵ھق کو اپنے جد بزرگوار کے جوار میں ملکوت اعلیٰ کی طرف پرواز کرگئے۔

یک تن از فردوس اعلیٰ سر برون آور د وگفت               ہست در فردوس اعلیٰ جای سید بوالحسن

وبقول اقبال لاہوری

ہزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتی ہے    بڑی مشکل سے ہوتی ہے چمن میں دیدہ ور پیدا

آپ کی رحلت کی خبر جنگل کی آگ کی طرح پورے عالم اسلام میں پھیل گئی اور پورے اسلامی ممالک میں سیاہ جھنڈے لہرائے گئے۔ بزرگان نقل کرتے ہیں کہ :” مرحوم آیه اللہ العظمیٰ حاج سید محمد حجت قدس سرہ ،سید کی وفات کی خبر سن کر بے ہوش ہوگئے، چند منٹ کے بعد ہوش میں آکر فرمایا: خدا کرے یہ خبر صحیح نہ ہو”۔

دوسری طرف حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید محمد تقی خوانساری پریشان حالت میں علماء کے ساتھ آیه اللہ العظمیٰ حاج آقا حسین بروجردی کے گھر میں تسلیت اور تعزیت کے لئے جاتے ہیں۔

آپ کی رحلت نے نہ صرف مسلمانوں کو غمگین کیا بلکہ یہود ونصاریٰ کے مذھبی اقلیتوں نے بھی آپ کے فقدان پر گریہ کیا۔اور معبدوں کنیساؤں اور کلیساؤں میں عزا کی مجلسیں قائم کیںاور انکے ناقوسوں سے آوازیںبلندکیں۔

آخر الامر اس عظیم فقیہ اہل بیت عصمت وطہارت کے پاک پیکر کو ہزاروں سوگواروں کے درمیان ، عظیم الشان طریقے سے بغداد سے نجف اشرف لایا گیا اور جب آپ کا جسم اطہر صحن علوی میں پہنچا تو مرحوم حضرت آیه اللہ العظمیٰ شیخ محمد حسین کاشف الغطاء نے آپ کو خطاب کرتے ہوئے فرمایا:

”ھنیئاً لک یا ابالحسن عشت سعیداً ومت حمیداً قد انسیت الماضین واتعبت الباقین کانّک قد ولدت مرتین”

یعنی آپ کے اوپرگوارا ہو یا ابالحسن ! سعادت کے ساتھ زندگی کی اور شائستگی کے ساتھ چلے گئے۔ آپ کی عظمت اور بزرگواری نے گذشتوں کو بھلادیا آپ کی موت نے ہمیشہ کے لئے رنج وغم اور ماتم میں مبتلا کردیا ، گویا تم دوبار دنیا میں متولد ہوئے ہو۔

آخر کار آپ کے جسد اطہر کو مولائے کائنات کی ضریح مقدس کے طواف کے بعد صحن علوی کی دائیں جانب اپنے استاد آخوند خراسانی اور اپنے شہید بیٹے کی قبر کے ساتھ سپرد خاک کیا گیا۔

آپ کے بارے میں شعراء عرب اور عجم نے بہت سے اشعار نذر کئے ہیں ، یہاں پر طوالت کے خوف سے اور وقت کی کمی کے باعث صرف علی اکبر خوشدل کے مرثیہ کو نقل کررہا ہوں

عظم اللہ اجورک سید ی  یاابالحسن         در عزای نائب علی مقام بوالحسن

 

 

سید قدس سرہ کے باقیات اور صالحات

معظم لہ کی ۴ اولاد ذکور اور پانچ اولاد مخدرۂ مکرمہ درج ذیل ہیں:

١: حجه الاسلام علامہ شہید سید حسن (محمد حسن) معظم لہ حوزۂ علمیہ نجف اشرف کے فاضل علماء میں سے تھے۔ آپ ٢٢ ربیع الاوّل ١٣٢٢ھق کو متولد ہوئے اور سولہویں صفر کی رات کو نماز مغربین کے وقت شیخ علی اردہالی کے ہاتھوں شہید ہوگئے۔

٢:حجه الاسلام والمسلمین سید محمد ، معظم لہ سید موصوف کے دوسرے فرزند ارجمند ہیں، آپ آیه اللہ العظمیٰ میرزائے نائنی کے داماد تھے۔ آپ ٢۵ ربیع الثانی ١٣٢۶ھق کونجف اشرف میںپیدا ہوئے اور وہیں علوم دینی میں مشغول رہے۔ کہتے ہیں کہ آپ بہت صاحب عظمت اور سخاو ت مند تھے۔ عمر کے اخری حصہ میں مختلف بیماریوں میں مبتلارہے۔

٣: آیه اللہ حاج سید علی، معظم لہ نجف اشرف اور مشہد مقدس کے حوزۂ علمیہ کے آیات عظام میں سے تھے۔ آپ نے کئی سال تک اپنے والد بزرگوار آیه اللہ میرزا نائنی اور محقق عراقی سے کسب فیض کیا اور مذکورہ آیات عظام سے درجۂ اجتہاد کی سند رکھتے تھے۔ آپ کی ولادت باسعادت بقول والد بزرگوار ١٩ ذی الحجه ١٣٣٢ھق کو ہوئی اور آپ نے مشہد مقدس میں وفات پائی اور جوار ملکوتی حضرت امام رضا علیہ السلام میں مدفون ہوئے۔

۴: حاج آقا حسین                     ۵: محترمہ سید ہ فاطمہ                           ۶: محترمہ سیدہ رباب

٧: محترمہ سیدہ مریم                              ٨: محترمہ سیدہ زھرائ                          ٩: محترمہ سیدہ بتول

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

شیعوں کی رہبریت اور مرجعیت، سید کی وفات کے بعد سے مؤلف کے زمانہ تک

سید ابوالحسن اصفہانی رحمه اللہ علیہ کی وفات کے بعد شیعوں کی زعامت اور مرجعیت اپنے خاص انداز میں آگے بڑھتی رہی جس کا ذکر ہم یہاں کریں گے  جو زھد وتقویٰ اور علم وعمل وعرفان کے لحاظ سے قابل فخر ہیں ۔

١: سیدالفقہاء والمجتھدین حضرت آیه اللہ العظمیٰ آقای حاج حسین قمی رحمه اللہ علیہ کی شخصیت: سید کی وفات کے بعدحوزۂ علمیہ اور شیعہ عوام کی زعامت اور مرجعیت آپ کے مبارک ہاتھوں میں آگئی۔

معظم لہ خانوادہ اجتہاد کے چشم وچراغ تھے آپ کا تعلق شہر اجتہاد کے صفحہ اوّل کی شخصیات سے ہے۔ آپ اعلیٰ تعلیم کے لئے قم سے نجف اشرف تشریف لے گئے وہاں پر مثل اخوند مُلّا محمد کاظم خراسانی  صاحب کفایہ ،علامہ سید محمد کاظم طباطبائی رحمه اللہ علیہ وغیرہ سے خصوصاً حکیم متألہ علامہ سید مرتضی کشمیری رحمه اللہ علیہ سے علم اخلاق سے مزین ہوئے۔

علم الحدیث کو خاتم المحدیثین علامہ میرزا حسین نوری رحمه اللہ علیہ سے حاصل کیا ،بعد میں آپ کربلا ئے معلی ہجرت فرما گئے۔  وہاں پر فقیہ مجاھد علامہ آیهاللہ میرزا محمد تقی شیرازی  کی خدمت میں حاضر ہوئے چند سال وہاں رہنے کے بعد آپ مشہد مقدس بارگاہ ملکوتی ثامن الحجج علی ابن موسیٰ الرضا علیہ السلام میں مشرف ہوئے۔ یہاں پر آپ کی علمی اور فکری شخصیت آج بھی زبان زد عام وخاص ہے۔ دوران نظام ستم شاہی آپ کو یہاں سے نجف اشرف جلاوطن کیا گیا،  ١٣۶۵ ھجری قمری میں سید کی وفات حسرت آیات کے بعد جھان تشیع کی زعامت،مرجعیت اور رہبریت آپ کے کاندھوں پر آئی۔ لیکن گردش ایّام اور قضاء وقدر نے آپ کو تین ماہ سے زیادہ فرصت نہیں دی اور آپ نے ١٣۶۶ ھجری قمری میں حکم پروردگارپر لبیک کہا۔

جھان تشیع آپ کے سوگواروں میں سیاہ پوش ہوگیا ۔عرب اور عجم کے شعراء نے آپ کی خدمت میں عرض ارادت کیں ۔یہاں پر ہم مختصراً چند بیت کو ذکر اور نقل کرتے ہیں۔

 

٢: حضرت آیه اللہ العظمیٰ حاج آقای حسین بروجردی رحمه اللہ علیہ : فقیہ ،عارف، جامع معقول ومنقول ، حاوی فروع واصول، مرجع اعلیٰ ،  علامہ کبیر، حضرت آیه اللہ العظمیٰ حاج آقای حسین بروجردی رحمه اللہ علیہ ،سید ابوالحسن اصفہانی اور آیه اللہ العظمیٰ حسین قمی کے بعد حوزۂ علمیہ کے داغ بیل اور شیعوں کی رہبری آپ کے مقدس ہاتھوں میں آئی معظم لہ نے خانوادہ علم وعرفان اور معدن علم و سیادت میں آنکھیں کھولیں آپ  نے١٢ سال کی عمر میں اپنے علاقے کے بزرگ علماء سے کسب فیض کرنا شروع کیا ۔اٹھارہ سال کی عمر میں اعلیٰ تعلیم کے لئے اصفہان تشریف لے گئے وہاں پر آپ نے خود کو آیه اللہ علامہ ابوالمعالی کرباسی، میر سید محمد تقی مدرسی  اور میرزا محمد باقر سے درجۂ اجتہاد تک پہنچایا ۔ مبانی عقلی کو حضرت آیه اللہ اخوند مُلّا محمد کاشی اور آیه اللہ میرزا جھانگیر کافی قشقائی سے کسب فیض کیا ۔آپ کئی سال کے توقف کے بعد ١٣١٨ ھجری قمری میں نجف اشرف کی طرف روانہ ہوگئے اوروہاں پر دس سال مقیم رہے، اس دوران آیه اللہ اخوند ملا محمد کاظم خراسانی اورآیه اللہ علامہ سیدمحمد کاظم یزدی سے علوم اہل بیت

کو عروج تک پہنچایا ۔آپ کا مقام اپنے استاد عظیم الشان حضرت آیه اللہ اخوند خراسانی کے پاس فوق العادہ تھا ۔آپ ١٣٢٨ ھجری قمری کو مطلق اجتہاد نجف اشرف کے برگزیدہ علماء سے حاصل کرنے کے بعد ایران واپس آئے اور بروجرد شہر میں قیام پذیر ہوئے۔ وہاں پر ٣٣ سال تک مرجع عام وخاص رہے۔ بعدمیں حوزۂ علمیہ قم کے شرفائ، بزرگان اور علماء ومجتہدین کے اصرار پر قم تشریف لے آئے ۔ ان کا قم میں وارد ہونا ہی کسی معجزہ سے کم نہ تھا ،اس بات کی تائید بعد کے واقعا ت نے ثابت کردی۔

آپ نے محرم الحرام ١٣۶٢ ھجری قمری  میں قم کی عظیم سرزمین پرشیعوں کی زعامت اور رہبری کا آغاز کیا۔ علماء اور طلاب پروانہ وار آپ کے حضور موجود ہوتے تھے ۔آپ اتنی عظمت اورجلالت کے مالک تھے کہ آپ کے سامنے پرندے بھی پر نہیں مار سکتے تھے ۔ مجتہدین ،علماء ، طلاب ،عوام ، کاروباری افراد سب کے سب شمع کے گرد پروانہ بن کے آپ کی آواز پر لبیک کہنے کے لئے تیار اور آمادہ رہتے تھے۔ اس پس منظر کی یاد آج بھی لوگ ذکر کرتے رہتے ہیں ۔ آپ اپنی مرجعیت اور رہبری کے زمانے میں سورج کی طرح قم کی سرزمین پر چمکتے رہے۔ آیه اللہ حسین قمی کے بعد زعامت اور رہبری ١٣۶۶ ھجری قمری میں آپ پر اختتام ہوئی۔ آپ پندرہ سال تک مرجع علی الاطلاق پوری دنیا کے تشیع کے مجتہد اور مرجع تقلید رہے ۔یہ اسوۂ تقویٰ و پرہیز گاری اورجہان تشیع کی عظیم شخصیت بالآخر ٩٣ سال کی پر برکت عمر کے بعد جمعرات کے دن ١٣ شوال المکرم ١٣٨١ ھ ق کو دار جہان فانی سے جہان باقی کی طرف ہجرت فرماگئے اور پورے عالم تشیع کو سوگوار چھوڑا ۔ آپ کی عظیم شخصیت مثل آفتاب عالم تاب غروب ہوئی، پھر آپ کی مرجع علی الاطلاق اور رعب وجلالت وعظمت سے حوزہ محروم ہوا ۔آپ کی شخصیت اور عظمت کا ذکر کا احاطہ کرنا اور قلم کے ذریعہ بیان کرنا جوئے شیر لانے کے مترادف ہے ۔ بقول شاعر

”شنیدن کی بود مانند دیدن”

 

 

٣:آیه اللہ العظمیٰ سید محسن الحکیم :

حضرت آیه اللہ بروجردی کی وفات حسرت آیات کے بعد شیعوں کی مرجعیت اور رہبریت آیه اللہ العظمیٰ سید محسن الحکیم کے مبارک ہاتھوں میں آئیں۔ آپ اپنے زمانے کے تمام علوم وفنون پر مکمل دسترس رکھتے تھے۔ آپ نے ١٣٠۶ ھ ق میں خاندان علم وفضل میں آنکھ کھولیں، اور بارگاہ عشق وایمان کے کنارے آپ کی پر ورش ہوئی ۔ابتدائی علوم سے لیکر درس خارج فقہ واصول کو آیه اللہ آخوند خراسانی صاحب کفایہ ،آیه اللہ علامہ سید محمد کاظم یزدی صاحب عروه الوثقیٰ ،آیه اللہ میرزا نائنی اور آیه اللہ محقق عراقی سے خوشہ چینی فرمایا ۔ جب آپ نے درس خارج پڑھنا شروع کیا تو اس سے نیچے کے تمام کتابوں کا درس آپ زبانی دیا کرتے تھے۔ آپ  اپنے استاد گراں قدر حضرت آیه اللہ محمد کاظم یزدی کے عروه الوثقیٰ کی تالیف میں شریک تھے۔ اس لئے آپ نے اس کتاب کی شرح ”مستمسک العروه الوثقیٰ ” لکھی جو چار جلدوں پر مشتمل ہے اور اسے سلامی معاشرہ کو ہدیہ کی۔ صاحب گنجینۂ دانشمندان میں لکھتے ہیں : مرحوم آیه اللہ العظمیٰ حکیم اپنے علمی بیانات میں ایک خاص روش رکھتے تھے۔ معظم لہ اپنے زمانے کے عرب و عجم کے مجتہدین میں ایک خاص شخصیت کے مالک تھے ۔ حضرت آیه اللہ بروجردی کی وفات حسرت آیات ١٣٨١ ھ ق کے بعد جہان تشیع  کی اکثریت آپ کی تقلید کرتی تھیں اور عملی ،فقہی ،فکری ،اعتقادی ،وسیاسی مسائل میں آپ کی طرف رجوع کرتی تھیں۔

آیه اللہ حکیم کا خاندان، عراق کے عظیم علمی وسیاسی خاندان سے تعلق رکھتا ہے ۔ اس مبارک اور مقدس خاندان سے بڑے بڑے علماء ،فضلاء ،مجتہدین ،دانشور اور متفکر دنیا ئے تشیع کو نصیب ہوئے ۔ ذات حضرت آیه اللہ محسن حکیم جہان تشیع میں علمی میدان کے علاوہ ایک عظیم سیاسی شخصیت بھی تھی ۔      آپ کے فتویٰ الشیوعیہ کفر والحاد نے حزب تودہ اور عراق کے کمیونسٹیوں کو خوف وہراس میں مبتلا کردیا تھا۔ وہ انقلاب جو حوزۂ علمیہ نجف اشرف میں برپا کردیا اور آپ کے معتمد خاص حضرت آیه اللہ حبوبی

کے ذریعہ انگریزوں کے خلاف علم جہاد بلند کردیا ۔آپ نے امام خمینی کی رہبری میں جو انقلاب ایران

میں آرہا تھا حمایت کرنے سے دریغ اور کوتاہی نہیں فرمائی۔ اور یہ حمایت اور سیاسی حرکت دشمنوں کی آنکھوں سے زیادہ دور نہیں رہی ، خصوصاً عراق میں حزب بعث کے وجودمیں آنے کے بعد آپ اور آپ

کے خاندان پہ جو مصیبتیں آئیںوہ بیان سے باہر ہیں۔ آپ کی سخت اہانت کی گئی ، آپ کے خاندان کو پرا کندہ کیاگیا، آپ کے فرزندوں کو ایک ایک کرکے شھید کیا گیا یا زندان میں ڈالا گیا  یا جلا وطن کیا گیا ۔اب تک ہزاروں کے قریب اس خاندان کے افراد کو شہید کیا گیا ہے۔یہ عظیم ومظلوم شخصیت جو دنیا ئے تشیع کے چشم وچراغ تھیں ١٣٩٠ ھ ق میں خون دل کے ساتھ دعوت حق کو لبیک کہا اور جوار رحمت حق سے پیوستہ ہوگئے۔ آپ کا مقبرہ مسجد ھندی کے جوار میں بنایا گیا ہے۔ آپ کے فرزندوں میں سید مہدی حکیم اور سید باقر حکیم دنیا ئے تشیع میں مشہور ومعروف علمی اور سیاسی شخصیت شمار ہوتے ہیں۔ اور دونوں نے صدام لعین کے خلاف علمی اور فکری جہاد کو جاری رکھا اور دونوں صدام کے ایجنٹوں کے ذریعے شہید ہوئے۔

”خدا رحمت کند این عاشقان پاک طینت را”

 

 

 

 

۴:رہبر کبیر انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی رضوان اللہ علیہ: مرکز آسمان فقاہت و اجتہاد ،علم معقولات اورمنقولات کے مکمل پرتو، فروع اور اصول کے ماہر استاد ،زبده الفقہاء والمجتہدین آیه اللہ العظمیٰ فی الارضین ،شرع نبوی کے احیاء کرنے والے رئیس المتالھین  حوزۂ علمیہ ، مجدد مذھب فی العصرہ ووحید الامه فی دھرہ ، مرجع اعلیٰ ، علامہ کبیر سید روح اللہ الموسوی  الامام خمینی رضوان اللہ تعالیٰ علیہ دائرۂ عشق وفقاہت کے تنہا روزگار ،بانی ورہبر انقلاب اسلامی ایران ، احیاء کنندہ اسلام ناب محمدی ۖ ، عارف زمان ، ابوذر صفت ، سلمان نما ، صاحب کرامت ، نمونۂ زھد وتقویٰ  ، علم علوی ، حلم حسنی ، شجاعت حسینی ، صلابت پیامبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وعلی مرتضیٰ علیہ السلام وائمہ طاہرین علیہم السلام کے بعد غیر معصومین

میں امام خمینی  کی ذات وہ واحد اور یکتا شخصیت ہے جس کے بارے میں دوست اور دشمن سب معترف

ہیں۔ علم ، تقویٰ ،سیاست، حکومت ، انقلاب، سادگی ، غرض تمام صفات پر مشتمل یہ شخصیت آیه اللہ سید محسن حکیم رحمه اللہ علیہ کے بعد ظاہراً وباطناً شیعوں کی زعامت اور رہبری آپ کی عظیم اور مقدس ذات سے منسلک ہوگئیں۔ آپ نہ صرف شیعوں کے لئے بلکہ عالم اسلام کے عظیم رہبر قرار پائے ۔

آپ نے جو کام کیا وہ مجھ ناچیزسے تو کہاں بلکہ ہزاروں علماء دانشمند اور مفکرین دنیا انگشت بہ دندان ہیں ۔ ہم خوش قسمت ہیں کہ ہم  نے ایک ایسے دور میں قدم رکھا جب یہ معجز نما انقلاب ظہور پذیر ہوا ۔ جسمیں ملت ایران نے مکمل طور پر آپ کی حمایت کرکے تاریخ انسانیت میں ایک انمول واقعہ ثبت کیا جو انشاء اللہ ظہور امام زمانہ عجل اللہ فرجہ الشریف تک منتج ہوجائے گا۔ معظم لہ کی ولادت باسعادت١٣٢٠ ھجری قمری میں خاندان علم وسیادت ومجاھدت میں ہوئی۔ آپ نے علمی مدارج طے کرنے کے بعد حوزۂ علمیہ کی اعلیٰ تعلیم میں حوزۂ علمیہ قم کی اعلی شخصیت اور مجتہدین حضرت آیه اللہ شیخ عبدالکریم حائری بنیاد گزار حوزۂ علمیہ قم ، حضرت آیه اللہ العظمیٰ حاج حسین بروجردی ، آیه اللہ محمد علی شاہ آبادی اور آیه اللہ عظمیٰ میرزا جواد تبریزی سے کسب فیض کیا ۔ آپ جہان اسلام کے اسوۂ الٰہی، صاحب ولایت تکوینی و تشریعی، قطب عالم امکان ، امام زمان ارواحنا لہ الفداء کی غیبت کبریٰ کے بعد سے اب تک علم وفقاہت، درایت وشجاعت ، عرفان نظری وعرفان عملی میں یکتائے روزگار تھے ۔ آپ کے مقام علمی کے حوالے سے بس یہی کافی ہے کہ آپ کے ہم عصرتمام علماء اور مجتہدین آپ کی شاگردی کا نعرہ بلند کرتے ہیں اور آپ سے کسب فیض اور مقام شاگردی کو اپنے لئے دنیا کا سب سے بڑا امتیاز تصور کرتے ہیں۔

وفی ١٣۶٨  ھ ق اشتغل بالتدریس وصار من اعلام المدرّسین فی العلوم الاسلامیہ وحسین توفیٰ الحجه البروجردی کان السید مدّ ظلہ من اعلیٰ المراجع

الدینی وبعد سنین دافع فیہا  بقلمہ ولسانہ عن النوامیس الالٰھیہ……..الخ

علامہ امینی کتاب شریف الغدیر میں آپ کے بارے میں فرماتے ہیں کہ :

الخمینی ذخیره اللہ للشیعه ” یعنی امام خمینی  شیعوں کے لئے اللہ کا ذخیرہ ہیں۔

اسی طرح آپ کے عشق میں شھید خامس حضرت آیه اللہ شھید باقر الصدر رحمه اللہ علیہ کچھ اس طرح فرماتے ہیں:

ذوبوا فی الخمینی کما ذاب فی الاسلام” یعنی جس طرح امام خمینی اسلام میں جذب ہوئے ہیں تم بھی اسی طرح خمینی میں جذب ہوجاؤ۔

امام خمینی ایک علمی شخصیت ہونے کے علاوہ دنیائے سیاست کی عظیم شخصیت ہیں۔ ١٣۴٢ ھجری شمسی میں انقلاب اسلامی کے ساتھ پوری دنیا کی توجہ اسلام اور تشیع کی طرف کردی۔        آپ نے اپنے آخری قیام بہمن ١٣۵٧ شمسی کے ذریعے محمد رضا شاہ پہلوی کو حکومت اور بادشاہت سے باہر کردیا اور نظام جمہوری اسلامی کی بنیاد رکھی۔

حجّه الاسلام آقای شیخ علی فلسفی نے آیه اللہ العظمیٰ شیرازی سے نقل قول کرتے ہوئے بندہ حقیر کو بتایا: جب میں دوران نجف اشرف میں حضرت آیه اللہ العظمیٰ خوئی کی خدمت میں تھا، وہاں کے فضلاء اور علماء کے ایک گروہ نے آیه اللہ خوئی کے اس حدیث کے بارے میں سوال کیا کہ ” قم سے ایک شخص قیام کریں گے اور اس کے ارد گرد تمام جوانوں نے گھیرا  لگا کر اپنی جان کا نذرانہ پیش کریں گے ”  تو حضرت آیه اللہ العظمیٰ خوئی قدس سرہ نے فرمایا۔

” اس حدیث کا مصداق اتم آقای خمینی  ہیں”

ہم یہاں پر اختصار کی وجہ سے آپ کے علمی، فقہی ، عرفانی، اور سیاسی بلندیوں کا تذکرہ کرنے سے قاصر ہیں وگرنہ  ” مثنوی ھفتاد من کاغذ شود” کے مصداق ہو جائیں گے۔

 

۵:مقام معظم رہبری حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید علی خامنہ ای مد ظلّہ العالی:

امام خمینی رحمه اللہ علیہ کی تاریخ ساز شخصیت کی وفات کے بعد شیعوں کی مرجعیت اور رہبری

مقام معظم رہبری حضرت آیه اللہ العظمیٰ سید علی الحسینی خامنہ ای دام ظلہ العالی کے دوش مبارک پر آگئیں۔ آپ کی ولادت خاندان علم وفضل وعمل ،سیادت وصلابت، زھد وتقویٰ اور بارگاہ شہر مقدس مشھد میں ہوئی۔ آپ نے ابتداء سے درس خارج تک اسی حوزۂ علمیہ مشہد مقدس میں بزرگان آیات عظام میلانی ، آیه اللہ قزوینی وغیرہ سے حاصل کیں۔ آپ نے انقلاب امام خمینی  کے شروع ہی سے میدان جہاد میں قدم رکھا۔ مشھد مقدس میں اس وقت کے جوانوں میں آپ اور سید عبدالکریم ھاشمی نژاد جو بعد میں شھید ہوئے، سب سے زیادہ آگے آگے ہوا کرتے تھے۔ انقلاب کی کامیابی اور امام خمینی  کے ایران میں داخل ہونے کے بعد آپ تہران  تشریف لے گئے ۔امام خمینی  کے فرمان پر آپ بنی صدر کی صدارت کے بعد صدارتی الیکشن میں کامیاب ہوگئے اور آٹھ سال تک انقلاب کے شروع کے نشیب وفراز میں بہ نحو احسن حکومت کی ذمہ داریاں انجام دیتے رہے۔ بعد میں امام کی رحلت  کے بعد آپ رہبر انقلاب قرار پائے اور اب تک دنیا کے کفر والحاد اور منافقین سے مبارزہ کر رہے ہیں۔

آپ کی علمی خصوصیات

آیه اللہ خامنہ ای ان تمام صفات کے حامل ہیں جو ایک فقیہ میں پائی جاتی ہیں ۔ آپ فقہ واجتہاد پر مسلط ہونے کے ساتھ ساتھ اس بارے میں ایک خاص فکر ونظر بھی رکھتے ہیں؛ میں اس بارے میں دو نکات کی طرف اشارہ کرتاہوں۔

آپ علم رجال کے بارے میں بہت زیادہ معلومات رکھتے ہیں ، اس پر آپ نے کافی محنت کی ہے۔ آپ کا شمار ان مجتہدوں میں ہوتا ہے جنہوں نے علم رجال پر کافی کام کیا ہے۔ آپ نے ان رجال

کو قبول کیا ہے جو واقعاً فقہاء کے نزدیک قابل اعتماد ہیں۔ یہ خود ایک قسم کی مہارت ہے جو محنت طلب

کام ہے۔ ایک فقیہہ کے لئے ضروری ہے کہ وہ علم رجال پر ید طولیٰ رکھتا ہو ۔ الحمد لِلہ یہ چیز آپ کے اندر

بطور اتم واکمل موجود ہے۔

(آیه اللہ سید محمود شاھرودی چیف جسٹس آف جمہوری اسلامی ایران)

سیاسی عظمت:

اقوام متحدہ کی طرف سے ایران عراق جنگ ختم کرنے کے لئے قرار داد ۵٩٨ پیش کرنے کے بعد سپر طاقتوں کی جانب سے ایران پر دباؤ ڈالا گیا تاکہ وہ اس قرارداد کو قبول کرے۔ انہی دنوں اقوام متحدہ کے جنرل سکریٹری خاور پرز ڈیکو یار ایران کا مؤقف جاننے کے لئے ایران آیا، اس وقت یہاں پر صدارت کے عہدہ پر آیه اللہ خامنہ ای فائز تھے ۔ ڈیکویار نے معظم لہ سے ملاقات کرنے کے بعد مجھ سے پوچھا : آپ صدر کون سی سیاسی یونیورسٹی کے پڑھے ہوئے ہیں؟ میں نے کہا : کیوں ،کیا ہوا؟ اس نے کہا: میں نے دنیا کی کئی معتبر یونیورسٹیوں سے PHDکی ہے اور دس سال سے اقوام متحدہ کا جنرل سیکرٹری بھی ہوں ، لیکن میں نے آج تک آپ کے صدر کی مانند کم شخصیا ت دیکھی ہیں۔ میں نے تاحال آپ کے صدر سے زیادہ کسی کو بھی سیاستمدار اور عقل مند نہیں پایا۔

(علی محمد بشارتی وزیر داخلہ)

رھبری کے لئے شائستہ:

میں ہمیشہ امام خمینی  کی خدمت میں باتیں کھل کے کیا کرتا تھا ایک دن معظم لہ کی خدمت میں

حاضر ہوا اور آئندہ کے حالات وواقعات پر کھل کر بات چیت ہوئی اسی ضمن میں قائم مقام رہبری کے حوالے سے بات ہوئی اور آئندہ پیش آنے والی مشکلات کا ذکر ہوا تو امام  نے فرمایا:” تم لوگ اس سلسلے میں ہرگز مشکلات اور گرداب میں نہیں پھنسوگے کیونکہ خامنہ ای جیسی شخصیت تمہارے درمیان موجود

ہیں۔ تم سمجھنے کی کوشش کیوں نہیں کرتے ؟” یہ میٹنگ حضرت امام خمینی  کی عمر کے آخری دنوں میں ہوئی

تھی انہی دنوں میں امام خمینی  آیه اللہ خامنہ ای کے بارے میں لفظ برادر زیادہ استعمال کرتے تھے لیکن ہم

اس طرف بالکل متوجہ نہیں ہوئے حضرت امام  نے اپنے بیٹے حاج سید احمد آقا سے فرمایا۔ ”الحق ایشان

شایستگی رھبری را دارند” یعنی حقیقت یہ ہے یہ شخص رہبری کے لئے شائستہ ہیں۔”

(تشخیص مصلحت نظام کے صدر آیه اللہ ھاشمی رفسنجانی)

 

امام خمینی  کے لئے مایہ افتخار:

میں خداوند متعال کی بارگاہ اور اس کے ولی برحق حضرت بقیه اللہ الاعظم ارواحنافداہ کی خدمت میں ایسے مجاھدین راہ حق پر فخر کرتا ہوں جو میدان جنگ میں خط مقدم پر ،راتوں کو محراب عبادت میں اور دنوں میں خدا کی راہ میں لڑتے ہیں ۔ میں تم خامنہ ای کو مبارکباد دیتا ہوں کہ تم محاذ جنگ پر فوجی لباس میں اور محاذجنگ سے باہر علماء کے لباس میں اس ملت کی خدمت کررہے ہو ۔ میں بارگاہ      ربّ العزّت میں اسلام اور مسلمین کی خدمت کے لئے تمہاری سلامتی کی دعا کرتا ہوں۔

روح اللہ الموسوی الخمینی١٣۶٠۴٧ھ ش

صحیفۂ نور جلد ١۵ صفحہ۴١

 

 

 

 

درباره‌ی مدیریت سایت

همچنین ببینید

رونمای از کتاب قران عترت از دیدگاه اقبال لاهوری

به نام خدا طی مراسم با شکوه در هتل بزرگ مشه بروم در شهرستان سکردو …

دیدگاهتان را بنویسید

نشانی ایمیل شما منتشر نخواهد شد. بخش‌های موردنیاز علامت‌گذاری شده‌اند *

معادله ریاضی را جواب صحیح دهید: *